دیوانگی – سیمین بهبهانی

(دیوانگی)
یا رب مرا یاری بده، تا خوب آزارش کنم
هجرش دهم، زجرش دهم، خوارش کنم، زارش کنم
از بوسه‌های آتشین، وز خنده‌های دل‌نشین
صد شعله در جانش زنم، صد فتنه در کارش کنم
در پیشِ چشمش ساغری، گیرم ز دستِ دل‌بری
از رشک آزارش دهم، وز غصه بیمارش کنم
بندی به پایش افکنم، گویم خداوندش منم
چون بنده در سودای زر، کالای بازارش کنم
گوید مَیفزا قهرِ خود، گویم بکاهم مِهرِ خود
گوید که کم‌تر کن جفا، گویم که بسیارش کنم
هر شام‌گه در خانه‌ای، چابک‌تر از پروانه‌ای
رقصم برِ بیگانه‌ای، وز خویش بیزارش کنم
چون بینم آن شیدای من، فارغ شد از سودای من
منزل کنم در کوی او، باشد که دیدارش کنم
گیسوی خود افشان کنم، جادوی خود گریان کنم
با گونه‌گون سوگند‌ها، بارِ دگر یارش کنم
چون یار شد بارِ دگر، کوشم به آزارِ دگر
تا این دلِ دیوانه را، راضی ز آزارش کنم
(سیمین بهبهانی)

ترجمہ:
یا رب، مجھے کوئی یار دے، تاکہ اُسے خوب آزار دوں؛ اُسے ہجر دوں، اُسے اذیت دوں، اُسے خوار کروں، اُسے زار کروں۔
(اپنے) آتشیں بوسوں سے اور دل نشیں خندوں سے اُس کی جان میں سینکڑوں شعلے لگاؤں اور اُس کے کام میں سینکڑوں فتنے ڈالوں۔
اُس کی چشم کے سامنے کسی دل بر کے دست سے ایک ساغر لوں؛ اُسے رشک سے آزار دوں اور اُسے غم سے بیمار کروں۔
اُس کے پا میں کوئی بند ڈالوں اور کہوں کہ میں اُس کی مالک ہوں؛ اور زر کی ہوس میں اُسے غلام کی طرح بازار کا مال کروں۔
وہ کہے کہ اپنا قہر افزوں مت کرو؛ میں کہوں کہ میں اپنی محبت کم کروں گی؛ وہ کہے کہ جفا کم تر کرو، میں کہوں کہ اُسے زیادہ کروں گی۔
ہر شام کے وقت کسی خانے میں، کسی پروانے سے چابک تر، کسی بیگانے کے پہلو میں رقص کروں اور اُسے خود سے بیزار کروں۔
جب دیکھوں وہ میرا شیدا میرے عشق سے دست کَش ہو گیا ہے تو اُس کے کوچے میں منزل کروں تاکہ شاید اُس کا دیدار کر لوں۔
اپنے گیسو افشاں کروں، اپنی نرگسِ جادو گریاں کروں؛ گوناگوں قَسموں کے ساتھ اُسے دوبارہ یار کر لوں۔
جب وہ بارِ دگر یار ہو جائے تو ایک اور آزار کی کوشش کروں؛ تاکہ اِس دیوانے دل کو اُس کے آزار سے راضی کر لوں۔

Advertisements

One Comment on “دیوانگی – سیمین بهبهانی”

  1. راحیل فاروق نے کہا:

    عمدہ غزل، عمدہ ترجمہ۔
    اللہ آپ کو اس کارِ خیر اور محنت کی جزا دے۔

    پسند کریں


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s