شرحِ احوالِ امیر نظام الدین علی شیر نوائی

نظام الدین علی شیر نوائی کلاسیکی ازبک ادبیات کے اساس گزار ہیں جو اپنی ممتاز تالیفات کے ہمراہ ازبکوں اور ترک نژادوں کے ادب کی تاریخ میں بہت شائستہ مقام رکھتے ہیں۔
وہ ۱۴۴۱ء میں شہرِ ہرات میں متولد ہوئے تھے۔ اُن کے والد غیاث الدین کیچکینہ بہادر تیموری دربار کے عملداروں میں سے تھے تاہم وہ لکھنا پڑھا نہیں جانتے تھے۔ لیکن ناخواندہ ہونے کے باوجود، اُنہوں نے اپنے فرزند کی تعلیم و تحصیل میں کوئی دقیقہ فروگذاشت نہیں کیا، اور اس سلسلے میں بہت کوششیں کیں۔ نوائی نے اپنی ابتدائی اور وسطی تعلیم ہرات میں حاصل کی، جس کے بعد وہ مشہد چلے گئے۔ وہاں انہوں نے ابوالقاسم بابر میرزا کے دربار سے وابستہ ہونے کے علاوہ اپنی تعلیم کو بھی جاری رکھا۔ خاص طور پر، وہ فارسی کے بزرگ ادیبوں نظامی گنجوی، امیر خسرو دہلوی، کمال خجندی اور حافظ شیرازی کی تخلیقات کے مطالعے میں ہمیشہ مشغول رہتے تھے۔ نوائی نے اُن سے کلامِ موزوں کا سحر، سخنوری کا ہنر، اور تمثال آفرینی کے طرز و اصول سیکھے، اور اُن کی پیروی میں اپنے اولین اشعار انشا کرنے شروع کیے۔ اس کے علاوہ، نوائی اس شہر میں عالموں اور شاعروں کی صحبت میں بھی اشتراک کرتے تھے اور اُن سے درسِ زندگی حاصل کرتے تھے۔ اسی جگہ نوائی نے اپنے اولین دیوان کو مرتّب کیا تھا۔ ۱۴۶۶ء میں علی شیر نوائی ہرات واپس آ گئے۔ تاہم وہاں کی سیاسی و اجتماعی حیات کے نامساعد ہونے اور ابوسعید میرزا کی جنگوں اور خوں ریزیوں کے سبب نوائی اُسی سال ہرات کو ترک کر کے سمرقند کی جانب عازمِ سفر ہو گئے۔ سمرقند میں علی شیر نوائی دوبارہ تحصیلِ علم و ادب میں مشغول ہو گئے اور وہاں انہوں نے اپنے زمانے کے ایک مشہور عالم خواجہ فضل اللہ ابو لیث سے علمِ فقہ حاصل کیا۔
۱۴۶۹ء میں جس وقت حسین بایقرا – جو نوائی کا ہم مکتب اور رضاعی برادر تھا – ہرات آ کر مسندِ پادشاہی پر بیٹھا تو اُس نے نوائی کو اپنے دربار میں دعوت دی۔ علی شیر نوائی کو حسین بایقرا کے دربار میں مُہرداری کا عہدہ عطا ہوا۔ اسی زمانے میں نوائی کی جامی کے ساتھ دوستی کا آغاز ہوا اور وہ جامی کے مرید بن گئے۔
علی شیر نوائی انسان دوست اور رعیت پرور شخص تھے۔ وہ ریاستی امور کے اجرا کے دوران بیچاری عوام کو فائدہ پہنچایا کرتے تھے اور اُن کے خیرخواہ رہتے تھے۔ مثلاً سال ۱۴۷۰ء میں عملداروں اور حاکموں کے ظلم و استثمار اور حد سے زیادہ خراج کی وصولی سے لوگوں کی اقتصادی زندگی نہایت دشوار ہو جانے کے باعث عوام نے ظالموں کی اس بیدادگری کے خلاف شورش برپا کر دی تھی۔ صرف علی شیر نوائی کی عاقلانہ تدبیروں کی وجہ سے اس شورش کو ختم کیا گیا۔ نوائی نے سلطان حسین بایقرا کو مشورہ دیا کہ سب سے پہلے ظالموں کو سزا دی جائے اور پھر عوام سے لیے جانے والے خراج میں کچھ حد تک کمی کی جائے۔ اس قضیے کے بعد لوگوں کے درمیان نوائی کی قدر و منزلت میں اضافہ ہو گیا اور وہ اُن کی پہلے سے بھی زیادہ حرمت کرنے لگے۔
علی شیر نوائی ۱۴۷۲ء میں مرتبۂ وزارت پر فائز ہوئے۔ دقیقاً اسی زمانے میں سیاسی و اجتماعی وضع بہت حد تک آسودہ ہو گئی جس کے نتیجے میں تمدنی و ادبی زندگی میں بہت پیش رفت واقع ہوئی۔ لیکن نوائی کے بہت سے کام شاہ اور سلطنتی عملداروں کے خشم و غضب کا باعث بنے اور وہ نوائی کو رنج و آزار پہنچانے کے در پے ہو گئے۔ شاہ کے سامنے حکّام اور وزراء [نوائی کی نسبت] ہر طرح کی بہتان طرازی کیا کرتے تھے۔ انہی وجوہات کی بنا پر نوائی سال ۱۴۷۶ء میں منصبِ وزارت سے دست کَش ہو گئے۔ بعدازاں، اُنہوں نے گیارہ سال کی مدت ریاستی امور کو ایک طرف رکھ کر علمی و ادبی تالیفات کی تخلیق میں مشغول رہ کر گذاری۔ اسی دور میں اُنہوں نے اپنے ‘خمسہ’ نامی پانچ مثنویوں کے مجموعے کو تکمیل تک پہنچایا۔ ان گیارہ سالوں بعد حسین بایقرا نے اُنہیں پھر استرآباد کا حاکم متعین کیا، لیکن استرآباد میں نوائی فقط ایک سال مقیم رہے اور ۱۴۸۸ء میں واپس ہرات آ گئے۔ اس کے بعد وہ اپنی عمر کے اختتام تک پھر کبھی سلطنتی امور میں مشغول نہیں ہوئے اور اپنے وقت کو اُنہوں نے صرف تصنیفی کاموں میں صرف کیا۔
علی شیر نوائی کا انتقال جنوری ۱۵۰۱ء میں شہرِ ہرات میں ہوا۔ ‘حبیب السیر’ کے مؤلف خواندمیر نے بزرگ شاعر نوائی کی وفات پر ہرات کے لوگوں کے غم و اندوہ اور احساسات کو سوز و گداز کے ساتھ بیان کرنے کے بعد ابیاتِ ذیل سے اُن کا خلاصہ نکالا ہے:
چرا خون نبارید چشمِ سپهر؟
چرا گشت روشن دگر ماه و مهر؟
چرا سلکِ ایام درهم نشد؟
چرا ماه و سال از جهان کم نشد؟
نوائی کے جسد کو ہرات کے اُسی گنبد میں سپردِ خاک کیا گیا جسے اُنہوں نے خود تعمیر کرایا تھا۔

(وزارتِ معارفِ تاجکستان کی شائع کردہ نصابی کتاب ‘ادبیاتِ تاجک: کتابِ درسی برائے صنفِ نہم’ سے اقتباس اور ترجمہ)

Advertisements


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s