"بر نیاید ز کُشتگان آواز” – عُثمانی شاعر نفعی ارضرومی کا ایک قطعہ

عُثمانی شاعر نفعی ارضرومی (م. ۱۶۳۵ء) اپنے مجموعۂ ہَجویات ‘سِهامِ قضا’ کے ایک تُرکی قطعے میں کہتے ہیں:
(قطعه)
کُشتهٔ ذوالفقارِ هَجوۆم‌دۆر
بیر آلای یاوه‌گو و هرزه‌طراز
قادر اۏلمازسالار جوابا نۏلا
بر نیاید ز کُشتگان آواز
(نفعی ارضرومی)
یاوہ گویوں اور ہرزہ سرایوں کا ایک جمِّ غفیر میری ذوالفقارِ ہَجو کا کُشتہ ہے۔۔۔۔ اگر وہ جواب [دینے] پر قادر نہ ہوں تو کیا عجب؟۔۔۔ [کہ] کُشتگاں سے آواز بلند نہیں ہوتی (یعنی کُشتگاں آواز نہیں نِکال سکتے)۔

Küşte-i zülfikâr-ı hicvümdür
Bir alay yâve-gû vü herze-tırâz
Kâdir olmazsalar cevâba n’ola
Ber neyâyed zi küştegân âvâz

× فارسی مصرع گُلستانِ سعدی شیرازی کی مندرجۂ ذیل بیت سے مأخوذ ہے:
عاشقان کُشتگانِ معشوقند
بر نیاید ز کُشتگان آواز

Advertisements


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s