شکر لله عیش یوزلندی و محنت قالمه‌دی – ظهیرالدین محمد بابر

شکر لله عیش یوزلندی و محنت قالمه‌دی
یېتتی ایّامِ وصال و شامِ فرقت قالمه‌دی
یوزلنیب امن و فراغت، غصّه و غم بۉلدی دفع
عیش و عشرت کېلدی و رنج و مشقّت قالمه‌دی
محنتِ هجران که آندین چاک چاک اېردی کۉنگول
بۉلدی راحتقه مُبدّل، اول جراحت قالمه‌دی
مُرتفِع بۉلغاندا هجران، کېل، توقُّف قیلمه کیم
انتظارینگنی چېکرگه اۉزگه طاقت قالمه‌دی
وصلینگه یېتکوردی دوران عاقبت بابرنی، شکر
اېمدی دوراندین منگه اصلا شکایت قالمه‌دی
(ظهیرالدین محمد بابر)

اللہ کا شکر کہ شادمانی نے [اِدھر] رُخ کیا، اور رنج نہ رہا۔۔۔ ایّامِ وصال گذر گئے اور شامِ فرقت نہ رہی۔
امن و فراغت نے رُخ کیا اور غم و اندوہ دور ہو گیا۔۔۔ عیش و عشرت آ گئی اور رنج و مشقّت نہ رہی۔
رنجِ فراق، کہ جس سے دل چاک چاک تھا، راحت میں تبدیل ہو گیا، [اور] وہ زخم [اب] نہ رہا۔
جب کہ ہجراں برطرف ہو گیا ہے تو آ جاؤ، توقُّف مت کرو۔۔۔ تمہارا انتظار کھینچنے کی [اب] مزید طاقت نہ رہی۔
شکر! کہ زمانے نے بابر کو عاقبتِ کار تمہارے وصل تک پہنچا دیا۔۔۔ حالا مجھے زمانے سے ہرگز شکایت نہ رہی۔

Shukrilillah, aysh yuzlandi-yu, mehnat qolmadi,
Yetti ayyomi visolu shomi furqat qolmadi.
Yuzlanib amnu farog’at, g’ussayu g’am bo’ldi daf’,
Ayshu ishrat keldi-yu, ranju mashaqqat qolmadi.
Mehnati hijronki, ondin chok-chok erdi ko’ngul,
Bo’ldi rohatqa mubaddal, ul jarohat qolmadi.
Murtafe’ bo’lg’onda hijron, kel, tavaqquf qilmakim,
Intizoringni chekarga o’zga toqat qolmadi.
Vaslinga yetkurdi davron oqibat Boburni, shukr,
Emdi davrondin manga aslo shikoyat qolmadi.

Advertisements

"زبانِ فارسی شاعری کے لیے تخلیق ہونے والی زبان ہے”

شاعرِ ملّیِ البانیہ نعیم فراشری کے برادر، اور مشہور عثمانی ادیب و مؤلّف شمس‌الدین سامی فراشری (وفات: ۱۹۰۴ء) اپنی تُرکی کتاب ‘خُرده‌چین’، جو ۱۳۰۲ھ/۱۸۸۵ء میں شائع ہوئی تھی، کے دیباچے میں لکھتے ہیں:

"…ظن ایدرم که، بیوک بوناپارتڭ اوروپا لسانلری حقّنده اولان مشهور بر تقسیمی جدّی صورتیله تلقّی، و آسیا لسانلرینه دخی تطبیق اولنمق لازم گلسه، فارسی حقّنده: <شعر ایچون یارادلمش بر لساندر، و شعر او لسان ایچون ایجاد اولنمشدر> دنیله‌بیلیر.”

"۔۔۔میرا گمان ہے کہ یورپی زبانوں کے بارے میں کی گئی بوناپارتِ کبیر کی ایک مشہور تقسیم بندی کو اگر بطورِ جِدّی قبول کرنا اور ایشیائی زبانوں پر بھی اُس کی تطبیق کرنا لازم ہو تو فارسی کے حق میں کہا جا سکتا ہے کہ <یہ شاعری کے لیے تخلیق ہونے والی ایک زبان ہے، اور شاعری اِس زبان کے لیے ایجاد ہوئی ہے>۔”
× جِدّی = سنجیدہ، سیریس


شد جهان پُر از طنینِ فارسی – ضیاء محمد ضیاء

شد جهان پُر از طنینِ فارسی
هست عالَم خوشه‌چینِ فارسی
تشنگان را سلسبیل و کوثر است
چشمهٔ ماءِ مَعینِ فارسی
هست روشن‌تر ز رویِ آفتاب
چهرهٔ ماهِ مُبینِ فارسی
شعله‌ها در سینه افروزد همی
نغمه‌هایِ آتشینِ فارسی
بر زبانم هست هر دم دوستان
ذکرِ لذّت‌آفرینِ فارسی
می‌سرایم گرچه در اردو سُخن
هست فکرِ من رهینِ فارسی
خاطرِ بی‌تاب را تسکین دِهم
با حدیثِ دل‌نشینِ فارسی
اهلِ عالَم را سُخن آموختند
نغز‌گویانِ فطینِ فارسی
چهرهٔ افکار را آراستند
اوستادانِ وزینِ فارسی
کج‌روان را می‌نماید راهِ راست
گُفته‌هایِ راستینِ فارسی
مَحرمِ سِرِّ حقیقت بوده‌اند
شاعرانِ پاک‌بینِ فارسی
خاتَمِ اردو که اندر دستِ ماست
شد مُزیّن از نگینِ فارسی
سرخوش و سرمست و سرشارم ضیاء
از شرابِ احمرینِ فارسی
(ضیاء محمد ضیاء)

زبانِ فارسی کی بانگ سے دنیا پُر ہو گئی؛ عالَم زبانِ فارسی کا خوشہ چیں ہے۔
زبانِ فارسی کا چشمۂ آبِ رواں تشنوں کے لیے سلسَبیل و کوثر ہے۔
زبانِ فارسی کے ماہِ مُبین کا چہرہ خورشید سے زیادہ روشن ہے۔
زبانِ فارسی کے آتشیں نغمے سینے میں شعلے روشن کرتے ہیں۔
اے دوستو! میری زبان پر ہر دم زبانِ فارسی کا ذکرِ لذّت آفریں ہے۔
اگرچہ میں اردو میں سُخن سرائی کرتا ہوں [لیکن] میری فکر زبانِ فارسی کی مرہون و مقروض ہے۔
میں زبانِ فارسی کی حدیثِ دل نشیں سے خاطرِ بے تاب کو تسکین دیتا ہوں۔
زبانِ فارسی کے خوب گویانِ دانا نے اہلِ عالَم کو سُخن سِکھایا۔
زبانِ فارسی کے اُستادانِ باوقار و متین نے چہرۂ افکار کی آرائش کی۔
زبانِ فارسی کے گُفتہ ہائے راستیں کج رَووں کو راہِ راست دکھاتے ہیں۔
زبانِ فارسی کے شاعرانِ پاک بیں مَحرمِ رازِ حقیقت رہے ہیں۔
ہمارے دست میں جو اردو کی انگُشتری ہے وہ زبانِ فارسی کے نگین سے مُزیّن ہوئی۔
اے ضیاء! میں زبانِ فارسی کی شرابِ سُرخ سے سرخوش و سرمست و سرشار ہوں۔
× خاطِر = ذہن، ضمیر؛ قلب؛ فکر

× شاعر کا تعلق پاکستان سے تھا۔


ای گُل یاناغلو، لب‌لرینه جان دئسم، یئری – شاه اسماعیل صفوی ‘خطایی’

ای گُل یاناغلو، لب‌لرینه جان دئسم، یئری
زُلفینه کفر و یۆزینه ایمان دئسم، یئری
سۏردوم طبیبه، دردیمه درمان بولونمادې
بو دردِ عشقه لعلینی درمان دئسم، یئری
کیم ائشیگینه یاستانا، دولت بولور مُدام
اۏل آستانه سایهٔ سُبحا‌ن دئسم، یئری
بیر مورِ خسته‌نین که قاپوندا مقامی وار
من اۏل مقامه مُلکِ سلیمان دئسم، یئری
بولدو خطایی ذکرِ جمالېندا نورِ حق
صحنِ رُخینی صفحهٔ قرآن دئسم، یئری
(شاه اسماعیل صفوی ‘خطایی’)

وزن: مفعول فاعلات مفاعیل فاعلن

ترجمہ:
اے [محبوب] گُل رُخسار! تمہارے لبوں کو اگر میں جان کہوں تو بجا ہے؛ اگر میں تمہاری زُلف کو کفر اور تمہارے چہرے کو ایمان کہوں تو بجا ہے۔
میں نے طبیب سے پوچھا، [اُس کو] میرے درد کا علاج نہ مل سکا۔۔۔ اگر میں [یار کے] لبِ لعل کو اِس دردِ عشق کا علاج کہوں تو بجا ہے۔
جو شخص تمہارے آستان پر بِچھے اور اُس کو بالیں بنائے، وہ ہمیشہ دولت و اقبال مندی پاتا ہے۔۔۔ اُس آستان کو اگر میں سایۂ خدائے سُبحان کہوں تو بجا ہے۔
تمہارے در پر جو ایک خستہ چیونٹی کی اقامت گاہ ہے، اگر میں اُس اقامت گاہ کو مُلکِ سلیمان کہوں تو بجا ہے۔
‘خطائی’ کو تمہارے جمال کے ذکر میں نورِ حق حاصل ہوا ہے؛ تمہارے صحنِ رُخ کو اگر میں صفحۂ قرآن کہوں تو بجا ہے۔

Ey gül yanağlu, ləblərinə can desəm, yeri.
Zülfinə küfrü yüzinə iman desəm, yeri.
Sоrdum təbibə, dərdimə dərman bulunmadı,
Bu dərdi-eşqə lə’lini dərman desəm, yeri.
Kim eşiginə yastana, dövlət bulur müdam,
Оl asitanə sayeyi-sübhan desəm, yeri.
Bir muri-xəstənin ki, qapunda məqami var,
Mən оl məqamə mülki-Süleyman desəm, yeri.
Buldu Xətayi zikri-cəmalında nuri-həq,
Səhni-rüxini səfheyi-Qur’an desəm, yeri.


لستُ معلّماً – نِزار قبّانی

لستُ معلِّماً..
لأعلمك كيف تُحبّينْ.
فالأسماك، لا تحتاج إلى معلِّمْ
لتتعلَّمَ كيف تسبحْ..
والعصافير، لا تحتاج إلى معلِّمْ
لتتعلّمَ كيف تطير..
إسبحي وحدَكِ..
وطيري وحدَكِ..
إن الحبّ ليس له دفاتر..
وأعظمُ عشّاق التاريخ..
كانوا لا يعرفون القراءة..
(نِزار قبّاني)

فارسی ترجمہ:
معلم نیستم،
تا عشق را به تو بیاموزم!
ماهیان برایِ شِنا کردن
نیازی به آموزش ندارند!
پرندگان نیز،
برایِ پرواز…

به تنهایی شِنا کن!
به تنهایی بال بگشا!
عشق، کتابی ندارد!
عاشقانِ بزرگِ جهان
خواندن نمی‌دانستند!
(نِزار قبّانی)
مترجم: یغما گُلرُویی

اردو ترجمہ:
میں معلّم نہیں ہوں،
کہ تمہیں عشق کرنا سکھاؤں!
مچھلیوں کو تیرنے کے لیے
تعلیم کی کوئی حاجت نہیں ہوتی!
پرندوں کو بھی،
پرواز کے لیے۔۔۔

تنہا ہی تیرو!
تنہا ہی پر پهیلاؤ!
عشق کوئی کتاب نہیں رکھتا!
دنیا کے عظیم عاشق
خواننا نہیں جانتے تھے!

× خوانْنا (بر وزنِ ‘جاننا’) = پڑھنا


یاردین ایرو کۉنگول مُلکې دورور سلطانی یۉق – امیر علی‌شیر نوایی

یاردین ایرو کۉنگول مُلکې دورور سلطانی یۉق
مُلک کیم سلطانی یۉق، جسمې دورور کیم جانی یۉق
جسمدین جانسیز نې حاصل، ای مسلمانلر کیم، اول
بیر قرا توفراغ‌دېک دور کیم، گُل و ریحانی یۉق
بیر قرا توفراغ کیم، یۉقتور گُل و ریحان انگه
اول قرانغو کېچه‌دېک‌دور کیم، مهِ تابانی یۉق
اول قرانغو کېچه کیم یۉقتور مهِ تابان انگه
ظُلمتې دور کیم، انینگ سرچشمهٔ حیوانی یۉق
ظُلمتې کیم، چشمهٔ حیوانی آننینگ بۉلمه‌غای
دوزخې دور کیم، یانیده روضهٔ رضوانی یۉق
دوزخې کیم روضهٔ رضواندین اۉلغه‌ی نااُمید
بیر خُمارې دور که انده مستلیغ امکانی یۉق
ای نوایی، بار انگه مونداق عقوبتلر که، بار
هجردین دردی و لېکن وصلدین درمانی یۉق
(امیر علی‌شیر نوایی)

ترجمہ:
جو دل یار سے جدا ہو، وہ ایک ایسا مُلک ہے جس کا سلطان نہیں ہے؛ جس ملک کا سلطان نہ ہو، وہ ایک ایسا جسم ہے جس میں جان نہیں ہے۔
اے مسلمانو! جسم سے جان کے بغیر کیا حاصل؟ کہ وہ تو ایک ایسی سیاہ خاک کی مانند ہے کہ جس میں گُل و ریحان نہیں ہے۔
جس سیاہ خاک میں گُل و ریحان نہ ہو، وہ اُس تاریک شب کی مانند ہے کہ جس میں ماہِ تاباں نہیں ہے۔
وہ تاریک شب کہ جس میں ماہِ تاباں نہ ہو، ایک ایسی ظُلمت ہے کہ جس میں سرچشمۂ آبِ حیات نہیں ہے۔
وہ ظلمت کہ جس میں چشمۂ آبِ حیات نہ ہو، ایک ایسی دوزخ ہے کہ جس کے پہلو میں روضۂ رضواں نہیں ہے۔
وہ دوزخ جو روضۂ رضواں سے ناامید ہو، ایک ایسا خُمار ہے کہ جس میں مستی کا امکان نہیں ہے۔
اے نوائی! جو شخص دردِ ہجر رکھتا ہو، لیکن وصل کی شکل میں علاج نہ رکھتا ہو، اُسے ایسی ہی عقوبتیں جھیلنی پڑتی ہیں۔
× خُمار = نشہ و مستی زائل ہونے کے بعد لاحق ہونے والی کیفیتِ سر درد و کسالت؛ ہینگ اوور

لاطینی خط میں:
Yordin ayru ko’ngul mulkedurur sultoni yo’q
Mulkkim sultoni yo’q, jismedururkim joni yo’q
Jismdin jonsiz ne hosil, ey musulmonlarkim, ul
Bir qaro tufrog’dekdurkim, gulu rayhoni yo’q
Bir qaro tufrog’kim, yo’qtur gulu rayhon anga
Ul qorong’u kechadekdurkim, mahi toboni yo’q
Ul qorong’u kechakim yo’qtur mahi tobon anga
Zulmatedurkim, aning sarchashmayi hayvoni yo’q
Zulmatekim, chashmayi hayvoni oning bo’lmag’ay
Do’zaxedurkim, yonida ravzayi rizvoni yo’q
Do’zaxekim, ravzayi rizvondin o’lg’ay noumid
Bir xumoredurki, anda mastlig’ imkoni yo’q
Ey Navoiy, bor anga mundoq uqubatlarki, bor
Hajrdin dardi, va lekin vasldin darmoni yo’q

اِس غزل کی قرائت سنیے۔


سورۂ اخلاص کے پانچ منظوم فارسی ترجمے

سرآغازِ گفتار نامِ خداست
که رحمت‌گر و مهربان خلق راست
بگو او خدایی‌ست یکتا و بس
که هرگز ندارد نیازی به کس
نه زاد و نه زاییده شد آن اِلٰه
نه دارد شریکی خدا هیچ‌گاه
(امید مجد)

ترجمہ:
گفتار کی ابتدا و سرآغاز خدا کا نام ہے
جو خلق پر رحمت گر و مہربان ہے
کہو کہ وہ خدا یکتا ہے اور بس
کہ جسے ہرگز کسی کی نیاز نہیں ہے
نہ اُس اِلٰہ نے متوّلد کیا اور نہ وہ متولّد ہوا
نہ خدا کا ہرگز کوئی شریک ہے

———————-

به نامِ خداوندِ هر دو جهان
که بخشنده است و بسی مهربان
بگو (ای پیمبر به مخلوقِ ما)
بُوَد او به عالم یگانه خدا
خدایی که او را نباشد نیاز
(ولی دستِ هر کس به سویش دراز!)
نزاده‌ست و زاییده هرگز نشد
ورا هم شبیهی و همتا نبُد
(سید رِضا ابوالمعالی کرمانشاهی)

ترجمہ:
خداوندِ ہر دو جہاں کے نام سے
جو رحیم ہے اور بسے مہربان ہے
[اے پیغمبر! ہماری مخلوق سے] کہو
کہ وہ عالَم میں یگانہ خدا ہے
وہ خدا کہ جسے نیاز نہیں ہے
(لیکن ہر کسی کا دست اُس کی جانب دراز ہے!)
نہ اُس نے متولّد کیا ہے اور نہ وہ ہرگز متوّلد ہوا
اور اُس کا کوئی شبیہ و ہمتا بھی نہیں رہا

———————-

ابتدایِ سخن به نامِ خدا
مِهر‌وَرزنده و عطابخشا
گو خدایِ جهان بُوَد یکتا
و ندارد به کس نیاز خدا
او نه کس زاید و نه کس او را
و کسی نیست بهرِ او همتا
(شهاب تشکّری آرانی)

ترجمہ:
سُخن کی ابتدا خدا کے نام سے
[جو] مہربان اور عطا بخشنے والا [ہے]
کہو کہ خدائے جہاں یکتا ہے
اور خدا کو کسی سے نیاز نہیں ہے
وہ نہ کسی کو متولّد کرتا ہے اور نہ کوئی اُس کو
اور کوئی اُس کا ہمتا نہیں ہے

———————-

مى‌کنم گفتار را آغاز با نامِ خدا
آنکه بس بخشنده و هم مهربان باشد به ما
اى پیمبر گو بُوَد یکتا خداوندِ جهان
بى‌نیازِ مُطلق است آن ذاتِ یکتا بى‌گمان
که نه زاده و نه زاییده شده او هیچ‌گاه
و ندارد کُفْو و همتا هرگز آن یکتا اِلٰه
(صدّیقه روحانی ‘وفا’)

ترجمہ:
میں گفتار کا آغاز خدا کے نام سے کرتی ہوں
جو ہم پر بِسیار رحیم و مہربان ہے
اے پیغمبر! کہو کہ خداوندِ جہاں یکتا ہے
بے شک وہ ذاتِ یکتا بے نیازِ مُطلق ہے
کہ نہ اُس کی ہرگز کوئی اولاد ہے اور نہ وہ ہرگز متولّد ہوا ہے
اور اُس خدائے یکتا کا ہرگز کوئی مثل و ہمتا نہیں ہے

———————-

بگو: او هست اللهِ یگانه
خداوندی که او را حاجتش نه
نه‌اش زاده، نه زاد از فردِ دیگر
نه اور را هیچ کس همتا [و همسر]
(کرم خدا امینیان)

ترجمہ:
کہو: وہ خدائے یگانہ ہے
وہ خداوند کہ جسے حاجت نہیں ہے
نہ اُس کا کوئی زادہ ہے، نہ وہ کسی فردِ دیگر سے متولّد ہوا ہے
نہ کوئی اُس کا ہمتا و ہمسر ہے

× ‘همسر’ سے مراد ‘برابر و مساوی’ بھی ہو سکتا ہے، اور ‘زن و شوهر’ بھی۔