اردو اصطلاحات پر ایک اعتراض کا جواب

جب میں نے اردو محفل پر ‘حرارت پیما’ اور ‘مقیاس الحرارت’ جیسی اردو اصطلاحوں پر اعتراض ہوتے دیکھا تو وہاں یہ لکھا تھا:

اگر انگریزی کی علمی زبان میں کسی کو ‘ہیومن اسٹڈی’ کی جگہ پر یونانی الاصل ترکیب ‘اینتھروپولوجی’ کے استعمال پر کوئی اعتراض نہیں ہے تو اُسے اردو زبان میں ‘تھرمامیٹر’ کی جگہ پر ‘مقیاس الحرارت’ یا ‘حرارت پیما’ کے استعمال پر بھی کوئی اعتراض نہیں ہونا چاہیے۔ ہر زبان کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ تاریخی اور ثقافتی طور پر اجنبی زبانوں سے الفاظ مستعار لینے کی بجائے اپنے لسانی و تمدنی سرمائے سے نئے خیالات کے لیے الفاظ وضع کرتی رہے۔ انگریزی سمیت دنیا کی ہر طاقت ور اور علمی ذریعہ ہونے کی مدّعی زبان اسی پر عمل پیرا ہے۔ لہٰذا، اگر اردو بھی علمی زبان بننے کے لیے اسی طرزِ عمل کو اپنائے تو یہ کوئی خارق العادت بات نہیں ہے، اور ہمارا اس پر نکتہ چینی کرنا صرف اس بات کا غمّاز ہو گا کہ ہم اردو کو ایک قابلِ عزت علمی زبان کی حیثیت سے دیکھنا پسند نہیں کرتے۔
اردو کی علمی اصطلاحات سے یہ خوف و گریز بے بنیاد اور غیر علمی ہے۔ اگر کوئی اصطلاح ہمیں ‘مشکل’ لگتی ہے تو اس کی بنیادی وجہ یہی ہے کہ وہ اصطلاحیں ہمارے استعمال میں نہیں ہیں یا نہیں رہی ہیں۔ اگر ایک بار وہ نافذ اور مستعمل ہو جائیں تو وہ چاہے ابتدا میں کتنی ہی ناآشنا محسوس ہوں، انجامِ کار وہ اصطلاحیں ہمارے شعور اور ہماری انفرادی زبان کا زندہ حصہ بن جاتی ہیں۔ یہ ذہن میں رکھنا چاہیے کہ اصطلاحیں محض الفاظ ہیں، جنہیں کوئی بھی عام ذکاوت والا شخص دو تین بار پڑھ کر آسانی سے اپنی یادداشت میں محفوظ کر سکتا ہے۔ اصطلاحیں یا الفاظ سیکھنے کا عمل، کسی دوسری زبان کے قواعدِ صرف و نحو سیکھنے کی نسبت کئی درجے آسان کام ہے۔ اس کی عام مثالیں آپ اپنے گرد و پیش دیکھ سکتے ہیں کہ بہت سے ایسے افراد جو انگریزی کا صرف معمولی علم رکھتے ہیں، انگریزی اصطلاحوں سے خوب واقف ہیں، کیونکہ کسی بھی زبان کے محض الفاظ سیکھنا کوئی دشواری کی بات نہیں ہوتی۔ جب اجنبی زبانوں کے الفاظ یا اصطلاحیں سیکھنا اتنا آسان ہے، تو پھر ہمارا اردو کی وضع شدہ اصطلاحوں سے واقفیت حاصل کرنا بھی سہل ہی ہو گا۔
یہ بھی قابلِ غور ہے کہ ریاستِ حیدرآباد دکن کی جامعۂ عثمانیہ میں اردو زبان اعلیٰ تعلیم کا ذریعہ تھی۔ اگر اُس جامعہ کی تدریسی کتابوں اور مطبوعہ کتابوں پر نگاہ ڈالی جائے تو واضح ہو گا کہ اُنہوں نے اپنی کتابوں میں تمام معروف و غیر معروف علمی کلمات کا اردو میں ترجمہ کر لیا تھا اور اردو کی ایک مہذب اور آبرومند علمی شکل کو دنیا کے سامنے پیش کیا تھا۔ وہاں دہائیوں تک اسی زبان کے ذریعے تدریس کا عمل کامیابی سے جاری رہا۔ یہاں اس بات پر کوئی بحث مقصود نہیں کہ ذریعۂ تعلیم اردو ہو یا انگریزی، صرف اس بات پر توجہ دلانا مطلوب ہے کہ اردو میں علمی و فنی وضع شدہ اصطلاحیں ایک زمانے میں کامیابی کے ساتھ استعمال ہوتی رہی ہیں اور مطبوعات اور علمی حلقوں میں رائج اور بر نوکِ زباں رہی ہیں۔ اس لیے خانہ زاد اصطلاحوں کو ناقابلِ استعمال کہنے کی کوئی وجہ نہیں ہے۔
اگر ایران اور بلادِ عرب کے اخبارات یا وہاں شائع ہونے والی علمی کتابوں کو چشمِ عبرت کے ساتھ دیکھا جائے تو اردو زبان کی تہی دامنی اور کم مایگی کا احساس شدت سے دامن گیر ہوتا ہے۔ وہ ممالک اپنی زبانوں کو جس مرحلۂ تکامل پر نائل کر چکے ہیں، اُس کی جانب قدم اٹھانے کا ہم نے ابھی تک آغاز ہی نہیں کیا ہے۔ میں نے ایران اور عرب ممالک کی مثال صرف اس لیے دی ہے کیونکہ اردو پر بات کرتے ہوئے عموماً انہی کا حوالہ دیا جاتا ہے، ورنہ تو جنگ زدہ افغانستان میں بھی فارسی اور پشتو کی حالت بری نہیں ہے۔
اس بات سے تو کاملاً اتفاق کیا جا سکتا ہے کہ اردو کی خانہ زاد علمی اصطلاحوں کو حتی الامکان سریع الفہم ہونا چاہیے (اگرچہ ہر زبان میں علمی اصطلاحیں مبتدیوں اور عام لوگوں کے لیے مشکل ہی ہوتی ہیں)، لیکن بے جا اعتراضات کر کے وضعِ اصطلاح کے لائقِ تحسین و ستائش عمل پر خطِ تنسیخ پھیرنے کی کوشش کی کسی صورت بھی حمایت نہیں کی جا سکتی۔

تاریخ: ۱۰ ستمبر ۲۰۱۵ء

Advertisements


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s