تُرکی و فارسی زبانوں کی باہم درآمیختگی

اُستاد دُکتُر قدیر گُلکاریان اپنے مقالے «تاریخِ تکامُلِ ادبیاتِ تُرکیِ آذربایجان و تُرکیه در همگَنی با ادبیاتِ فارسی در قرنِ شانزدهُم و اوایلِ قرنِ هفدهُمِ میلادی» میں ایک جا تُرکی و فارسی زبانو‌ں کے درمیان باہمی قُربت کے بارے میں بحث کرتے ہوئے لکھتے ہیں:

"چه بخواهیم، چه نخواهیم، این دو زبان چنان به هم در آمیخته و با هم به صورت موازی مسیر تکاملی خود را می‌پیمایند که انکار آن و حرکت علیه این همگَنی، نوعی دشمنی با واقعیت و در عین حال فریب دادن خود با پندارهای متعصبانه است.”

"خواہ ہم چاہیں، خواہ نہ چاہیں، یہ دو زبانیں (تُرکی و فارسی) اِس طرح باہم درآمیختہ ہو گئی ہیں اور اِس طرح باہم مُتوازی طور پر اپنی راہِ ارتقا طے کر رہی ہیں کہ اِس کا انکار اور اِس ہم نوعیت کے خلاف حرَکت، ایک طرح سے حقیقت کے ساتھ دُشمنی، اور ساتھ ہی خود کو مُتعصّبانہ گُمانوں کے ساتھ فریب دینا ہے۔”

Advertisements

وطن – میرزا تورسون‌زاده

(وطن)
بهار آمد، ز عُمرم باز یک سالِ دِگر بِگْذشت،
تمامِ زندگی آهسته از پیشِ نظر بِگْذشت.
به مثلِ گوشت و ناخُن من همیشه با وطن بودم،
اگرچه نصفِ عُمرِ بهترینم در سفر بِگْذشت.
وطن، در هر کجا آمد به سر فارم هوایِ تو،
من از آن سویِ اُقیانوس بِشْنیدم صدایِ تو.
اگرچه در میان طوفان و موجِ بحرها بودند،
ولی آمد به گوشِ من صدایِ رودهایِ تو.
به وقتِ بازگشتن چون رسیدم بر حُدودت من،
ز سر تا پا شدم مفتون و شیدایِ نمودت من.
نِشستم در زمینِ تو، پریدیم در هوایِ تو
به آوازِ درودت من، به آهنگِ سُرُودت من.
اگرچه بارها افتادم از یار و دیارم دور،
به سیّاحی مرا کردند گرچه دوستان مشهور،
ولی من در همه جا، در همه کُنج و کَنارِ دهر
همیشه با وطن بودم، همیشه با وطن مسرور.
(میرزا تورسون‌زاده)
۱۹۶۵ء

بہار آ گئی، دوبارہ میری عُمر میں سے ایک سالِ دیگر گُذر گیا۔۔۔ میری کُل زندگی آہستہ آہستہ [میری] نظر کے پیش سے گُذر گئی۔
اگرچہ میری عُمر کا بہترین نِصف سفر میں گُذر گیا، لیکن میں ہمیشہ اُسی طرح وطن کے ساتھ تھا، جس طرح گوشت و ناخُن ایک ساتھ ہوتے ہیں۔
اے وطن! ہر جگہ میرے سر کی جانب تمہاری خوشگوار ہوا آئی، میں نے اوقیانوس کے اُس طرف سے تمہاری صدا سُنی۔
اگرچہ درمیان میں طوفان اور بحروں کی امواج تھیں، لیکن میرے کان میں تمہارے دریاؤں کی صدا آئی۔
واپَس آتے وقت جب میں تمہاری حُدود پر پہنچا، میں سر سے پا تک تمہاری صُورت کا مفتون و شیدا ہو گیا۔
تمہارے سلام کی آواز کے ساتھ اور تمہارے نغمے کے آہنگ کے ساتھ میں تمہاری زمین پر بیٹھا اور تمہاری ہوا میں اُڑا۔
اگرچہ میں بارہا اپنے یار و دیار سے دُور ہو گیا، اور اگرچہ میرے دوستوں نے مجھے سیّاحی میں مشہور کر دیا،
لیکن میں ہر جگہ، اور دُنیا کے ہر گوشہ و کنار میں ہمیشہ وطن کے ساتھ تھا، اور ہمیشہ وطن کے ساتھ مسرور تھا۔

وطن، در هر کجا آمد به سر فارم هوایِ تو،

لفظِ «فارَم» صرف ماوراءالنہری فارسی میں استعمال ہوتا ہے، اور اِس کا معنی «خوش گوار و دل کش و دل نشین» ہے۔


شاعرانِ عجم کی ستائش – یوسف نابی

مشہور عُثمانی شاعر «یوسف نابی» (وفات: ۱۷۱۲ء) نے اپنے پِسر «ابوالخیر محمد چلَبی» کو نصیحتیں کرنے کے لیے «خیریّه» کے نام سے احتمالاً ۱۷۰۱ء میں ایک تُرکی مثنوی منظوم کی تھی جس میں ایک جا اُنہوں نے شاعرانِ عجم، یعنی فارسی گو شاعروں کی بے حد پُراحترام سِتائش کی تھی۔ تمام دوست دارانِ شعرِ فارسی کو یہ نظم میری جانب سے ہدیہ ہے۔ فقط یہ درخواست ہے کہ «یوسف نابی» پر رحمتیں بھیجنا مت فراموش کیجیے گا، کہ جن کی اِس نظم کے لفظ لفظ سے شاعرانِ فارسی سرا کے لیے محبّت و احترام مُترشِّح ہو رہا ہے۔

ای صفایابِ کلامِ موزون
آشنایِ سُخنِ گوناگون
طبعوڭ ائیله‌رسه اگر شعره هوَس
ساڭا معناسې‌نې فهم ایتمک بس
سُخنانِ شُعَرایِ اسلاف
ایده‌ر آیینهٔ قلبی شفّاف
تۆرکی‌ده نفْعی ایله باقی‌یه باق
غیری دیوان‌لارې دا ایت مُلحق
آن‌لاروڭ شعری متین‌دۆر امّا
غیری‌سینده داخې وار چۏق معنا
شُعَرایِ عجمۆڭ دیوانې
حُسنِ تعبیر و معانی کانې
طالب و صائب و عُرفی و سلیم
فیضیِ هند و نظیری و کلیم
تازه‌گویانِ زمان‌ده شوکت
معنیِ تازه‌یه ویردی صورت
صاحبِ خمسه نظامی، خُسرَو
هر بیری جلوه‌دهِ معنیِ نَو
جامی و انوری و خاقانی
هر بیری مُلکِ سُخن سُلطانې
بُلبُلِ شاه‌طرازِ شیراز
سعدی و حافظِ معنی‌پرداز
سُخنانِ قُدَمایِ شُعَرا
حق بودور بیری‌بیریندن اعلا
یۏق نهایت شُعَرایِ عجمه
هپ اسامی‌لری سېغماز قلمه
بیزده وار اکثری‌نۆڭ دیوانې
اۏقې فهم ائیله ده گؤر وجدانې
(یوسف نابی)

وزن: فعلاتن فعلاتن فعلن

اے کلامِ موزوں سے صفا و لذّت پانے والے! اور اے گوناگوں سُخنوں سے آشنا!۔۔۔ اگر تمہاری طبع شاعری کی آرزو کرے تو تمہارے لیے اُس کے معنی کو فہم کرنا کافی ہے۔۔۔ شاعرانِ اسلاف کے سُخن آئینۂ قلب کو شفّاف کرتے ہیں۔۔۔ تُرکی [شاعری] میں تم «نفْعی» اور «باقی» پر نگاہ کرو۔۔۔ [اِن کے علاوہ] دیگروں کے دیوانوں کا بھی اضافہ کرو۔۔۔ اُن کی شاعری متین و اُستُوار ہے، لیکن اُن کے علاوہ [شاعروں] میں بھی بِسیار معانی موجود ہیں۔۔۔ شاعرانِ عجم کے دواوین حُسنِ تعبیر و معانی کی کان ہیں۔۔۔ طالب و صائب و عُرفی و سلیم۔۔۔ فیضیِ ہند و نظیری و کلیم۔۔۔ تازہ گویانِ زماں میں شوکت [بُخارایی] نے معنیِ تازہ کو صُورت دی ہے۔۔۔ صاحبانِ خمسہ نظامی اور امیر خُسرَو۔۔۔ اُن میں سے ہر ایک نے معنیِ نَو کو جلوہ دیا۔۔۔ جامی و انوَری و خاقانی۔۔۔ اُن میں سے ہر ایک مُلکِ سُخن کا سُلطان ہے۔۔۔ [علاوہ بریں،] سعدی و حافظِ معنی پرداز ہیں، کہ جو شیراز کے بُلبُلِ شاہ آرا ہیں۔۔۔ حق یہ ہے کہ شاعرانِ مُتقدّمین کے سُخن ایک سے بڑھ کر ایک ہیں۔۔۔ شاعرانِ عجم کی کوئی انتہا نہیں ہے۔۔۔ اُن کے تمام نام قلم میں نہیں سمائیں گے۔۔۔ ہمارے پاس اُن میں سے اکثر کے دواوین موجود ہیں۔۔۔ اُن کو خوانو (پڑھو)، فہم کرو، اور وِجدان و شُعور پاؤ۔

İy safâ-yâb-ı kelâm-ı mevzûn
Âşinâ-yı suhan-ı gûn-â-gûn
Tab’uñ eylerse eger şi’re heves
Saña ma’nâsını fehm itmek bes
Suhanân-ı şu’arâ-ı eslâf
İder âyîne-i kalbi şeffâf
Türki’de Nef’i ile Bâki’ye bak
Gayri divânları da it mülhak
Anlaruñ şi’ri metindür ammâ
Gayrisinde dahı var çok ma’nâ
Şu’arâ-yı ‘Acem’üñ dîvânı
Hüsn-i ta’bîr ü ma’ânî kânı
Tâlib ü Sâ’ib ü ‘Örfî vü Selîm
Feyzi-i Hind ü Nazîrî vü Kelîm
Tâze-gûyân-ı zamanda Şevket
Ma’ni-i tâzeye virdi sûret
Sâhib-i hamse Nizâmî Hüsrev
Her biri cilve-dih-i ma’ni-i nev
Câmi vü Enverî vü Hâkânî
Her biri mülk-i suhan sultânı
Bülbül-i şâh-tırâz-ı Şîrâz
Sa’di vü Hâfız-ı ma’nî-perdâz
Suhanân-ı kudemâ-yı şu’arâ
Hak budur biribirinden a’lâ
Yok nihâyet şu’arâ-yı ‘Acem’e
Hep esâmîleri sıgmaz kaleme
Bizde var ekserinüñ dîvânı
Okı fehm eyle de gör vicdânı

ایده‌ر آیینهٔ قلبی شفّاف

اِس مصرعے کا یہ متن بھی نظر آیا ہے:
قلبی آیینه‌وش ایده شفّاف
یعنی: شاعرانِ اسلاف کے سُخن قلب کو آئینے کی مانند شفّاف کریں/کریں گے/کرتے ہیں۔

حُسنِ تعبیر و معانی کانې

اِس مصرعے کا یہ متن بھی نظر آیا ہے:
حُسنِ معنی و معارف کانې
یعنی: شاعرانِ عجم کے دواوین حُسنِ معنی اور معارف کی کان ہیں۔

هپ اسامی‌لری سېغماز قلمه

اِس مصرعے کا یہ متن بھی نظر آیا ہے:
هپ اسامی‌لری سېغماز رقمه
یعنی: شاعرانِ عجم کے تمام نام تحریر میں نہیں سمائیں گے۔


نظامی، امیر خسرو، جامی اور نوائی کی ستائش – طاشلېجالې یحییٰ بیگ

عُثمانی البانوی شاعر «طاشلېجالې یحییٰ بیگ» نے ۹۵۷ھ/۱۵۵۰ء میں «نظامی گنجَوی» کی فارسی مثنوی «مخزن الاسرار» کی پیروی میں تُرکی مثنوی «گُلشنِ انوار» لکھی تھی۔ اُس مثنوی میں اُنہوں نے ایک جا نظامی گنجوی، امیر خُسرَو دہلوی، عبدالرحمٰن جامی اور امیر علی‌شیر نوایی کی سِتائش کی ہے، کیونکہ اُن سے قبل فارسی میں نظامی، خُسرَو اور جامی، جبکہ تُرکی میں نوایی اپنے اپنے خمسے اِتمام تک پہنچا چکے تھے، اور وہ خود کو اُن شُعَراء کا پَیرَو سمجھتے تھے۔ وہ کہتے ہیں:

شیخ نظامی گُهرِ بحرِ دین
حلقهٔ جمعیّته اۏلدې نِگین
دانهٔ تسبیح گیبی دائما
هپ الی آلتېندا ایدی اصفیا
خمسه‌سی ویردی یئدی اِقلیمه حال
پنجهٔ خورشیدِ مُنوّرمثال
سؤزده قوی هند ایلینۆڭ خُسرَوی
شیخ نظامی‌نۆڭ اۏدور پَی‌روی
سؤزلری کیم احسنِ اقوال‌دۆر
چهرهٔ نظما ساناسېن خال‌دۆر
قېلدې نظامی سؤزۆنی ره‌نما
خلق آڭا ثانی و اۏ ثانی آڭا
حضرتِ جامی‌دۆر آنوڭ ثالِثی
گنجِ معانی‌نۆڭ اۏدور وارثی
خمسه‌سی‌دۆر باعثِ هنگامِ عشق
خمْسِ مُبارک‌ده اۏدور جامِ عشق
دِل دیلی ایله دیدۆڲی مثنوی
خلقې ایده‌ر مستِ مَیِ معنوی
میر نوایی گُلِ بی‌خاردور
خمسه‌سی بیر نافهٔ تاتاردور
سؤزلری‌دۆر عشق اۏدونوڭ صرصرې
هر بیری بحرِ غزلۆڭ گوهری
وصف ایده‌مم ذاتِ خِردمندی‌نی
عینِ عجم گؤرمه‌دی مانندی‌نی
(طاشلېجالې یحییٰ بیگ)

شیخ نظامی بحرِ دین کے گوہر [تھے]۔۔۔ وہ حلقۂ جمعیّت کے نِگین ہوئے۔۔۔ دانۂ تسبیح کی طرح ہمیشہ تمام اصفیاء اُن کے زیرِ دست تھے۔۔۔ اُن کے خمسے (پانچ مثنویوں کے مجموعے) نے پنجۂ خورشیدِ مُنوّر کی طرح ہفت اِقلیم کو حال [و صفا و وجْد] دیا۔
دیارِ ہند کے «خُسرو» سُخن میں قوی [تھے]۔۔۔ وہ شیخ نظامی کے پَیرَو ہیں۔۔۔ اُن کے سُخن، کہ جو احسنِ اقوال ہیں، گویا چہرۂ نظم کے خال ہیں۔۔۔ اُنہوں نے نظامی کے سُخن کو رہنما بنایا۔۔۔ خَلق اُن کی ثانی ہے، [جبکہ] وہ اُن (نظامی) کے ثانی ہیں۔
حضرتِ جامی اُن کے ثالِث ہیں۔۔۔ وہ گنجِ معانی کے وارث ہیں۔۔۔ اُن کا خمسہ باعثِ ہنگامۂ عشق ہے۔۔۔ خمسِ مُبارک میں وہ جامِ عشق ہے۔۔۔ زبانِ دل کے ساتھ کہی گئی اُن کی مثنوی مردُم کو شرابِ روحانی سے مست کرتی ہے۔
میر نوائی گُلِ بے خار ہیں۔۔۔ اُن کا خمسہ ایک نافۂ تاتار ہے۔۔۔ اُن کے سُخن آتشِ عشق کی بادِ تُند ہیں۔۔۔ اُن کا ہر ایک [سُخن] بحرِ غزل کا گوہر ہے۔۔۔ میں اُن کی ذاتِ خِردمند کی توصیف نہیں کر سکتا۔۔۔ چشمِ عجم نے [بھی] اُن کی نظیر نہیں دیکھی۔

Şeyh Nizâmî güher-i bahr-ı dîn
Halka-ı cem’iyyete oldı nigîn
Dâne-i tesbîh gibi dâimâ
Hep eli altında idi asfiyâ
Hamsesi virdi yedi iklîme hâl
Pençe-i hurşîd-i münevver-misâl
Sözde kavî Hind ilinüñ Hüsrevi
Şeyh Nizâmînüñ odur peyrevi
Sözleri kim ahsen-i akvâldür
Çehre-i nazma sanasın hâldür
Kıldı Nizâmî sözüni reh-nümâ
Halk aña sânî vü o sânî aña
Hazret-i Câmidür anuñ sâlisi
Genc-i ma’ânînüñ odur vârisi
Hamsesidür bâ’is- hengâm-ı aşk
Hams-i mübârekde odur câm-ı aşk
Dil dili ile didüği mesnevî
Halkı ider mest-i mey-i ma’nevî
Mîr Nevâyî gül-i bî-hârdur
Hamsesi bir nâfe-i Tâtârdur
Sözleridür aşk odunuñ sarsarı
Her biri bahr-ı gazeluñ gevheri
Vasf idemem zât-ı hıred-mendini
Ayn-ı acem görmedi mânendini
(Taşlıcalı Yahyâ Bey)

خمْسِ مُبارک‌ده اۏدور جامِ عشق
خمسِ مُبارک میں وہ جامِ عشق ہے

مجھے نہیں معلوم کہ شاعر نے ترکیبِ «خمْسِ مُبارک» کو کس مفہوم میں استعمال کیا ہے، اور یہ ترکیب میں نے اوّلین بار دیکھی ہے۔ انٹرنیٹ پر فارسی منابع میں کچھ نظر نہیں آیا، لیکن تُرکی منابع میں تلاش کرنے سے اِس کے یہ مُمکنہ معانی نظر آئے ہیں: اسلام کے پانچ اُصول، پانچ نمازیں، پانچ انگُشتیں۔ میرا خیال ہے کہ یہاں یہ ترکیب پانچ انگُشتوں کے مفہوم میں استعمال ہوئی ہے۔

مولانا رُومی نے بھی اپنے ایک مصرعے میں اِس ترکیب کا استعمال کیا ہے:
"بِدِه به خمسِ مُبارک مرا ششُم جامی”


در شناختِ خداوندِ پروردگار و رازق – یہودی فارسی شاعر مولانا عمرانی

یہودی فارسی شاعری «عِمرانی» نے ۱۵۰۸ء میں «واجبات و ارکانِ سیزده‌گانهٔ ایمانِ اسرائیل» کے نام سے ایک مثنوی منظوم کی تھی، جس میں اُنہوں نے دینِ یہودیت کے تیرہ اُصول بیان کیے تھے۔ مثنوی کے بابِ پنجُم میں وہ لِکھتے ہیں:

(بابِ پنجُم در شناختِ خداوندِ پروردگار و رازق)
که خداوندِ قادر و اعظم
هست رزّاق و رازق و اکرم
او به تنها یقین خداوند است
بی زن و یار و خویش و پیوند است
خالقِ جِنّ و وحش و آدم اوست
رازقِ رزقِ کُلِّ عالَم اوست
اوست روزی دِهندهٔ آفاق
به‌جز او نیست خالق و خلّاق
سروَر جُملهٔ کریمان اوست
پدر و مادرِ یتیمان اوست
آن‌که دارد بُزُرگی و اقبال
وان‌که را هست سیم و جاه و مال
همه از رحمت و عنایتِ اوست
از کرم‌هایِ بی‌نهایتِ اوست
هرچه بینی ز فیضِ او برپاست
هر که دیدی ز لُطفِ او گویاست
کس جز او لایقِ پرستش نیست
که هزار است نامِ او و یکی‌ست
همچه او نیست پادیاوندی
ذوالجلال و حَی و خداوندی
(مولانا عمرانی)

(خداوندِ پروردگار و رازِق کی معرِفت کے بارے میں)
خداوندِ قادر و اعظم، رزّاق و رازق و اکرم ہے۔۔۔ بالیقین فقط وہ خداوند ہے۔۔۔ وہ کوئی زن و یار و قرابت دار نہیں رکھتا۔۔۔ جِنّ و حیوانات و آدم کا خالق وہ ہے۔۔۔ کُل عالَم کے رِزق کا رازق وہ ہے۔۔۔ وہ آفاق کا روزی دِہندہ ہے۔۔۔ اُس کے بجز کوئی خالِق و خلّاق نہیں ہے۔۔۔ جُملہ کریموں کا سروَر وہ ہے۔۔۔ یتیموں کا پدر و مادر وہ ہے۔۔۔ جو شخص بُزُرگی و سعادت مندی رکھتا ہے، اور جس شخص کے پاس زر و سِیم و جاہ و مال ہے، وہ سب اُس کی رحمت و عنایت اور اُس کے کرَم ہائے بے نہایت کے باعث ہے۔۔۔۔ تم جو چیز بھی دیکھو، وہ اُس کے فیض سے برپا ہے۔۔۔ تم نے جس کسی کو بھی دیکھا، وہ اُس کے لُطف سے تکلُّم کرتا ہے۔۔۔ اُس کے بجز کوئی لائقِ پرستِش نہیں ہے۔۔۔ کہ اُس کے نام ہزار ہیں، [لیکن خود] وہ ایک ہے۔۔۔ اُس جیسا کوئی ظفرمند و غالب نہیں ہے۔۔۔ اور نہ اُس جسا کوئی ذوالجلال و زندہ و خداوند ہے۔

همچه او نیست پادیاوندی

«پادْیاونْد» پہلوی زبان کا لفظ ہے جو معیاری فارسی میں استعمال نہیں ہوا۔ مُختلف منابع میں اِس کا معنی پیروز، پیروزمند، نیرومند، پادشاه، زبردست، چِیره، غالب، مُظفّر، توانا، فیروزمند، زورمند، قوی، مُوفّق، ظافِر، غالب، قاہرِ وغیرہ نظر آیا ہے۔ لیکن ایک جگہ اِس کا معنی «تطهیرِ چیزی از راهِ دعا و نیاز» دیا ہوا تھا، جو مجھے، کم از کم اِس مندرجۂ بالا نظم میں، دُرُست معلوم نہ ہوا۔

تصحیح شُدہ متن میں «همچه» ہی ثبت ہے، جو «همچو» کے معنی میں استعمال ہوا ہے۔ شاید اُس دَور کے فارسی گو یہودیہوں کے گُفتاری لہجے میں «چو» کی مُتغیِّر شکل «چه» استعمال ہوتی ہو گی، اور شاعر نے بھی اِسی کو استعمال کیا ہو گا۔


در شناختِ موجودیِ حضرتِ اقدس – یہودی فارسی شاعر مولانا عمرانی

یہودی فارسی شاعری «عِمرانی» نے ۱۵۰۸ء میں «واجبات و ارکانِ سیزده‌گانهٔ ایمانِ اسرائیل» کے نام سے ایک مثنوی منظوم کی تھی، جس میں اُنہوں نے دینِ یہودیت کے تیرہ اُصول بیان کیے تھے۔ مثنوی کے بابِ اوّل میں وہ لِکھتے ہیں:

(بابِ اوّل در شناختِ موجودیِ حضرتِ اقدس)
واجب است این که قومِ ایسرائل
می‌بدانند خوش به صدقِ دل
که خداوندِ قادرِ دوران
هست موجود و قایم و یزدان
حیِّ بی‌چون و بی‌چرا است او
نه چو ما آلتِ فنا است او
صانِعِ آب و آتش و باد است
خَلقِ عالَم ز رحمتش شاد است
عالَم و آدم و زمین و زمان
چرخِ افلاک و گُنبدِ گردا‌ن
مِهر و ماهِ سِپِهر و اختر و نور
کَوکب و بُرج و قصر و جنّت و حور
این همه بود در ازل نابود
شد به موجودی‌اش همه موجود
غیرِ او نیست کِردگارِ جهان
هست از امرِ او زمین و زمان
قادرِ جُمله بُود و نابُود است
قُدرتِ اوست هرچه موجود است
نیست جُز او مُسبِّبُ‌الاسباب
دست‌گیر و رحیم در هر باب
گر همه کائنات گردد نیست
هیچ نُقصان به ذاتِ پاکش نیست
او بِمیراند او کند زنده
اوست قایم و حیّ و پاینده
(مولانا عمرانی)

(خُدائے اقدس کے وُجود کی معرِفت کے بارے میں)
واجب ہے کہ قومِ اسرائیل (قومِ یہود) بہ خوبی و بہ صِدقِ دل جانے کہ خداوندِ قادرِ دَوراں موجود و قائم و یزداں ہے۔۔۔ وہ حیِّ بے چُون و چرا ہے۔۔۔ وہ ہماری طرح آلۂ فنا نہیں ہے (یعنی اُس کو فنا نہیں ہے)۔۔۔ وہ آب و آتش و باد کا آفرینِش گر ہے۔۔۔ خَلقِ عالَم اُس کی رحمت سے شاد ہے۔۔۔ عالَم، آدم، زمین، زمان، چَرخِ افلاک، گُھومنے والا گُنبد، آسمان کا خورشید و ماہ، ستارہ، نُور، کَوکب، بُرج، قصْر، جنّت، حُور، یہ تمام چیزیں ازل میں نابُود تھیں۔۔۔ یہ چیزیں خُدا کی موجودگی سے وُجود میں آئیں۔۔۔ اُس کے بجز کِردگارِ جہاں نہیں ہے۔۔۔ زمین و زماں اُس کے فرمان سے ہے۔۔۔ وہ جُملہ بُود و نابُود کا قادِر ہے۔۔۔ جو بھی چیز موجود ہے، وہ اُس کی قُدرت ہے (یعنی اُس کے دستِ قُدرت سے ہے)۔۔۔ اُس کے بجز مُسبِّبُ الاسباب نہیں ہے۔۔۔ وہ [ہی] ہر امْر و مسئلہ میں دست گیر و رحیم ہے۔۔۔ خواہ کُل کائنات نیست و معدوم ہو جائے، اُس کی ذاتِ پاک میں کوئی نَقص و عَیب نہیں [آئے گا]۔۔۔ وہ مارتا ہے اور وہ زندہ کرتا ہے۔۔۔ وہ قائم و زندہ و پایندہ ہے۔


یوسی بن یوحانان کی نصیحت – یہودی فارسی شاعر مولانا عمرانی

یہودی فارسی شاعر «عِمرانی» ۱۵۳۶ء میں «گنج‌نامه» کے نام سے ایک مثنوی حَیطۂ تحریر میں لائے تھے، جس میں نے اُنہوں نے بُزُرگانِ یہود کے اقوال و نصائح کو فارسی میں منظوم کیا تھا۔ اُس مثنوی میں وہ ایک جا لِکھتے ہیں:

یوسی بن یوحانان فرماید:
خواهی که تُرا نجات باشد
حق را به تو التفات باشد
یک لحظه و یک زمان و یک دم
بی یادِ خُدا مباش خُرّم
بیگانه مباش و آشنا باش
بِگْذر ز فساد و با خدا باش
(مولانا عمرانی)

(یوسی بن یوحانان فرماتے ہیں)
اگر تم چاہتے ہو کہ تم کو نجات نصیب ہو اور حق تعالیٰ تمہاری جانب اِلتِفات کرے تو تم [کسی] درویش کو اپنے [پاس] سے محروم مت کرو تاکہ حق تعالیٰ تمہارے دل کو زخمی نہ کرے۔۔۔ کسی لحظہ و کسی وقت و کسی دم [بھی] تم یادِ خُدا کے بغیر شاد و خُرّم مت ہوؤ۔۔۔ بیگانہ مت بنو، اور آشنا بنو۔۔۔ شرّ و فساد کو تَرک کر دو، اور خُدا کے ساتھ ہو جاؤ۔