بخارا میں شیعہ سنی نزاع کے بعد صدرالدین عینی کے منظوم تأثرات

۱۳۲۸ ہجری میں شہرِ بخارا کے شیعوں اور اہلِ سنت کے درمیان فرقہ ورانہ نزاع اور مناقشہ برپا ہو گیا تھا جس کے خاموش اور مہار ( = کنٹرول) ہو جانے کے بعد بابائے ادبیاتِ تاجک استاد صدرالدین عینی نے اِس فاجعے پر ایک تأثراتی نظم لکھی تھی جس کے چند اشعار اُنہوں نے اپنی کتاب ‘تاریخِ انقلابِ فکری در بخارا’ (۱۹۱۸ء) میں شامل کیے ہیں۔ اِسی کتاب کو ماخذ بناتے ہوئے اُنہی اشعار کے مفاہیم کو اپنی فہم کے بقدر اردو میں منتقل کرنے کا شرف حاصل کر رہا ہوں۔

انقلابِ دهر و دورِ چرخِ و کارِ روزگار
درسِ عبرت می‌دهد با هر که باشد هوشیار
گر به نعمت، گر به محنت، گر به عزت، گر به ظلم
امتحان‌گاه است ما را صحنهٔ لیل و نهار
گر به کف شد دولتِ گیتی، نمی‌باید غرور
گر به سر شد محنتِ عالم، بباید اصطبار
شکر می‌باید، که از حدِ شمار افزون بوَد
نعمتِ حق را، که افزون است از حدِ شمار
ناسپاسی سر زند، استغفر الله العظیم
انتقامِ ایزدی را بُرد باید انتظار
وآن گه از آن شعله در یک دم نه تر ماند، نه خشک
وآن گه از آن باد در عالم نه گل ماند، نه خار
چون وزید امروز بادِ بی‌نیازیِ خدا
در بخارا بُرد از پیر و جوان صبر و قرار
فتنه‌ای افتاد، زایل گشت از تن‌ها شکیب
وقعه‌ای سر زد، که بیرون کرد از جان‌ها دِمار
فتنهٔ شیعی و سنی، که از این رو تا به حال
عالمِ اسلام چندین بار گشته تار و مار
خانمان‌ها زین الم این دفعه هم تاراج یافت
گل‌عذاران زین ستم این بار هم غلطیده خوار
رفت جانِ یک جهان بی‌چاره بر چنگِ اجل
ماند جسمِ یک گروه افتاده بر خنجر دوچار
کام‌ها شد از سمومِ محنت و غم تلخ و شور
دیده‌ها شد از هجومِ خونِ حسرت تنگ و تار
یأس حاصل شد چنان از زندگانی خلق را
هر که بر خود دید حالِ نزع و وقتِ احتضار
یا کریم از محضِ لطفِ عام و فضلِ شاملت
عفو کن نقصان و تقصیراتِ ما را درگذار
یا غفور، از ما نیاید پیشه، الّا معصیت
یا غنی، از ما نباشد تحفه، الّا افتقار
تا به کَی باشیم در کنجِ جهالت مستقیم؟
تا به کَی باشیم در فکرِ ذلالت استوار؟
تا به چندین ریختن خونِ برادر جای آب؟
تا کجا‌ها کوفتن بر فرقِ مادر جای مار؟
خودکُشی بهرِ چه؟ از بیگانگان آریم شرم
دوست‌آزاری چرا؟ از دشمنان داریم عار
خونِ مؤمن ریختن بر مؤمنین کَی شد روا؟
مالِ مسلم تاختن بر مسلمین کَی شد شعار؟
مسلم از مسلم سلامت باشد، این قولِ رسول
گفته‌است: "المؤمنونَ اِخوةٌ” – پروردگار
(صدرالدین عینی)

ترجمہ:
انقلابِ دہر و دورِ چرخ و کارِ روزگار ہر اُس شخص کو درسِ عبرت دیتے ہیں جو ہوشیار ہے۔
اگر نعمت کے ساتھ ہو، اگر رنج کے ساتھ ہو، اگر عزت کے ساتھ ہو، یا اگر ظلم کے ساتھ ہو، یہ لیل و نہار کا میدان ہمارے لیے امتحان گاہ ہے۔
اگر کف میں دولتِ گیتی آ جائے تو غرور نہیں کرنا چاہیے؛ اور اگر رنجِ عالَم کا آغاز ہو جائے، تو صبر کرنا چاہیے۔
حدِ شمار سے افزوں نعمتِ حق کا شکر (بھی) حدِ شمار سے زیادہ ہونا چاہیے۔
اگر ناشکری شروع ہو جائے، استغفر اللہ العظیم، تو پس انتقامِ ایزدی کا منتظر رہنا چاہیے۔
اور پھر اُس وقت اُس شعلے سے ایک ہی لمحے میں نہ تر باقی رہتا ہے، نہ خشک؛ اور اُس وقت اُس باد سے عالم میں نہ گل باقی رہتا ہے نہ خار۔
آج جب خدا کی بے نیازی کی باد حرکت میں آئی تو بخارا میں وہ پیر و جواں سے صبر و قرار لے گئی۔
ایک فتنہ گرا، جس سے جسموں سے صبر زائل ہو گیا؛ ایک واقعہ سرزد ہوا، جس نے جانوں کو ہلاک کر دیا۔
شیعہ و سنی کا فتنہ کہ جس کے باعث تا حال عالمِ اسلام کئی بار تار و مار ہوا ہے۔
اِس الم سے اِس دفعہ بھی خانماں تاراج ہو گئے؛ اِس ستم سے اِس بار بھی گل عذاراں خوار حالت میں غلطیدہ ہو گئے۔
ایک عالَم کی جاں بے چارگی کے ساتھ موت کے چنگل میں چلی گئی؛ ایک گروہ کا جسم خنجر سے دوچار ہو کر بے اختیار غلطاں ہو گیا۔
سمومِ رنج و غم سے تالو تلخ و شور ہو گئے؛ ہجومِ خونِ حسرت سے دیدے تنگ و تار ہو گئے۔
مردم کو زندگانی سے ایسی مایوسی ہو گئی کہ ہر کسی کو خود پر حالتِ نزع اور وقتِ احتضار نظر آنے لگا۔
یا کریم! محض اپنے لطفِ عام و فضلِ شامل سے ہماری کوتاہی کو عفو کر اور ہماری تقصیروں سے درگذر فرما۔
یا غفور! ہمارا پیشہ بجز معصیت کچھ نہیں ہے؛ یا غنی! ہمارا تحفہ بجز تہی دستی کچھ نہیں ہے۔
ہم کب تک گوشۂ جہالت میں قائم رہیں گے؟ ہم کب تک فکرِ ذلالت میں استوار رہیں گے؟
تا چند آب کی بجائے خونِ برادر بہتا رہے گا؟ تاکجا سانپ کی بجائے فرقِ مادر پر ضرب لگائی جاتی رہے گی؟
خودکُشی کس لیے؟ ہمیں بیگانوں سے شرم آتی ہے؛ دوست آزاری کیوں؟ ہمیں دشمنوں سے عار محسوس ہوتی ہے۔
مؤمنوں پر مؤمن کا خون بہانا کب روا ہو گیا؟ مسلم کے مال کو غارت کرنا مسلموں کا کب سے شعار ہو گیا؟
"مسلم، مسلم سے سلامت ہے”، یہ قول رسول ہے؛ جبکہ پروردگار نے "المؤمنونَ اِخوةٌ” کہا ہے۔

Advertisements

فارسی فقط ایرانی شیعوں کی زبان نہیں ہے

جب میں نے اردو محفل پر ایک جگہ دیکھا کہ فارسی زبان کو فقط ایرانی شیعوں سے مخصوص کیا جا رہا ہے تو جواب میں یہ لکھا تھا:

زبانِ فارسی کا تعلق صرف ایران سے نہیں ہے، بلکہ افغانستان اور تاجکستان کی بھی یہ سرکاری زبان ہے۔ خود ایران میں بھی صرف فارسی بولنے والی نہیں بستے، بلکہ وہ بھی ایک کثیر اللسانی ملک ہے اور وہاں ترکی، کردی، عربی، مازندرانی، گیلکی، لُری، بلوچی وغیرہ درجنوں زبانیں بولی جاتی ہیں۔ ایران میں ترکی زبان بولنے والوں کی تعداد ہی تیس فیصد کے نزدیک ہے۔
فارسی زبان کو ایرانی شیعوں تک محدود کرنا بھی سخت ناانصافی ہے۔ ایران میں صفویوں کے – جو در حقیقت خود ترک تھے – اقتدار پر آنے سے قبل پورے فارسی گو اور فارسی زدہ خطے میں صرف ناصر خسرو اور فردوسی ہی ایسے دو بزرگ فارسی شعرا گذرے ہیں جو شیعہ تھے – ناصر خسرو بھی اثناعشری نہیں بلکہ فاطمی اسماعیلی تھے۔ اِن کے علاوہ حافظ، سعدی، رومی، امیر خسرو، جامی وغیرہ سمیت سارے فارسی گو شعراء اہلِ سنت و جماعت تھے۔ فارسی زبان اپنی ادبی شکل کی ابتداء کے لیے جن ماوراءالنہری سامانی امیروں کی مرہونِ منت ہے وہ بھی راسخ الاعتقاد سنی مسلمان تھے اور فارسی کو اطراف و اکناف میں پھیلانے اور رائج کرنے والے غزنوی، مغل، تیموری، سلجوق، تغلق، غوری، خوارزمی، آصف شاہی، عثمانی، شیبانی، منغیت وغیرہ شاہی سلسلے سب کے سب حنفی اہلِ سنت مذہب کے حامل تھے۔ ماوراءالنہر ایک ہزار سال تک فارسی زبان و ادب کا مرکز رہا ہے اور وہاں کے تاجک اور ازبک صدیوں سے اس زبان کو اپنی حیات کا جز بنائے ہوئے ہیں لیکن یہی ماوراءالنہر کا فارسی خطہ ساتھ ہی ایک ہزار سال تک حنفی سنی مذہب کا بھی مرکز اور درس گاہ رہا ہے جس کی وجہ سے مرزا غالب نے بھی ایک رباعی میں کہا تھا: ‘شیعی کیونکر ہو ماوراءالنہری’۔۔۔
اگر ایرانیوں کی زبان ہونے کی وجہ سے فارسی صرف ایرانی شیعوں کی زبان سمجھی جانے لگی ہے تو پھر افغانستان اور تاجکستان کے مردم فارسی گو کیوں ہیں اور حامد کرزئی اور اشرف غنی فارسی میں تقریریں کیوں کرتے ہیں؟ میں خود ایک غیر ایرانی پاکستانی سنی ہوں، لیکن میں فارسی زبان و ادب و تمدن کا عاشقِ والہ و صادق ہوں اور اِسے اپنے اسلاف کی جاودانی میراث سمجھتا ہوں۔
نیز، دنیا بھر کے تمام شیعوں کو فارسی زبان سے لاینفک طور پر منسلک کرنا بھی قطعاً نادرست ہے۔ آذربائجان اور اناطولیہ کے شیعہ ترکی گو ہیں، حالانکہ ترکی عثمانی خلافت کی سرکاری و درباری زبان تھی؛ اور عراق، بحرین اور لُبنان کے سب شیعہ عربی بولتے ہیں، اور یہ تو واضح ہی ہے کہ عربی زبان اموی اور عباسی خلافتوں کی سرکاری زبان تھی۔ پاکستان میں بھی شیعہ فارسی نہیں بلکہ اردو، پنجابی، سندھی اور پشتو سمیت دوسری کئی زبانیں بولتے ہیں اور عالموں اور محققوں کو چھوڑ کر پاکستانی شیعہ آبادی فارسی سے نابلد ہے۔
حاصلِ کلام یہ ہے کہ فارسی ایرانیوں کی زبان ضرور ہے، لیکن یہ صرف اُن ہی کی زبان نہیں ہے بلکہ دو اور (سنی اکثریت) ملک ایسے ہیں جو فارسی کو اپنی زبان مانتے ہیں۔