نابینا و ستم‌گر – رهی مُعیِّری (مع ترجمہ)

(نابینا و ستم‌گر)
فقیرِ کوری با گیتی‌آفرین می‌گفت
که ای ز وصفِ تو الکَن زبانِ تحسینم
به نعمتی که مرا داده‌ای هزاران شکر
که من نه درخورِ لطف و عطایِ چندینم
خسی گرفت گریبانِ کور و با وی گفت
که تا جواب نگویی ز پای ننشینم
من ار سپاسِ جهان‌آفرین کنم نه شِگِفت
که تیز‌بین و قوی‌پنجه‌تر ز شاهینم
ولی تو کوری و ناتندرست و حاجت‌مند
نه چون منی که خداوندِ جاه و تمکینم
چه نعمتی‌ست ترا تا به شکرِ آن کوشی؟
به حیرت اندر از کارِ چون تو مسکینم
بگفت کور کزین بِه چه نعمتی خواهی؟
که رویِ چون تو فرومایه‌ای نمی‌بینم
(رهی مُعیِّری)

ترجمہ:
ایک نابینا فقیر خدائے جہان آفریں سے کہہ رہا تھا: "اے وہ کہ جس کی توصیف سے میری زبانِ تحسین عاجز ہے، تو نے جو مجھے نعمت عطا کی ہے اُس کے لیے ہزار شکر! کہ میں اِس قدر لطف و عطا کا لائق نہیں ہوں۔” ایک پست شخص نے نابینا کا گریبان پکڑا اور اُس سے کہا کہ: "جب تک جواب نہ دو گے میں گریبان نہیں چھوڑوں گا۔ اگر میں خدائے جہان آفریں کو سپاس کہتا ہوں تو عجب نہیں، کہ میں شاہین سے زیادہ تیز بیں اور قوی پنجہ ہوں، لیکن تم تو نابینا و ناتندرست و حاجت مند ہو، تم میری طرح نہیں ہو کہ میں تو جاہ و تمکیں کا مالک ہوں۔ تمہارے پاس ایسی کیا نعمت ہے کہ جس کے شکر کی تم کوشش کرتے ہو؟ میں تم جیسے مسکین کے عمل سے حیرت میں ہوں۔” نابینا نے کہا کہ: "اِس سے بہتر کون سی نعمت چاہتے ہو کہ میں تم جیسے کسی فُرومایہ شخص کا چہرہ نہیں دیکھتا۔”

Advertisements


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s