جنابِ «امیر علی‌شیر نوایی» کی ایک فارسی اور ایک تُرکی رباعی

(فارسی رباعی)
جانم به دو لعلِ جان‌فزایِ تو فدا
روحم به نسیمِ عطرسایِ تو فدا
آشُفته دلم به عِشوه‌هایِ تو فدا
فرسوده تنم به خاکِ پایِ تو فدا
(امیر علی‌شیر نوایی)

میری جان تمہارے لعل جیسے دو جاں فزا لبوں پر فدا!۔۔۔ میری روح تمہاری [جانب سے آنے والی] مُعَطّر کُن بادِ نسیم پر فدا!۔۔۔ میرا دلِ آشُفتہ تمہارے ناز و عِشووں پر فدا!۔۔۔ میرا تنِ فرسُودہ تمہاری خاکِ پا پر فدا!

(تُرکی رباعی)
جانیم‌ده‌غی «جِیم» ایککی دالینگ‌غه فدا
ان‌دین سۉنگ «الِف» تازه نِهالینگ‌غه فدا
«نُون»ی دغی عنبَرین هِلالینگ‌غه فدا
قالغن ایکی نُقطه ایککی خالینگ‌غه فدا
(امیر علی‌شیر نوایی)

میری جان کا «جِیم» تمہاری دو دال [جیسی زُلفوں] پر فدا!۔۔۔ اُس کے بعد «الِف» تمہارے تازہ نِہال [جیسے قد] پر فدا!۔۔۔ اُس کا «نُون» بھی تمہارے ہِلالِ عنبَریں [جیسے ابرو] پر فدا!۔۔۔ باقی ماندہ دو نُقطے تمہارے دو خالوں پر فدا!

Jonimdag’i jim ikki dolingg’a fido,
Andin so’ng alif toza niholingg’a fido,
Nuni dag’i anbarin hiloningg’a fido,
Qolg’an iki nuqta ikki xolingg’a fido.



جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s