سیمین‌ذقنا، سنگ‌دلا، لاله‌عِذارا – عبدالرحمٰن جامی

سیمین‌ذقنا، سنگ‌دلا، لاله‌عِذارا
خوش کن به نگاهی دلِ غم‌پرورِ ما را
این قالبِ فرسوده گر از کُویِ تو دور است
اَلقَلْبُ عَلیٰ بابِكَ لَيْلاً ونَهارا
آزُرده مبادا که شود آن تنِ نازُک
از بهرِ خُدا چُست مکن بندِ قبا را
من چون گُذَرم از سرِ کُویِ تو کز آنجا
یارایِ گُذشتن نبُوَد بادِ صبا را
خوش آن که ز مَی مست شوی بی‌خبر اُفتی
پِنهان ز تو من بوسه زنم آن کفِ پا را
گر هست چو مِجمَر نفَسم گرم عجب نیست
اِذ حُبُّكَ قَد اَوقَدَ فِی قَلبِیَ نارا
جامی نکند جز هوَسِ بزمِ تو لیکن
در حضرتِ سُلطان که دِهد بار گدا را
(عبدالرحمٰن جامی)

اے سِیمیں ذقن! اے سنگ دل! اے لالہ رُخسار!۔۔۔ [اپنی] ایک نگاہ سے ہمارے دلِ غم پروَر کو خوش کر دو۔ (ذقَن = زنَخدان، چانہ، ٹھوڑی)
[میرا] یہ قالبِ فرسودہ اگر[چہ] تمہارے کُوچے سے دور ہے، [لیکن میرا] دل شب و روز تمہارے در پر ہے۔
خدا کے لیے بندِ قبا کو چُست مت کرو۔۔۔ کہیں ایسا نہ ہو کہ [تمہارا] وہ تنِ نازُک آزُردہ ہو جائے!
میں تمہارے سرِ کُوچہ سے کیسے گُذروں کہ وہاں سے تو بادِ صبا کو [بھی] گُذرنے کا یارا نہیں ہوتا۔
خوشا یہ کہ تم شراب سے مست ہو کر بے خبر ہو جاؤ۔۔۔ [اور] میں تم سے چُھپ کر [تمہارے] اُس کفِ پا کو بوسہ دے دوں۔
اگر میرا نفَس (سانس) آتش دان کی طرح گرم ہے تو عجب نہیں ہے۔۔۔ کیونکہ تمہاری محبّت نے میرے دل میں آتش روشن کی ہے۔
جامی تمہاری بزم کی آرزو کے بجُز [کوئی آرزو] نہیں کرتا، لیکن سُلطان کے حُضور میں گدا کو [شرَفِ] باریابی کون دیتا ہے/دے گا؟


بگشا دری از تیغِ جفا سینهٔ ما را – عبدالرحمٰن جامی

بِگْشا دری از تیغِ جفا سینهٔ ما را
وز سینه بُرون بر غمِ دیرینهٔ ما را
چون ناوکِ دل‌دوزِ تو راحت نرساند
هر مرحمِ راحت که رسد سینهٔ ما را
ماییم و دلِ صافِ چو آیینه چه داری
محروم ز عکسِ رُخت آیینهٔ ما را
تو شاهی و ما عُور و گداییم چه نسبت
با اطلسِ زربفتِ تو پشمینهٔ ما را
ما را اگر از کینه به پهلو ندِهی راه
این بس که به دل جای دِهی کینهٔ ما را
گر جلوه‌کنان بِگْذری آدینه به مسجد
بُت‌خانه کنی مسجدِ آدینهٔ ما را
جامی چه کنی گنجِ هُنر عرض چو آن شوخ
قدری ننِهد حاصلِ گنجینهٔ ما را
(عبدالرحمٰن جامی)

[اے محبوب!] تیغِ جفا سے ہمارے سینے میں ایک در کھولو اور [ہمارے] سینے سے ہمارے غمِ دیرینہ کو بیرون لے جاؤ۔
جو بھی مرحمِ راحت ہمارے سینے پر پہنچتا ہے، [اُن میں سے کوئی بھی] تمہارے تیرِ دل دوز کی طرح راحت نہیں پہنچاتا۔
ہم ہیں اور [ہمارا] آئینے جیسا صاف دل [ہے]۔۔۔ تم ہمارے آئینے کو اپنے چہرے کے عکس سے کس لیے محروم رکھتے ہو؟
تم شاہ ہو [جبکہ] ہم برہنہ و گدا ہیں۔۔۔ تمہارے اطلسِ زربفْت کے ساتھ ہمارے پشْمی (اُونی) لباس کو کیا نِسبت؟
اگر تم کِینے کے باعث ہم کو [اپنے] پہلو میں راہ نہیں دیتے، [تو] یہ [ہی] کافی ہے کہ تم [اپنے] دل میں ہمارے کِینے کو جگہ دیتے ہو۔
اگر تم جلوہ کرتے ہوئے بہ روزِ جُمعہ مسجد سے گُذرو تو تم ہماری مسجدِ جُمعہ (مسجدِ جامع) کو بُت خانہ کر دو گے۔
اے جامی! جب وہ شوخ ہمارے گنجینے کے حاصل [و ثمر] کی کوئی قدر نہیں کرتا تو تم [اُس کو] گنجِ‌ ہُنر کس لیے نُمائش کرتے ہو؟


نظامی، امیر خسرو، جامی اور نوائی کی ستائش – طاشلېجالې یحییٰ بیگ

عُثمانی البانوی شاعر «طاشلېجالې یحییٰ بیگ» نے ۹۵۷ھ/۱۵۵۰ء میں «نظامی گنجَوی» کی فارسی مثنوی «مخزن الاسرار» کی پیروی میں تُرکی مثنوی «گُلشنِ انوار» لکھی تھی۔ اُس مثنوی میں اُنہوں نے ایک جا نظامی گنجوی، امیر خُسرَو دہلوی، عبدالرحمٰن جامی اور امیر علی‌شیر نوایی کی سِتائش کی ہے، کیونکہ اُن سے قبل فارسی میں نظامی، خُسرَو اور جامی، جبکہ تُرکی میں نوایی اپنے اپنے خمسے اِتمام تک پہنچا چکے تھے، اور وہ خود کو اُن شُعَراء کا پَیرَو سمجھتے تھے۔ وہ کہتے ہیں:

شیخ نظامی گُهرِ بحرِ دین
حلقهٔ جمعیّته اۏلدې نِگین
دانهٔ تسبیح گیبی دائما
هپ الی آلتېندا ایدی اصفیا
خمسه‌سی ویردی یئدی اِقلیمه حال
پنجهٔ خورشیدِ مُنوّرمثال
سؤزده قوی هند ایلینۆڭ خُسرَوی
شیخ نظامی‌نۆڭ اۏدور پَی‌روی
سؤزلری کیم احسنِ اقوال‌دۆر
چهرهٔ نظما ساناسېن خال‌دۆر
قېلدې نظامی سؤزۆنی ره‌نما
خلق آڭا ثانی و اۏ ثانی آڭا
حضرتِ جامی‌دۆر آنوڭ ثالِثی
گنجِ معانی‌نۆڭ اۏدور وارثی
خمسه‌سی‌دۆر باعثِ هنگامِ عشق
خمْسِ مُبارک‌ده اۏدور جامِ عشق
دِل دیلی ایله دیدۆڲی مثنوی
خلقې ایده‌ر مستِ مَیِ معنوی
میر نوایی گُلِ بی‌خاردور
خمسه‌سی بیر نافهٔ تاتاردور
سؤزلری‌دۆر عشق اۏدونوڭ صرصرې
هر بیری بحرِ غزلۆڭ گوهری
وصف ایده‌مم ذاتِ خِردمندی‌نی
عینِ عجم گؤرمه‌دی مانندی‌نی
(طاشلېجالې یحییٰ بیگ)

شیخ نظامی بحرِ دین کے گوہر [تھے]۔۔۔ وہ حلقۂ جمعیّت کے نِگین ہوئے۔۔۔ دانۂ تسبیح کی طرح ہمیشہ تمام اصفیاء اُن کے زیرِ دست تھے۔۔۔ اُن کے خمسے (پانچ مثنویوں کے مجموعے) نے پنجۂ خورشیدِ مُنوّر کی طرح ہفت اِقلیم کو حال [و صفا و وجْد] دیا۔
دیارِ ہند کے «خُسرو» سُخن میں قوی [تھے]۔۔۔ وہ شیخ نظامی کے پَیرَو ہیں۔۔۔ اُن کے سُخن، کہ جو احسنِ اقوال ہیں، گویا چہرۂ نظم کے خال ہیں۔۔۔ اُنہوں نے نظامی کے سُخن کو رہنما بنایا۔۔۔ خَلق اُن کی ثانی ہے، [جبکہ] وہ اُن (نظامی) کے ثانی ہیں۔
حضرتِ جامی اُن کے ثالِث ہیں۔۔۔ وہ گنجِ معانی کے وارث ہیں۔۔۔ اُن کا خمسہ باعثِ ہنگامۂ عشق ہے۔۔۔ خمسِ مُبارک میں وہ جامِ عشق ہے۔۔۔ زبانِ دل کے ساتھ کہی گئی اُن کی مثنوی مردُم کو شرابِ روحانی سے مست کرتی ہے۔
میر نوائی گُلِ بے خار ہیں۔۔۔ اُن کا خمسہ ایک نافۂ تاتار ہے۔۔۔ اُن کے سُخن آتشِ عشق کی بادِ تُند ہیں۔۔۔ اُن کا ہر ایک [سُخن] بحرِ غزل کا گوہر ہے۔۔۔ میں اُن کی ذاتِ خِردمند کی توصیف نہیں کر سکتا۔۔۔ چشمِ عجم نے [بھی] اُن کی نظیر نہیں دیکھی۔

Şeyh Nizâmî güher-i bahr-ı dîn
Halka-ı cem’iyyete oldı nigîn
Dâne-i tesbîh gibi dâimâ
Hep eli altında idi asfiyâ
Hamsesi virdi yedi iklîme hâl
Pençe-i hurşîd-i münevver-misâl
Sözde kavî Hind ilinüñ Hüsrevi
Şeyh Nizâmînüñ odur peyrevi
Sözleri kim ahsen-i akvâldür
Çehre-i nazma sanasın hâldür
Kıldı Nizâmî sözüni reh-nümâ
Halk aña sânî vü o sânî aña
Hazret-i Câmidür anuñ sâlisi
Genc-i ma’ânînüñ odur vârisi
Hamsesidür bâ’is- hengâm-ı aşk
Hams-i mübârekde odur câm-ı aşk
Dil dili ile didüği mesnevî
Halkı ider mest-i mey-i ma’nevî
Mîr Nevâyî gül-i bî-hârdur
Hamsesi bir nâfe-i Tâtârdur
Sözleridür aşk odunuñ sarsarı
Her biri bahr-ı gazeluñ gevheri
Vasf idemem zât-ı hıred-mendini
Ayn-ı acem görmedi mânendini
(Taşlıcalı Yahyâ Bey)

خمْسِ مُبارک‌ده اۏدور جامِ عشق
خمسِ مُبارک میں وہ جامِ عشق ہے

مجھے نہیں معلوم کہ شاعر نے ترکیبِ «خمْسِ مُبارک» کو کس مفہوم میں استعمال کیا ہے، اور یہ ترکیب میں نے اوّلین بار دیکھی ہے۔ انٹرنیٹ پر فارسی منابع میں کچھ نظر نہیں آیا، لیکن تُرکی منابع میں تلاش کرنے سے اِس کے یہ مُمکنہ معانی نظر آئے ہیں: اسلام کے پانچ اُصول، پانچ نمازیں، پانچ انگُشتیں۔ میرا خیال ہے کہ یہاں یہ ترکیب پانچ انگُشتوں کے مفہوم میں استعمال ہوئی ہے۔

مولانا رُومی نے بھی اپنے ایک مصرعے میں اِس ترکیب کا استعمال کیا ہے:
"بِدِه به خمسِ مُبارک مرا ششُم جامی”


عبدالرحمٰن جامی کی سِتائش میں ایک نظم – اُزبک شاعر ذاکرجان حبیبی

(جامی حقی‌ده قۉشیق)
سلام ای مُحترم، علّامهٔ اهلِ بشر، جامی،
اولوغ اُستاذ و یعنی صاحبِ فضل و هُنر، جامی.
کتاب و داستان بیر قنچه نظم و نثر ایله یازدینگ،
سُخن میدانی‌ده جَولان قیلیب تاپدینگ ظفر، جامی.
«بهارستان» و «هفت اورنگ» بیله دیوانِ اشعارینگ
رِسالینگ موسیقی‌ده اېنگ شرَف‌لی مُعتبر، جامی.
آلورلر بهره اۉز اخلاصی‌گه لایق جهان اهلی،
محبّت بیرله قیلسه هر کتابینگ‌گه نظر، جامی.
یاقیم‌لی سۉزلرینگ حکمت‌لی، راحت‌بخش و جان‌پرور،
اۉقیل‌گه‌ی بزم و صُحبت‌لرده سېن‌دن کۉپ اثر، جامی.
نه خوش علم اَوجی‌نینگ روشن قویاشی پرتَو‌افشان‌سن،
نوایی خِذمتینگ‌ده توردیلر باغلب کمر، جامی.
عدالت اۉلکه‌سی‌ده کیم حقیقت نوری‌نی تۉسگه‌ی
تیلیم عاجز، حبیبی، سۉزنی قیلدیم مُختصر، جامی.
(ذاکرجان حبیبی)
۱۹۶۴ء

(جامی کے بارے میں نغمہ)
السّلام اے مُحترم، علّامۂ اہلِ بشر، جامی!۔۔۔ اے عالی اُستاد، یعنی صاحبِ فضل و ہُنر، جامی!
اے جامی! آپ نے نظم و نثر کے ساتھ کئی کتابیں اور داستانیں لِکھیں۔۔۔ آپ نے میدانِ سُخن میں جَولاں کر کے فتح پا لی۔
اے جامی! «بہارستان» و «ہفت اورنگ» کے ہمراہ آپ کا دیوانِ اشعار، اور موسیقی کے بارے میں آپ کا رسالہ باشرَف ترین اور مُعتبر ترین ہے۔
اے جامی! لائق اہلِ جہاں محبّت کے ساتھ آپ کی جس بھی کتاب پر نظر کریں، اپنے اِخلاص کے بقَدر بہرہ حاصل کرتے ہیں۔
اے جامی! آپ کے دل پذیر سُخن پُرحکمت، راحت بخش اور جاں پروَر ہیں۔۔۔ بزم اور صُحبتوں میں آپ کی تألیفات کی بِسیار خوانِش و قرائت ہو گی۔
اے جامی! آپ اَوجِ علم کے کس قدر روشن و پرتَو افشاں خورشید ہیں۔۔۔ امیر علی‌شیر نوائی کمر باندھ کر آپ کی خِدمت میں اِیستادہ ہوئے۔
مُلکِ عدالت میں کون نورِ حقیقت کو مسدود کرے گا؟۔۔۔ اے حبیبی! میری زبان عاجز ہے۔۔۔ اے جامی! میں نے سُخن کو مُختصَر کر دیا۔

(Jomiy Haqida Qo’shiq)
Salom ey Muhtaram, allomai ahli bashar, Jomiy,
Ulug’ ustozu ya’ni sohibi fazlu hunar, Jomiy.
Kitobu doston bir qancha nazmu nasr ila yozding,
Suxan maydonida javlon qilib topding zafar, Jomiy.
«Bahoriston»u, «Haft Avrang» bila devoni ash’oring
Risoling musiqida eng sharafli mo’tabar, Jomiy.
Olurlar bahra o’z ixlosiga loyiq jahon ahli,
Muhabbat birla qilsa har kitobingga nazar, Jomiy.
Yoqimli so’zlaring hikmatli, rohatbaxshu jonparvar,
O’qilgay bazmu suhbatlarda sendan ko’p asar, Jomiy.
Naxush ilm avjining ravshan quyoshi partavafshonsan,
Navoiy xizmatingda turdilar bog’lab kamar, Jomiy.
Adolat o’lkasida kim haqiqat nurini to’sgay,
Tilim ojiz, Habibiy, so’zni qildim muxtasar, Jomiy.
(Zokirjon Habibiy)
1964


امیر خسرو، حافظ، اور جامی کی ستائش میں کہا گیا امیر علی شیر نوائی کا قطعہ

اوچ کیشی‌نینگ سۉزی نشئه و معنی‌سی‌دین اۉز سۉزی‌ده چاشنی اثبات قیلماق و بو معنی‌دین مباهات قیلماق

غزل‌ده اوچ کیشی طوری‌دور اول نوع
کیم آن‌دین یخشی یۉق نظم احتمالی
بیری مُعجز بیان‌لیغ ساحرِ هند
که عشق اهلینی اۉرتر سۉز و حالی
بیری عیسیٰ نفَس‌لیک رندِ شېراز
فنا دَیری‌ده مست و لااُبالی
بیری قُدسی اثرلیک عارفِ جام
که جامِ جم‌دورور سینغان سفالی
نوایی نظمی‌غه باقسانگ، اېمس‌تور
بو اوچ‌نینگ حالی‌دین هر بَیتی خالی
همانا کۉزگودور کیم عکس سالمیش
انگه اوچ شۉخ مه‌وش‌نینگ جمالی
(امیر علی‌شیر نوایی)

تین اشخاص کے سُخن کے نشہ و معنی سے اپنے سُخن میں چاشنی [ہونے] کا اثبات کرنا اور اِس موضوع پر فخر کرنا

غزل میں تین اشخاص کی طرز اُس طرح کی ہے کہ اُن سے بہتر نظم و شاعری کا احتمال نہیں ہے۔۔۔ اُن میں سے ایک مُعجز بیاں ساحرِ ہند [امیر خسرو] ہے کہ جس کا سوز و حال اہلِ عشق کو سوزاں کرتا ہے۔۔۔ اُن میں سے ایک عیسیٰ نفَس رندِ شیراز [حافظ] ہے، جو دَیرِ فنا میں مست و لااُبالی ہے۔۔۔ اُن میں سے ایک قُدسی نشاں عارفِ جام [جامی] ہے، کہ جس کا شکستہ جامِ سفال [بھی] جامِ جم ہے۔۔۔ اگر تم نوائی کی نظم کی جانب نگاہ کرو [تو تمہیں معلوم ہو گا کہ] اُس کی کوئی بھی بیت اِن تینوں کے حال و کیفیّت سے خالی نہیں ہے۔۔۔ یقیناً وہ [ایک] آئینے [کی مانند] ہے کہ جس پر [اُن] تین ماہ وَشانِ شوخ کے جمال نے عکس ڈالا ہے۔

UCH KISHINING SO’ZI NASH’A VA MA’NISIDIN O’Z SO’ZIDA CHOSHNI ISBOT QILMOQ VA BU MA’NIDIN MUBOHOT QILMOQ

G’azalda uch kishi tavridur ul nav’
Kim, andin yaxshi yo’q nazm ehtimoli.
Biri mu’jiz bayonlig’ sohiri hind
Ki, ishq ahlini o’rtar so’zu holi.
Biri Iso nafaslik rindi Sheroz,
Fano dayrida mastu louboli.
Biri qudsi asarlik orifi Jom
Ki, jomi Jamdurur sing’an safoli.
Navoiy nazmig’a boqsang, emastur,
Bu uchning holidin har bayti xoli.
Hamono ko’zgudurkim, aks solmish,
Anga uch sho’x mahvashning jamoli.


یا من بدا جمالک فی کل ما بدا – عبدالرحمٰن جامی

یا مَنْ بَدا جَمالُكَ فِي كُلِّ ما بَدا
بادا هزار جانِ مقدّس تو را فدا
می‌نالم از جداییِ تو دم به دم چو نَی
وین طُرفه‌تر که از تو نَیَم یک نَفَس جدا
عشق است و بس که در دو جهان جلوه می‌کند
گاه از لباسِ شاه و گه از کِسوتِ گدا
یک صوت بر دو گونه همی‌آیدت به گوش
گاهی ندا همی‌نِهیش نام و گه صدا
برخیز ساقیا ز کرم جُرعه‌ای بِریز
بر عاشقانِ غم‌زده زان جامِ غم‌زُدا
زان جامِ خاص کز خودی‌ام چون دهد خلاص
در دیدهٔ شُهود نمانَد به جز خدا
جامی رهِ هُدیٰ به خدا غیرِ عشق نیست
گفتیم والسّلامُ علیٰ تابِعِ الهُدیٰ
(عبدالرحمٰن جامی)

ترجمہ:
اے وہ کہ تمہارا جمال ہر اُس چیز میں ظاہر ہے جو وجود میں آئی ہے؛ ہزار جانِ گرامی تم پر فدا ہوں!
میں تمہاری جدائی کے باعث مسلسل نَے کی طرح نالہ و زاری کرتا رہتا ہوں؛ اور عجیب تر بات یہ ہے کہ میں تم سے ایک لحظے کے لیے بھی جدا نہیں ہوں۔ ×
[یہ] عشق ہے اور بس، جو دو جہاں میں جلوہ کرتا ہے؛ کبھی شاہ کے لباس [کے وسیلے] سے اور کبھی گدا کے جامے [کے وسیلے] سے۔۔۔
ایک [ہی] آواز دو طرزوں پر تمہارے گوش میں آتی ہے؛ گاہے تم اُس کا نام ندا رکھتے ہو اور گاہے صدا۔ ×
اُٹھو، اے ساقی، [اور] از راہِ کرم غم زدہ عاشقوں کی جانب اُس غم مٹانے والے جام سے ایک جُرعہ اُنڈیلو۔ ×
اُس جامِ خاص سے کہ جب وہ مجھے اپنی خودی و انانیت سے نجات دے دے تو دیدۂ شُہود میں بجز خدا کچھ نہ رہے۔
اے جامی! خدا کی قسم، عشق کے سوا کوئی راہِ ہدایت نہیں ہے؛ ہم نے کہہ دیا، پس ہدایت و راہِ راست کے پیرَو پر سلام ہو!

× نَے = بانسری × گوش = کان × جُرعہ = گھونٹ
× یہ غزل عبدالرحمٰن جامی کے دیوانِ اول ‘فاتحۃ الشباب’ کی اولین غزل ہے۔


دلم ز هجرِ خُراسان ازان هراسان است – عبدالرحمٰن جامی (فارسی + اردو ترجمہ)

دلم ز هجرِ خُراسان ازان هراسان است
که بحرِ فقر و مُحیطِ فنا خُراسان است
نخُست گوهر از آن بحر شاهِ بسطامی‌ست
که قُطبِ زنده‌دلان و خداشناسان است
بِکَش لباسِ رعونت که شیخِ خرقانی
سِتاده خِرقه به کف بهرِ بی‌لباسان است
بگو سپاسِ مِهین عارفی که در مهنه‌ست
که عشق در پیِ آزارِ ناسپاسان است
به گوشِ جان بِشِنو نکته‌های پیرِ هرات
که مشکلاتِ طریق از بیانش آسان است
چو کأسِ خویش شکستی بیا که ساقیِ جام
نهاده باده به دستِ شکسته‌کأسان است
گداییِ درشان پیشه کرده‌ای جامی
به جز تو کیست گدایی که پادشاسان است
(عبدالرحمٰن جامی)

ترجمہ:
میرا دل خُراسان کے ہجر سے اِس لیے خوف زدہ ہے کیونکہ فقر کا بحر اور فنا کا اوقیانوس خُراسان ہے۔
اُس بحرِ کے گوہرِ اولیں شاہِ بسطامی (بایزید بسطامی) ہیں، جو زندہ دلوں اور خدا شناسوں کے قُطب ہیں۔
لباسِ رعونت و تکبّر کو اتار دو کہ شیخِ خرقانی (ابوالحسن خرقانی) بے لباسوں کے لیے [اپنے] دست میں خرقہ اٹھائے کھڑے ہیں۔
اُن عارفِ بریں کو سپاس کہو جو مہنہ میں ہیں (ابوسعید ابوالخیر)، کہ عشق ناشُکروں کے آزار کے در پَے ہے۔
پیرِ ہرات (خواجہ عبداللہ انصاری) کے نکتوں کو بہ گوشِ جاں سنو، کہ طریقت کی مشکلات اُن کے بیان کے ذریعے آسان ہیں۔
اگر تم نے اپنا کاسہ توڑ دیا تو آؤ کہ ساقیِ جام (شیخ احمد جامی) نے شکستہ کاسہ افراد کے دست میں بادہ رکھا ہے۔
اے جامی! تم نے اُن کے در کی گدائی کو پیشہ بنایا ہے؛ تمہارے بجز ایسا گدا کون ہے جو پادشاہ کی مانند ہے؟

× بَسْطام، خَرَقان اور تُربتِ جام ایران کا حصہ ہیں، مَہنہ ترکمنستان میں ہے، جبکہ ہِرات افغانستان میں واقع ہے۔


روزی که می‌سِرِشت فلک آب و خاکِ من – عبدالرحمٰن جامی (فارسی + اردو ترجمہ)

روزی که می‌سِرِشت فلک آب و خاکِ من
می‌سوخت زآتشِ تو دلِ دردناکِ من
سررشتهٔ وصالِ تو گر آمدی به کف
پیوند یافتی جگرِ چاک چاکِ من
هرچند دل ز یاریِ خود پاک بینمت
دانم سرایتی بِکُند عشقِ پاکِ من
روزی که می‌نوشت قضا نامهٔ اجل
شد نامزد به تیغِ جفایت هلاکِ من
جامی مجوی خوش‌دلی از من که در ازل
آمیختند با غم و درد آب و خاکِ من
(عبدالرحمٰن جامی)

ترجمہ:
اُس روز کہ جب فلک میری آب و خاک خمیر کر رہا تھا، میرا دلِ دردناک تمہاری آتشِ [عشق] سے جل رہا تھا۔ (یعنی میں قبل از تولّد سے تمہارا عاشق ہوں۔)
اگر تمہارے وصال کا سررشتہ [میرے] دست میں آ جاتا تو میرا جگرِ چاک چاک پیوند پا لیتا۔ ×
ہرچند میں تمہارا دل اپنی یاری سے پاک دیکھتا ہوں، [لیکن] میں جانتا ہوں کہ میرا پاک عشق سرایت و تأثیر کر جائے گا۔
جس روز کہ قضا نامۂ اجل لکھ رہی تھی، تمہاری تیغِ جفا سے میری ہلاکت معیّن ہو گئی۔
اے جامی! مجھ سے خوش دلی مت تلاش کرو کہ ازل میں میری آب و خاک کو غم و درد کے ساتھ مخلوط کیا گیا تھا۔

× سَرْرِشتہ = دھاگے کا سِرا


چو شاهی‌ات هوس است، از خودی جدا می‌باش – امیر نظام‌الدین علی‌شیر نوایی فانی (مع اردو ترجمہ)

چو شاهی‌ات هوس است، از خودی جدا می‌باش
گدایِ درگهٔ میخانهٔ فنا می‌باش
نگویمت به رقیبان مباش، ای مه، لیک
ز رویِ مِهر و وفا هم گهی به ما می‌باش
هوایِ صاف و مَیِ صاف و ساقیِ صافی
تو هم به اهلِ صفا، بر سرِ صفا می‌باش
دلا، گرت هوسِ تخت و تاجِ سلطنت است
به خاکِ درگهٔ پیرِ مُغان گدا می‌باش
رِضای خالق و مخلوق اگر همی‌خواهی
چه آیدت ز قضا، بر سرِ رضا می‌باش
گرت به گلشنِ کویش نِشیمن است مراد
چو خاکِ راه شو و پی‌روِ صبا می‌باش
به رند، رند شو اندر موافقت، ای دل
به پارسا چو فتد کار، پارسا می‌باش
اگر به دردِ دلِ خود دوا همی‌طلبی
به درد خو کن و آزاد از دوا می‌باش
شهی و رفعت اگر آرزو کنی، فانی
غلامِ حافظ و خاکِ جنابِ جامی باش
(امیر علی‌شیر نوایی فانی)

ترجمہ:
اگر تمہیں شاہی کی آرزو ہے تو خودپسندی و انانیت سے دور رہو اور درگاہِ میخانۂ فنا کے گدا بنے رہو۔
اے ماہ! میں تم سے [یہ] نہیں کہتا کہ رقیبوں کے ساتھ نہ رہو، لیکن از روئے مِہر و وفا کبھی ہمارے ساتھ بھی رہا کرو۔
صاف ہوا، صاف شراب اور ایک صاف دل ساقی [موجود ہیں]؛ تم بھی اہلِ صفا کے ساتھ باصفا رہو۔
اے دل! اگر تمہیں تخت و تاجِ سلطنت کی آرزو ہے تو پیرِ مُغاں کی درگاہ کی خاک پر گدا بنے رہو۔
اگر تمہیں خالق و مخلوق کی رِضا کی خواہش ہے تو قضا کی طرف سے جو کچھ بھی تمہاری جانب آئے، اُس پر راضی رہو۔
اگر تمہیں اُس کے کوچے کے گلشن میں نِشیمن کی خواہش ہے تو خاکِ راہ کی مانند ہو جاؤ اور صبا کی پیروی کرتے رہو۔
اے دل! رند کے ساتھ موافقت میں رند بن جاؤ، اور جب پارسا کے ساتھ سر و کار پڑے تو پارسا بنے رہو۔
اگر تمہیں اپنے دردِ دل کی دوا کی طلب ہے تو درد کی عادت کر لو اور دوا سے آزاد رہو۔
اے فانی! اگر تمہیں شاہی و بلندی کی آرزو ہے تو حافظ کے غلام اور آستانۂ جامی کی خاک بن جاؤ۔

× یہ غزل حافظ شیرازی کی غزل ‘به دورِ لاله قدح گیر و بی‌ریا می‌باش‘ کے تتبّع میں لکھی گئی ہے۔
× رکن‌الدین همایون‌فرخ کی تصحیح میں ‘چه آیدت ز قضا…’ کی بجائے ‘چو آیدت ز قضا…’ درج ہے، یعنی ‘قضا کی طرف سے جب تمہاری جانب [کچھ] آئے’۔
× رکن‌الدین همایون‌فرخ کی تصحیح میں ‘…خاکِ جنابِ جامی باش’ کی بجائے ‘…خاشاکِ راهِ جامی باش’ ہے، یعنی ‘جامی کی راہ کا خاشاک بن جاؤ’۔


محمد امین صدیقی: ‘امیر علی شیر نوائی مؤتمر’ خطے میں باہمی روابط کو گہرا کرنے کا باعث بنے گا

افغانستان کے عمومی قونصل محمد امین صدیقی نے مشہد میں ہونے والے ‘بین الاقوامی امیر علی شیر نوائی مؤتمر’ میں اپنی تقریر کے دوران کہا کہ وہ اس طرح کے مؤتمرو‌ں کو منطقے کے ممالک کے مابین ثقافتی روابط میں گہرائی لانے کا سبب سمجھتے ہیں۔
علاوہ بریں، محمد امین صدیقی نے علی شیر نوائی کی تاریخی شخصیت کا شمار اس تمدنی قلمرو کے مفاخرِ علم و ادب میں کیا اور کہا کہ وہ اس پورے خطے سے تعلق رکھتے ہیں۔
افغانستان کے عمومی قونصل نے تیموری دور کو اس ثقافتی قلمرو کے ساکنوں کے لیے مختلف پہلوؤں سے بہت گراں بہا پکارا۔
اُن کے مطابق، تیموری دور میں اس خطۂ ارض کے لوگوں کی ثقافتی میراث نے – کہ جو دینی لحاظ سے اسلام پر مبنی اور لسانی و ہنری لحاظ سے فارسی پر مبنی تھی – اپنی بقا و پائداری کی قوت کو ظاہر کیا تھا۔
صدیقی نے اپنی تقریر جاری رکھتے ہوئے کہا کہ "اس ثقافتی بیداری کی ایک خصوصیت یہ تھی کہ یہ اس منطقے کے ایک دیرینہ و سابقہ دار اور علم و ادب کی مالامال تاریخ کے حامل شہر ہرات میں رو نما ہوئی تھی جو اُس زمانے میں خراسانِ بزرگ کا ایک شہر تھا اور اب افغانستان کی قلمرو کا حصہ ہے۔”
اُنہوں نے اضافہ کیا: "تیموریوں کی ثقافتی نشاۃِ ثانیہ کو ہرات کے نام سے جدا نہیں کیا جا سکتا ہے۔ اور یہ کوئی اتفاق کی بات بھی نہیں ہے، کیونکہ فن، ادب اور علم ہمیشہ اُسی جگہ کمال کو پہنچتے ہیں جہاں ایک طرف تو دانا اور ثقافت پرور سیاسی حکام بر سرِ کار ہوں اور دوسری طرف وہاں معاشرتی لحاظ سے لوگوں کے رُشد کے لیے سازگار پس منظر اور حالات وجود میں آ چکے ہوں، اور اُس عصر کے ہرات میں یہ دونوں عوامل موجود تھے۔”
مشہد میں افغانستان کے عمومی قونصل نے امیر علی شیر نوائی کو خاندانِ تیموری کا مہذب اور دانشمند وزیر پکارا اور کہا کہ وہ اپنی کثیر بُعدی شخصیت کے وسیلے سے ادبی نگارشات کی تخلیق کے میدان میں، نیز اہلِ دانش و ادب کی حمایت اور اُن کی تخلیقات کی اشاعت میں بہت فعال رہے تھے۔
صدیقی نے نوائی کے مولانا عبدالرحمٰن جامی اور اُس دور کے دیگر تمام استادانِ علم و ہنر کے ساتھ روابط کو اُس زمانے کی رفیع الشان تہذیبی اقبال مندی کی مثال سمجھا۔
اِن افغان عہدے دار نے مزید ثقافتی روابط قائم کرنے کی ضرورت کی جانب اشارہ کیا اور کہا کہ” اس ثقافتی وطن کے ہم باشندوں کے درمیان ارتباط کی سطح ہرگز اُن مشترکات کے درجے پر نہیں ہے جو ہمارے درمیان موجود ہیں۔”
اُنہوں نے اظہار کیا: "ہماری ثقافتی سرگرمیوں نے اختصاصی اور جغرافیائی سرحدوں پر مبنی شکل اختیار کر لی ہے اور اب اکثر موقعوں پر ہمارے مفاخرِ علم و ادب پر صرف سرحدوں کے اندر ہی توجہ ہوتی ہے۔”
صدیقی نے ایران میں منعقد ہونے والے ‘امیر علی شیر نوائی مؤتمر’ کو ایک خوش آئند اور مبارک واقعہ جانا اور اسے منطقے کے ممالک کے درمیان روابط کی تعمیق کا بنیاد ساز کہا۔
افغانستان کے عمومی قونصل نے اس طرح کے برناموں (پروگراموں) کے تسلسل کی خواہش کی اور اس بات کی امید ظاہر کی کہ اہلِ ادب و ہنر و دانش کی معیت میں ایسے ہی برنامے جلد ہی افغانستان میں بھی منعقد ہوں گے۔
بین الاقوامی امیر علی شیر نوائی مؤتمر کا آغاز آج صبح سے مشہد کی دانشگاہِ فردوسی میں ہوا ہے اور اس میں ایرانی عہدے داروں اور ادیبوں کے ہمراہ افغانستان، تاجکستان، ازبکستان، پاکستان اور ہندوستان سے آئے ہوئے مہمانانِ گرامی بھی شرکت کر رہے ہیں۔

خبر کا منبع
تاریخ: ۷ فروری ۲۰۱۵ء

مؤتمر = کانفرنس