در شناختِ بی‌جسمیِ حضرتِ عِزّت – یہودی فارسی شاعر ‘عمرانی’

یہودی فارسی شاعر ‘عِمرانی’ (وفات: تقریباً ۱۵۳۶ء) نے ‘واجبات و ارکانِ سیزده‌گانهٔ ایمانِ اسرائیل’ کے نام سے ایک مثنوی لکھی تھی۔ اُس مثنوی کا بابِ سوم ذیل میں ترجمے کے ساتھ پیش ہے، جس میں خدا تعالیٰ کے بے جسم ہونے کے یہودی عقیدے کو بیان کیا گیا ہے:

(بابِ سومِ ارکانِ سیزده‌گانهٔ یهودیت در شناختِ بی‌جسمیِ حضرتِ عِزّت)
واجب است جُمله اهلِ ایمان را
هر که او هست پیروِ تورا
که بِیارد به این سُخن ایمان
هر که او هست بندهٔ یزدان
که ندارد خدایِ بی‌همتا
جسَد و جسم و چشم و دست و پا
بری از نُطق و صورت و گوش است
بی قد و قامت و بر و دوش است
او مُبرّاست از همه صورت
بِشْنو این چند بیت از حِکمت
عقل در جستجویِ او حیران
فکر و اندیشه مانده سرگردان
جملهٔ صالحان و بارایان
با همه کاملان و دانایان
مانده در کارگاهِ او حیران
کس نکرده رهی به این ایوان
فلک و کَوکب و بُروج و سِپِهر
ملَک و جِنّ و اِنس و ماه و مِهر
همه تسبیحِ شُکرِ او گویند
هر کُجااند دوست می‌جویند
او همه جا و هیچ جایی نه
ذاتِ او را چه و چرایی، نه
(عمرانی)

ترجمہ:
تمام اہلِ ایمان پر، اور جو بھی شخص تورات کا پَیرو اور یزداں کا بندہ ہے، اُس پر واجب ہے کہ وہ اِس قول پر ایمان لے آئے کہ خدائے بے ہمتا جَسد و جسم و چشم و دست و پا نہیں رکھتا۔۔۔ وہ نُطق و صورت و گوش سے برکنار ہے، اور وہ قد و قامت و سینہ و شانہ نہیں رکھتا۔۔۔ وہ تمام صورتوں وَ شکلوں سے مُبرّا ہے۔۔۔ حِکمت پر مبنی یہ چند ابیات سُنو۔۔۔۔ عقل اُس (خدا) کی جستجو میں حیران ہے۔۔۔ اور فکر و اندیشہ [اُس کی جستجو میں] سرگرداں رہ گئے ہیں۔۔۔ تمام صالحان و دانشمندان، اور تمام کاملان و دانایان، اُس کی کارگاہ میں حیران رہے گئے ہیں (یا اُس کی کارگاہِ صنعت کے بارے میں حیران رہے گئے ہیں)۔۔۔ اور کسی نے [بھی] اِس ایوان تک راہ نہیں پائی ہے۔۔۔ فلک و ستارہ و بُروج و آسمان، فرشتہ و جنّ و اِنس و ماہ و خورشید سب اُس کے شُکر کی تسبیح کہتے ہیں۔۔۔ اور وہ جس جگہ بھی ہیں، دوست تلاش کرتے ہیں (یا خدا کو دوست کے طور پر تلاش کرتے ہیں)۔۔۔ وہ ہر جا ہے، اور کسی بھی جا نہیں ہے۔۔۔ اُس کی ذات چون و چرا سے خالی ہے۔۔۔

Advertisements


جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s