ای طبیعت – لایق شیر علی

ای طبیعت!
روزِ دفنم
باز یک آن زنده‌ام کن.
تا بدانم، دوستانم
در چه حالند،
تا بگویم، در عزای
من ننالند.

یک نظر تا بینم از اعدای من
کیست در خود شادمان
از مردنِ اعضای من.
بنگرم، از دشمنانم
کیست حاضر در سرِ
تابوت و می‌گرید ز شادی –
زهرخندی بهرِ او تقدیم سازم،
وز سرِ تابوتِ خود
دورش برانم…

بارِ دیگر بنگرم
بر چشمِ یارم،
پس روم آسوده
بر کنجِ مزارم…

(لایق شیرعلی)

اے طبیعت!
میرے دفن کے روز
مجھے دوبارہ ایک لمحہ زندہ کرنا۔
تاکہ میں جان لوں کہ میرے دوست
کس حال میں ہیں،
تاکہ میں کہہ دوں کہ میرے غم میں
وہ نالہ نہ کریں۔

تاکہ ایک نظر دیکھ لوں کہ میرے اعدا میں سے
کون اندر ہی اندر شادمان ہے
میرے اعضاء کی موت پر۔
تاکہ دیکھ لوں کہ میرے دشمنوں میں سے
کون سرِ تابوت حاضر ہے
اور خوشی سے رو رہا ہے –
اُسے ایک زہرخند پیش کروں،
اور اپنے تابوت کے سرہانے سے
اُسے دور بھگا دوں۔۔۔

دوبارہ نگاہ ڈالوں،
اپنے یار کی چشم پر،
پھر آسودہ چلے جاؤں،
اپنے مزار کے گوشے پر۔۔۔

× طبیعت = نیچر

Advertisements


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s