تاریخِ وفاتِ خواجه حافظ شیرازی – محمد حسن مسعودی خراسانی

فارس را پایه بلند است و سزد از دو وجود
به جهان فخر و مُباهات نماید شیراز
سعدی و حافظِ وی را نبوَد هیچ نظیر
نه به ایران نه به توران نه به هند و نه حجاز
در غزل این دو بزرگ آمده استادِ همه
که به شیرین‌سخنی هر دو ندارند انباز
غزلِ سعدی آرد دل و جان را به نشاط
نظمِ حافظ بدهد جان سویِ جانان پرواز
غزلِ حافظِ شیرین‌سخن الهام بوَد
دیگران را نبوَد راه به این طرز و طراز
سعدی آموخته از پیرِ خرد رازِ سخن
حافظ از عشق که با حُسن بوَد محرمِ راز
بود او حافظِ قرآن و عجب نیست که او
بهره بگرفته از آن گنجِ سراسر اعجاز
او مَلَک بوده و فردوسِ برین جایش بود
چند روزی سفری کرد به این مُلکِ مجاز
گوهرِ خویش در این مُلک خریدار ندید
بُرد گوهر سوی آن مُلک که بگرفت آغاز
روحِ پاکش که سفر کرد سوی عالمِ قدس
خاکیان را همه افکند به سوز و به گداز
هاتفِ غیب پَیِ رحلتِ او گفت بگو
"وی مَلَک بود به فردوسِ برین آمد باز”
۷۹۲ هجری

(محمد حسن مسعودی خراسانی)

ترجمہ:
فارس کا پایہ بلند ہے؛ اور زیب دیتا ہے کہ دو شخصیتوں کے باعث شیراز دنیا میں فخر و مُباہات کرے۔
اُس کے سعدی و حافظ کی کوئی نظیر نہیں ہے؛ نہ ایران میں، نہ توران میں، نہ ہند میں، نہ حجاز میں۔
غزل میں یہ دو برزگ سب کے استاد ہیں؛ کیونکہ شیریں سخنی میں دونوں کا کوئی شریک نہیں ہے۔
سعدی کی غزل دل و جان کو شادمان و مسرور کرتی ہے؛ جبکہ حافظ کی نظم جان کو جاناں کی طرف پرواز دیتی ہے۔
حافظِ شیریں سخن کی غزل الہام ہے؛ دیگروں کو اِس طرز و روش تک رسائی نہیں ہے۔
سعدی نے پیرِ خرد سے رازِ سخن سیکھا تھا؛ جبکہ حافظ نے عشق سے، کہ جو حُسن کے ساتھ محرمِ راز ہے۔
وہ حافظِ قرآن تھے، اور عجب نہیں ہے کہ اُنہوں نے اُس سرتاسر اعجاز خزانے سے بہرہ حاصل کیا تھا۔
وہ فرشتہ تھے اور فردوسِ بریں اُن کی جا تھی؛ اُنہوں نے اِس مُلکِ مجاز میں چند روز ذرا سفر کیا تھا۔
اِس مُلک میں انہوں نے اپنے گوہر کا خریدار نہ دیکھا؛ وہ اپنے گوہر کو اُس مُلک کی جانب لے گئے جہاں سے اُنہوں نے آغاز کیا تھا۔
اُن کی روحِ پاک نے جب عالَمِ قدس کی جانب سفر کیا تو اُس نے تمام خاکیوں کو سوز و گداز میں مبتلا کر دیا۔
ہاتفِ غیب نے اُن کی رحلت کے بعد کہا کہ کہو: "وہ فرشتہ تھے اور وہ فروسِ بریں میں واپس آ گئے۔”

Advertisements


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s