سروِ چمنِ سروری افتاد ز پا، های – میرزا اسدالله خان غالب دهلوی (فارسی نوحہ + اردو ترجمہ)

سروِ چمنِ سروری افتاد ز پا، های
شد غرقه به خون، پیکرِ شاهِ شهدا، های
بر خاکِ ره افتاده تنی هست، سرش کو؟
آن رویِ فروزنده و آن زلفِ دوتا، های
عباسِ دلاور که در آن راهروی داشت
شمشیر به یک دست و به یک دست لِوا، های
آن قاسمِ گلگون‌کفنِ عرصهٔ محشر
وان اکبرِ خونین‌تنِ میدانِ وغا، های
آ‌ن اصغرِ دل‌خستهٔ پیکانِ جگردوز
وان عابدِ غم‌دیدهٔ بی‌برگ و نوا، های
ای قوتِ بازویِ جگرگوشهٔ زهرا!
دستِ تو به شمشیر شد از شانه جدا، های
ای شهره به دامادی و شادی که نداری
کافور و کفن، بگذرم از عطر و قبا، های
ای مظهرِ انوار! که بود اهلِ نظر را
دیدارِ تو، دیدارِ شهِ هر دو سرا، های
ای گُلبُنِ نورُستهٔ گلزارِ سیادت!
نایافته در باغِ جهان نشو و نما، های
ای منبعِ آن هشت که آرایشِ خلدند!
داغم، که رسن شد به گلویِ تو ردا، های
بالغ‌نظرانِ روشِ دینِ نبی، حیف
قدسی‌گهرانِ حرمِ شیرِ خدا، های
ماتم‌کده آن خیمهٔ غارت‌زدگان، حیف
غارت‌زده آن قافلهٔ آلِ عبا، های
آن تابشِ خورشید در آن گرم‌روی، حیف
وان طعنهٔ کفار در آن شورِ عزا، های
غالب! به ملایک نتوان گشت هم‌آواز
اندازهٔ آن کو که شوم نوحه‌سرا، های
(غالب دهلوی)

ترجمہ:
چمنِ سروری کا سرو زمین پر گر گیا، ہائے!۔۔۔ شاہِ شہدا کا پیکر خون میں غرق ہو گیا، ہائے!
خاکِ راہ پر ایک تنِ افتادہ موجود ہے، اُس کا سر کہاں ہے؟۔۔۔ ہائے، وہ فروزندہ چہرہ اور وہ زلفِ دوتا، ہائے!
ہائے وہ عباسِ دلاور کہ اُس سفر میں جس کے ایک دست میں شمشیر اور ایک دست میں پرچم تھا، ہائے!
وہ عرصۂ محشر کا گلگوں کفن قاسم، اور وہ میدانِ وغا کا خونیں تن اکبر، ہائے!
وہ جگردوز تیر سے دل خستہ اصغر، اور وہ غم دیدہ و بے برگ و نوا عابد، ہائے!
اے جگرگوشۂ زہرا کے قوتِ بازو! شمشیر سے تمہارا دست شانے سے جدا ہو گیا، ہائے!
اے دامادی و شادی کے باعث مشہور! کہ تمہارے پاس عطر و قبا تو دور، کافور و کفن بھی نہیں ہے، ہائے!
اے مظہر انوار! کہ آپ کا دیدار اہلِ نظر کے لیے شہِ ہر دو سرا کا دیدار تھا، ہائے!
اے گلزارِ سیادت کے گُلبُنِ نورُستہ! اے کہ جسے باغِ جہاں میں نشو و نما نہ ملی، ہائے!
اے اُن آٹھ [امامو‌‌ں] کے منبع، کہ جو آرائشِ خلد ہیں!۔۔۔ میں اِس غم سے داغ ہوں کہ رسن آپ کے گلو میں ردا بن گئی، ہائے!
روشِ دینِ نبی کے بالغ نظراں، حیف!۔۔۔۔ حرمِ شیرِ خدا کے قدسی گُہراں، ہائے!
غارت زدگاں کا خیمہ ماتم کدہ بن گیا، حیف!۔۔۔ وہ قافلۂ آلِ عبا غارت زدہ ہو گیا، ہائے!
اُس گرم رَوی میں وہ تابشِ خورشید، حیف!۔۔۔ اور اُس شورِ عزا میں وہ طعنۂ کفار، ہائے!
اے غالب! فرشتوں کا ہم آواز نہیں ہوا جا سکتا۔۔۔ اتنا مرتبہ و حد کہاں کہ میں نوحہ سرا ہو جاؤں، ہائے!

Advertisements


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s