شهِ ممالکِ دردم بلا پناهِ من است – سلطان سلیم خان اول عثمانی

شهِ ممالکِ دردم بلا پناهِ من است
غمی که بی حد و پایان بُوَد سپاهِ من است
شبم ز رَوزن اگر ماهِ آسمان آید
جهَم ز جای تصوُّر کنم که ماهِ من است
به راهِ عشقِ تو جانا بسی بلا دیدم
هنوز تا ز فراقت چه‌ها به راهِ من است
دم از محبّتِ زُلفت زدم خطایی شد
ولیک عَفْوِ تو افزون‌تر از گُناهِ من است
ز دُودِ دل ورَقی نقش کرده‌ام سویت
قبول ساز که سرنامهٔ سیاهِ من است
سلیم بر سرِ کُویت به خاک یکسان شد
روا بُوَد که بِگویی که خاکِ راهِ من است
(سلطان سلیم خان اول)

میں ممالکِ درد کا شاہ ہوں، بلا میری پناہ ہے۔۔۔ جو غم بے حد و بے پایاں ہے، میری سِپاہ ہے۔
شب کے وقت میرے روشن دان [میں] سے اگر ماہِ آسمان آئے (یعنی اگر ماہِ آسمان نظر آئے) تو میں جگہ سے اُچھل پڑتا ہوں اور تصوُّر کرتا ہوں کہ میرا ماہ (یعنی میرا محبوب) ہے۔
اے جان! میں نے تمہارے عشق کی راہ میں کئی بلائیں دیکھیں۔۔۔ [اب دیکھتے ہیں کہ] تمہارے فراق کے باعث میری راہ میں ہنوز کیا کیا [بلائیں باقی] ہے؟
میں نے تمہاری زُلف کی محبّت کا دعویٰ کیا، [مجھ سے] اِک خطا ہو گئی۔۔۔ لیکن تمہاری مُعافی میرے گُناہ سے [کئی] زیادہ ہے۔
میں نے [اپنے] دل کے دُھوئیں سے ایک ورَق تمہاری جانب نقش کر [کے بھیجا] ہے۔۔۔ قبول کرو کہ وہ میرا سیاہ سرنامہ ہے۔ (سرنامہ = عُنوانِ نامہ)
‘سلیم’ تمہارے سرِ کُوچہ میں خاک کے ساتھ یکساں ہو گیا۔۔۔ روا ہے کہ تم کہو کہ "یہ میری خاکِ راہ ہے”۔

Advertisements

شاہ اسماعیل صفوی کے نام سلطان سلیم عثمانی کا رجَز

مندرجۂ ذیل رجَز کو شاہ اسماعیل صفوی کے نام بھیجے گئے سلطان سلیم خان اول کے ایک تہدید آمیز فارسی مکتوب سے اخذ کیا گیا ہے جس کو مولانا مُرشدِ عجم نے انشاء فرمایا تھا۔ احتمال ہے کہ یہ شاعری خود سلطان سلیم کے دہن سے نکلی ہو کیونکہ وہ بھی صاحبِ دیوان فارسی شاعر تھا۔

من آنم که چون برکَشَم تیغِ تیز
برآرم ز رُویِ زمین رستخیز
کباب از دلِ نرّه شیران کنم
صبوحی به خونِ دلیران کنم
شود صیدِ زاغِ کمانم عُقاب
ز تیغم بِلرزد دلِ آفتاب
اگر در نبردم تو کم دیده‌ای
ز گردونِ گردنده نشْنیده‌ای
ز خورشید تابِ عِنانم بِپُرس
ز بهرام آبِ سِنانم بِپُرس
اگر تاج داری مرا تیغ هست
چو تیغم بُوَد تاجت آرم به دست
امیدم چنان است ز نیرویِ بخت
که بِسْتانم از دشمنان تاج و تخت

ترجمہ:
میں وہ ہوں کہ جب تیغ تیز بیرون نکالتا ہوں تو رُوئے زمین پر قیامت برپا کر دیتا ہوں۔۔۔ میں نر شیروں کے دل سے کباب بناتا ہوں۔۔۔ میں دلیروں کے خون سے شرابِ صبحگاہی پیتا ہوں۔۔۔ عُقاب میرے زاغِ کمان کا صید ہو جاتا ہے۔۔۔ میری تیغ سے آفتاب کا دل لرزتا ہے۔۔۔ اگر تم نے مجھے نبرد میں کم دیکھا ہے۔۔۔ [یا اگر میرے بارے میں] تم نے چرخِ گردوں سے نہیں سُنا ہے۔۔۔ تو خورشید سے میرے لگام کی تاب پوچھو۔۔۔ مِرّیخ سے میرے نیزے کی آب پوچھو۔۔۔ اگر تم تاج رکھتے ہو تو میرے پاس تیغ ہے۔۔۔ چونکہ میرے پاس تیغ ہے، میں تمہارے تاج کو [اپنے] دست میں لے آؤں گا۔۔۔۔ مجھے یہ امید ہے کہ بخت کی قوّت سے میں دشمنوں سے تاج و تخت چھین لوں گا۔

مأخذ:
شاه اسماعیل صفوی: مجموعهٔ اسناد و مکاتباتِ تاریخی همراه با یادداشت‌هایِ تفصیلی

ز خورشید تابِ عِنانم بِپُرس

ایک جا اِس مصرعے کا متن یہ نظر آیا ہے:
ز خورشیدِ تابان عِنانم بِپُرس


ز پیشم رفتی و من بهرِ آن رفتار می‌میرم – سلطان سلیم خان اول عثمانی

ز پیشم رفتی و من بهرِ آن رفتار می‌میرم
قدم را رنجه فرما آه ورنه زار می‌میرم
تویی سُلطانِ حُسن و نیستت بر بنده‌ها رحمی
طبیبِ دردمندانی و من بیمار می‌میرم
گه از تابِ خمِ زُلفت به خود چون مُوی می‌پیچم
گهی از حسرتِ آن لعلِ شکّربار می‌میرم
لبت از سِحر و افسُون چند رنجد ای طبیبِ جان
حدیثی گو که من از بهرِ آن گُفتار می‌میرم
سلیمی هر گه آن مه می‌رود جانم نمی‌مانَد
ندارم بهره‌ای از زندگی ناچار می‌میرم
(سلطان سلیم خان اول)

تم میرے پیش میں سے چلے گئے، اور میں [تمہاری] اُس طرزِ خِرام کے لیے مر رہا ہوں۔۔۔ آہ! [اپنے] قدم کو [میری جانب] رنجہ فرماؤ، ورنہ میں زاری کے ساتھ مر جاؤں گا۔
تم سُلطانِ حُسن ہو، لیکن تم کو غُلاموں پر کوئی رحم نہیں ہے۔۔۔ تم طبیبِ دردمنداں ہو، لیکن میں بیمار مر رہا ہوں۔
گاہے میں تمہاری زُلف کے خم کے تاب سے بال کی طرح خود میں لِپٹتا ہوں (یعنی اذیّت میں مُبتلا ہوتا ہوں)۔۔۔ گاہے میں [تمہارے] اُس لعل جیسے لبِ شَکَربار کی حسرت سے مرتا ہوں۔
اے طبیبِ جاں! تمہارا لب جادو و افسُوں سے کب تک رنجیدہ ہو گا؟ (یعنی تم کب تک جادو و افسُوں کہو گے؟)۔۔۔ کوئی بات کہو، کہ میں [تمہاری] اُس گُفتار کے لیے مر رہا ہوں۔
اے ‘سلیمی’! جس وقت بھی وہ ماہ جاتا ہے، میری جان نہیں رہتی۔۔۔ میں زندگی سے کوئی بہرہ رکھے بغیر چار و ناچار مرتا ہوں (مرنے لگتا ہوں)۔


از یار همین دردِ دِلی بیش ندارم – سلطان سلیم خان اول عثمانی

از یار همین دردِ دِلی بیش ندارم
من بهره‌ای از زندگیِ خویش ندارم
نیکوست در ایّامِ جوانی دلِ خُرّم
امّا چه کنم چون منِ درویش ندارم
گه گریه و گه زاری و گه ناله و فریاد
من چیست کزان کافرِ بدکیش ندارم
یک لحظه نباشد که نگردد دلِ من خون
بر جان نفَسی نیست که صد نیش ندارم
شادم به رُخ و قامتِ معشوق سلیمی
پروایِ بهشت و سرِ طُوبیش ندارم
(سلطان سلیم خان اول)

میں [اپنے] یار سے اِس دردِ دل کے علاوہ کچھ نہیں رکھتا۔۔۔ میں اپنی زندگی سے کوئی بہرہ و حاصل نہیں رکھتا۔
ایّامِ جوانی میں دلِ شاد و خُرّم [کا ہونا] خوب ہے، لیکن میں کیا کروں کہ مجھ درویش کے پاس [ایسا اِک دل] نہیں ہے۔
گاہے گریہ، گاہے زاری، اور گاہے نالہ و فریاد۔۔۔ [ایسی] کیا چیز ہے کہ جو میں اُس کافرِ بددین کے باعث نہیں رکھتا؟
کوئی لحظہ [ایسا] نہیں ہوتا کہ [جس میں] میرا دل خون نہ ہو جائے۔۔۔ کوئی دم [ایسا] نہیں ہے کہ [جس میں میری] جان پر صدہا نیش (ڈنک) نہیں ہوتے۔
اے ‘سلیمی’! میں معشوق کے رُخ و قامت پر شاد ہوں۔۔۔ مجھ کو بہشت کی پروا، اور اُس کے درختِ طُوبیٰ کی رغبت نہیں ہے۔


آن کس که حُسن داد تُرا و وفا نداد – سلطان سلیم خان اول عثمانی

آن کس که حُسن داد تُرا و وفا نداد
اندوه و درد داد مرا و دوا نداد
بدروز گر شدم چه شکایت کنم ز بخت
روزِ خوشی مرا چه کنم چون خدا نداد
شب‌ها ز هجر مُردم و بادِ سحرگهی
یک‌ره به دیده مُژدهٔ آن خاکِ پا نداد
تا قصدِ صد هزار دلِ مُبتلا نکرد
یک دل‌ربا شکست به زُلفِ دوتا نداد
آن کس که داد این همه خوبی به گُل‌رُخان
بُویِ وفا و مِهر ندانم چرا نداد
جان و دلش به وصلِ دل‌آرام کَی رسد
شخصی که بوسه بر دمِ تیغِ بلا نداد
بر هر دِلی که غیرتِ عشقِ سلیم تافت
پیغام سویِ دوست به بادِ صبا نداد
(سلطان سلیم خان اول)

جس ذات نے تم کو حُسن دیا، اور وفا نہ دی۔۔۔ اُس نے مجھ کو غم و درد دیا، اور دوا نہ دی۔
اگرچہ میں بدبخت و بدحال ہو گیا، میں بخت کے باعث کیا شکایت کروں؟۔۔۔ میں کیا کروں جب خدا نے مجھ کو کوئی روزِ خوش و خوب نہ دیا۔
میں شبوں کو ہجر سے مر گیا [لیکن] بادِ سحَرگاہی نے ایک بار [بھی میری] چشم کو اُس خاکِ پا کی خوش خبری نہ دی۔
جب تک اُس نے صد ہزار دلِ مُبتلا کا قصد نہ کیا، کسی دل رُبا نے [اپنی] زُلفِ خمیدہ کو شِکن نہ دی۔ (یعنی دلربا صد ہزار دلِ مُبتلا کو ہتھیانے اور چُرانے کے لیے ہی اپنی زُلف کو شِکن دیتے ہیں۔)
جس ذات نے گُل رُخوں کو اِتنی زیادہ خوبی دی ہے، میں نہیں جانتا کہ اُس نے [اُن کو] بُوئے وفا و محبّت کیوں نہ دی۔ (بُوئے وفا و محبّت سے «وفا و محبّت کی ذرا سی فِطرت» مُراد ہے۔)
جس شخص نے تیغِ بلا کی دھار پر بوسہ نہ دیا، اُس کی جان و دل [اپنے محبوبِ] دل آرام کے وصل تک کب پہنچے گا؟
جس بھی دل پر ‘سلیم’ کے عشق کے رشک نے آتش لگائی، اُس نے دوست کی جانب پیغام بادِ صبا کو نہ دیا۔ (یعنی ‘سلیم’ کے حاسدوں نے اُس کا پیغام بادِ صبا کے ذریعے دوست تک نہ پہنچایا۔)


گاه در جان گه درونِ دیده منزل می‌کنی – سلطان سلیم خان اول عثمانی

گاه در جان گه درونِ دیده منزل می‌کنی
بهرِ معموریِ جانم غارتِ دل می‌کنی
خود همی‌دانی که کس را تابِ دیدارِ تو نیست
پرده‌ای پیشِ رُخت بهرِ چه حایل می‌کنی
خاکِ راهِ آن سهی‌قد شو بِیا ای آفتاب
سال و مه زین هرزه‌گردی‌ها چه حاصل می‌کنی
گر کمانِ ابروان این است و تیرِ غمزه این
هر که پیش آید به قتلش زود قایل می‌کنی
گُویی از سودایِ زُلف و کاکُلِ او وارَهم
ای سلیمی گاه گاهی فکرِ باطل می‌کنی
(سلطان سلیم خان اول)

تم گاہے جان میں اور گاہے چشم کے اندر مسکن کرتے ہو۔۔۔ تم میری جان کی معموری و آبادی کے لیے دل کو غارت کرتے ہو۔
تم خود جانتے ہو کہ کسی کو تمہارے دیدار کی تاب نہیں ہے۔۔۔ [پس] تم اپنے چہرے کے پیش میں پردہ کس لیے حائِل کرتے ہو؟
اے خورشید! تمہیں [اپنی] ہمیشہ کی اِن آوارہ گردیوں سے کیا حاصل ہوتا ہے؟۔۔ آؤ، اور اُس [محبوبِ] سہی قد کی خاکِ راہ بن جاؤ۔
اگر [تمہارے] ابروؤں کی کمان اور [تمہارے] غمزے کا تیر ایسا ہے تو جو بھی شخص تمہارے پیش میں آئے، تُم جَلد اُس کو قتل پر راضی کر لو گے۔
تم کہتے ہو کہ "میں اُس کے زُلف و کاکُل کے عشق و جُنون سے رَہا و خَلاص ہو جاؤں!”۔۔۔ اے ‘سلیمی’! تم بعض اوقات فکرِ باطل کرتے ہو۔


تا خِرقه و سجّاده‌ام ارزَد دِرَمی چند – سلطان سلیم خان اول عثمانی

تا خِرقه و سجّاده‌ام ارزَد دِرَمی چند
خواهم طرفِ میکده رفتن قدمی چند
درکَش قدَحی چند و فلک را عدم انگار
در خاطِرت از دُور بِبینی الَمی چند
در گُلشنِ دَوران همه در دَورِ قدَح کن
چون نرگسِ آزاده چو یابی دِرَمی چند
هم‌دم به‌جز از باده مسازید حریفان
از عُمرِ گران‌مایه چو باقی‌ست دمی چند
حالِ دلِ عُشّاق سلیمی تو چه پُرسی
در میکده با عشق و جنون مُتّهمی چند
(سلطان سلیم خان اول)

جب تک میرا خِرقہ و سجّادہ چند دِرہم قیمت رکھتا ہے، میں میکدے کی طرف چند قدم جانا چاہتا ہوں۔
[اگر] تم اپنے قلب و ذہن میں دُور سے چند آلام دیکھو [تو] چند کاسۂ [شراب] نوش کرو اور فلک کو معدوم سمجھو۔
اگر تم کو نرگسِ آزاد کی طرح چند دِرہم مِل جائیں تو گُلشنِ دَوراں میں [اُن] سب کو کاسۂ [شراب] کی گردِش کے لیے [خرچ] کر دو۔
اے ندیمو! جب عُمرِ گراں مایہ کے چند دم باقی ہیں تو شراب کے بجُز کسی کو ہمدم مت بنائیے۔
اے ‘سلیمی’! تم عُشّاق کے دل کا حال کیا پوچھتے ہو؟۔۔۔ وہ میکدے میں چند عشق و جُنوں سے مُتّہم [افراد] ہیں۔

در خاطِرت از دُور بِبینی الَمی چند

ایک نُسخے میں اِس مصرعے کا یہ متن نظر آیا ہے:
گر خاطِرت از دور بِبیند الَمی چند
اگر تمہارا قلب و ذہن دُور سے چند آلام دیکھے