امشب شهادت‌نامهٔ عشاق امضا می‌شود – حبیب‌الله چایچیان «حسان»

شبِ عاشورا کی یاد میں کہی گئی ایک رِثائی نظم:

اِمشب شهادت‌نامهٔ عُشّاق اِمضا می‌شود
فردا ز خونِ عاشقان، این دشت دریا می‌شود
امشب کنارِ یک‌دِگر، بِنْشسته آلِ مُصطفیٰ
فردا پریشان جمعشان، چون قلبِ زهرا می‌شود
امشب بُوَد بر پا اگر، این خیمهٔ شاهنشهی
فردا به دست دُشمنان، برکَنده از جا می‌شود
امشب صدایِ خواندنِ قرآن به گوش آید ولی
فردا صدایِ الأمان، زین دشت بر پا می‌شود
امشب کنارِ مادرش، لب‌تشنه اصغر خُفته است
فردا‌‌، خُدایا!، بِستَرش، آغوشِ صحرا می‌شود
امشب که جمعِ کودکان، در خوابِ ناز آسوده‌اند
فردا به زیرِ خارها، گُم‌گشته پیدا می‌شود
امشب رُقیّه حلقهٔ زرّین اگر دارد به گوش
فردا دریغ این گوشوار از گوشِ او وا می‌شود
امشب به خیلِ تشنگان، عبّاس باشد پاسبان
فردا کنارِ علقَمه، بی دست، سقّا می‌شود
امشب که قاسم زینتِ گُلزارِ آل مُصطفاست
فردا ز مرکَب سرنگون، این سرْوِ رعنا می‌شود
امشب بُوِد جایِ علی، آغوشِ گرمِ مادرش
فردا چو گُل‌ها پیکرش، پامالِ اعدا می‌شود
امشب گرفته در میان، اصحاب، ثارالله را
فردا عزیزِ فاطمه، بی‌یار و تنها می‌شود
امشب به دستِ شاهِ دین، باشد سُلیمانی نِگین
فردا به دستِ ساربان، این حلقه یغما می‌شود
امشب سرِ سِرِّ خدا، بر دامنِ زینب بُوَد
فردا انیسِ خولی و دَیرِ نصاریٰ می‌شود
ترسم زمین و آسمان، زیر و زبر گردد «حسان»
فردا اسارت‌نامهٔ زینب چو اِجرا می‌شود
(حبیب‌الله چایچیان «حسان»)

اِس شب عاشقوں کے شہادت نامے پر اِمضا (دستخط) ہو رہا ہے۔۔۔ روزِ فردا عاشقوں کے خون سے یہ دشت دریا ہو جائے گا۔

اِس شب آلِ مُصطفیٰ ایک دوسرے کے پہلو میں بیٹھی ہوئی ہے۔۔۔ روزِ فردا یہ تمام افراد قلبِ زہرا کی مانند پراگندہ و درہم برہم ہو جائیں گے۔

اِس شب اگر یہ خیمۂ شاہنشاہی برپا ہے تو روزِ فردا دُشمنوں کے دست سے یہ خیمہ جگہ سے اُکھاڑ دیا جائے گا۔

اِس شب کانوں میں تلاوتِ قُرآن کی صدا آتی ہے۔۔۔ روزِ فردا اِس دشت سے الامان کی صدا برپا ہو گی۔

اِس شب اصغر اپنی مادر کے پہلو میں لب تشنہ سویا ہوا ہے۔۔۔ خُدایا! روزِ فردا اُس کا بِستَر آغوشِ صحرا ہو جائے گا!

اِس شب تمام بچّے خوابِ ناز میں آسودہ ہیں، [لیکن] روزِ فردا گُم گشتہ [طِفل] خاروں کے زیر میں سے مِلے گا۔

اگر اِس شب رُقیّہ کے کان میں حلقۂ زرّیں ہے تو افسوس! روزِ فردا اُس کے کان سے یہ گوشوار (بُندا) کُھل جائے گا۔

اِس شب عبّاس گروہِ تشنگاں کا پاسبان ہے۔۔۔ روزِ فردا وہ سقّا نہرِ علقَمہ کے کنارے بے دست ہو جائے گا!

اِس شب قاسم زینتِ گُلزارِ آلِ مُصطفیٰ ہے، [لیکن] روزِ فردا یہ سرْوِ رعنا سواری سے سرنِگوں [گِر] جائے گا۔

اِس شبِ علیِ اکبر کا مسکن اپنی مادر کی گرم آغوش ہے۔۔۔ روزِ فردا گُلوں کی مانند اُس کا پیکر پامالِ دُشمناں ہو جائے گا۔

اِس شب اصحاب نے ثار الله (حضرتِ حُسین) کو اپنے درمیان لیا ہوا ہے۔۔۔ روزِ فردا عزیزِ فاطمہ بے یار و تنہا ہو جائے گا۔

اِس شب شاہِ دیں (حضرتِ حُسین) کے دست میں نِگینِ سُلیمانی ہے۔۔۔ روزِ فردا یہ انگُشتری ساربان کے بدست غارت و تاراج ہو جائے گی۔

اِس شب رازِ خُدا (حضرتِ حُسین) کا سر دامنِ زینب میں ہے۔۔۔ روزِ فردا وہ سر خولی اور دَیرِ نصاریٰ کا ہمدم و ہم نشین ہو جائے گا۔

اے «حسان»! مجھے خوف ہے کہ روزِ فردا جب زینب کا اسارت نامہ جاری ہو گا تو زمین و آسمان زیر و زبر ہو جائیں گے۔

Advertisements

رجب طیب اردوغان کی زبان سے جنابِ حافظ شیرازی کی ایک بیت کی قرائت

صدرِ مملکتِ تُرکیہ «رجب طیّب اردوغان» نے صدرِ مملکتِ ایران «حسن روحانی» کی معیت میں ۲۰ دسمبر ۲۰۱۸ء کو انقرہ میں منعقد ہونے والے مشترکہ اجلاس میں جنابِ «حافظ شیرازی» کی ایک بیت کی فارسی میں قرائت کی:

"ہم نے اپنی گفتگو و سُخن رانی (تقریر) کا آغاز «نظامی» سے کیا تھا، اور اب میں چاہتا ہوں کہ ہم اِس کا اختتام «حافظِ شیرازی» کے ساتھ کریں۔ ہمارے جُغرافیائی خِطّے کے ایک عظیم شاعر «حافظِ شیرازی» کہتے ہیں کہ:

درختِ دوستی بِنْشان، که کامِ دل به بار آرد
نهالِ دشمنی برکَن، که رنجِ بی‌شمار آرد
(حافظ شیرازی)
دوستی کا درخت بوؤ کہ یہ آرزوئے دل کا میوہ لاتا ہے (یعنی اِس کے باعث آرزو و مُرادِ دل برآوردہ ہوتی ہے)۔۔۔ دُشمنی کا نِہال (پودا) اُکھاڑ دو کہ یہ بے شُمار رنج لاتا ہے۔

ویڈیو دیکھیے۔

یاددہانی: اِس مُراسلے کو اِرسال کرنے کا سبب زبان و شعرِ پارسی اور حافظِ شیرازی سے محبّت ہے، اردوغان یا اُس کی سیاست کی حمایت و مُخالفت نہیں ہے۔

===============

پس نوشت: رجب طیّب اردوغان نے اپنی اِس تقریر کا آغاز جنابِ «نظامی گنجوی» کی اِس حمدیہ بیت سے کیا تھا:
ای نامِ تو بهترین سرآغاز
بی نامِ تو نامه کَی کنم باز
اے کہ تمہارا نام بہترین دیباچہ و آغاز ہے، میں تمہارے نام کے بغیر کتاب و نامہ کب کھولتا ہوں/ کھولوں گا؟

ویڈیو دیکھیے۔


اگر تو فارغی از حالِ دوستان یارا – سعدی شیرازی

اگر تو فارغی از حالِ دوستان یارا
فراغت از تو مُیسّر نمی‌شود ما را
تو را در آینه دیدن جمالِ طلعتِ خویش
بیان کند که چه بوده‌ست ناشِکیبا را
بِیا که وقتِ بهار است تا من و تو به هم
به دیگران بِگُذاریم باغ و صحرا را
به جایِ سروِ بلند ایستاده بر لبِ جُوی
چرا نظر نکنی یارِ سرْوبالا را
شَمایلی که در اوصافِ حُسنِ ترکیبش
مجالِ نُطق نمانَد زبانِ گویا را
که گُفت در رُخِ زیبا نظر خطا باشد
خطا بُوَد که نبینند رویِ زیبا را
به دوستی که اگر زهر باشد از دستت
چنان به ذوق و ارادت خورم که حلوا را
کسی ملامتِ وامق کند به نادانی
حبیبِ من که ندیده‌ست رویِ عذرا را
گرفتم آتشِ پنهان خبر نمی‌داری
نگاه می‌نکنی آبِ چشمِ پیدا را
نگُفتمت که به یغما روَد دلت سعدی
چو دل به عشق دِهی دل‌برانِ یغما را
هنوز با همه دردم اُمیدِ درمان است
که آخِری بُوَد آخِر شبانِ یلدا را
(سعدی شیرازی)

اے یار! اگر تم دوستوں کے حال سے فارغ و بے نیاز ہو، [تو] ہم کو [کسی لمحہ] تم سے فراغت مُیسّر نہیں ہوتی۔

تمہیں آئینے میں اپنے چہرے کی زیبائی کا نظارہ بیان کر دے گا کہ تمہارے عاشقِ بے صبر و حوصلہ پر کیا گذرتی رہی ہے۔

آ جاؤ کہ وقتِ بہار ہے تاکہ ہم اور تم باہم [مِل کر] باغ و صحرا کو دیگروں کے لیے چھوڑ دیں (یا دیگروں کے سُپُرد کر دیں)۔ (یعنی سعدی کے نزدیک موسمِ بہار میں باغ و صحرا میں سَیر و تفریح کی بجائے معشوق کے ساتھ ہم نشینی بہتر ہے۔ وہ گردشِ باغ و بوستان پر محفلِ اُنس کو، اور لذّتِ بہارِ دُنیا پر لذّتِ مُصاحبت کو ترجیح دیتا ہے۔ جس جگہ سعدی کا یار ہو، وہاں خود ہی باغ ظاہر ہو جاتا ہے، لہٰذا سعدی کو بہار کے وقت باغ میں جانے کی حاجت محسوس نہیں ہوتی۔)

لبِ جُو (یعنی نہر کے کنارے) پر کھڑے سرْوِ بُلند کی بجائے تم یارِ سرْو قامت پر نظر کیوں نہیں کرتے؟

وہ اِک ایسی شکل و صورت ہے کہ اُس کے حُسنِ ترکیب (یعنی جمال و زیبائی) کی توصیف میں، بولنے والی زبان کو مجالِ نُطْق و تکلُّم نہیں رہتا۔ (یعنی زبانِ گویا اُس کی زیبائی کے وصف میں سُخن نہیں کہہ سکتی، یا زبان اُس کی زیبائی بیان کرنے پر قادر نہیں ہے۔)

کس نے کہا کہ رُخ زیبا پر نظر کرنا خطا ہے؟ خطا تو یہ ہے کہ چہرۂ زیبا کو نہ دیکھا جائے۔

دوستی کی قسم! اگر تمہارے دست سے زہر ہو تو میں اُسے ایسے ذوق و ارادت کے ساتھ کھاؤں گا کہ جیسے حلوے کو [کھا رہا ہوؤں۔]

اے میرے حبیب! وہ ہی شخص نادانی سے وامق کی ملامت کرتا ہے جس نے عذرا کا چہرہ نہ دیکھا ہو۔ (وامِق، عذرا کا عاشق تھا۔)

میں نے مان لیا کہ تم کو [میری] آتشِ پنہاں کی خبر نہیں ہے۔۔۔ [لیکن کیا] تم [میرے] ظاہر اشکِ چشم پر نگاہ نہیں کرتے؟

اے سعدی! [کیا] میں نے نہیں کہا تھا کہ جب تم «یغما» کے دلبروں کو عشق میں دل دو گے تو تمہارا دل غارت و تاراج ہو جائے گا؟ (یغْما = مشرقی تُرکستان کے ایک قبیلے اور شہر کا نام، جو اپنے زیبا رُوؤں کے لیے فارسی شاعری میں مشہور رہا ہے۔)

[اپنے] تمام درد کے باجود ہنوز مجھے اُمیدِ درماں ہے، کیونکہ شبانِ یلدا کا آخرکار ایک اختتام ہوتا ہے۔ (شبِ یلدا = سال کی طویل ترین شب)


شهِ ممالکِ دردم بلا پناهِ من است – سلطان سلیم خان اول عثمانی

شهِ ممالکِ دردم بلا پناهِ من است
غمی که بی حد و پایان بُوَد سپاهِ من است
شبم ز رَوزن اگر ماهِ آسمان آید
جهَم ز جای تصوُّر کنم که ماهِ من است
به راهِ عشقِ تو جانا بسی بلا دیدم
هنوز تا ز فراقت چه‌ها به راهِ من است
دم از محبّتِ زُلفت زدم خطایی شد
ولیک عَفْوِ تو افزون‌تر از گُناهِ من است
ز دُودِ دل ورَقی نقش کرده‌ام سویت
قبول ساز که سرنامهٔ سیاهِ من است
سلیم بر سرِ کُویت به خاک یکسان شد
روا بُوَد که بِگویی که خاکِ راهِ من است
(سلطان سلیم خان اول)

میں ممالکِ درد کا شاہ ہوں، بلا میری پناہ ہے۔۔۔ جو غم بے حد و بے پایاں ہے، میری سِپاہ ہے۔
شب کے وقت میرے روشن دان [میں] سے اگر ماہِ آسمان آئے (یعنی اگر ماہِ آسمان نظر آئے) تو میں جگہ سے اُچھل پڑتا ہوں اور تصوُّر کرتا ہوں کہ میرا ماہ (یعنی میرا محبوب) ہے۔
اے جان! میں نے تمہارے عشق کی راہ میں کئی بلائیں دیکھیں۔۔۔ [اب دیکھتے ہیں کہ] تمہارے فراق کے باعث میری راہ میں ہنوز کیا کیا [بلائیں باقی] ہے؟
میں نے تمہاری زُلف کی محبّت کا دعویٰ کیا، [مجھ سے] اِک خطا ہو گئی۔۔۔ لیکن تمہاری مُعافی میرے گُناہ سے [کئی] زیادہ ہے۔
میں نے [اپنے] دل کے دُھوئیں سے ایک ورَق تمہاری جانب نقش کر [کے بھیجا] ہے۔۔۔ قبول کرو کہ وہ میرا سیاہ سرنامہ ہے۔ (سرنامہ = عُنوانِ نامہ)
‘سلیم’ تمہارے سرِ کُوچہ میں خاک کے ساتھ یکساں ہو گیا۔۔۔ روا ہے کہ تم کہو کہ "یہ میری خاکِ راہ ہے”۔


این زبانِ پارسی گنجینهٔ فرهنگِ ماست

زبانِ فارسی کی سِتائش میں ایک بیت، اردو ترجمہ و تشریح کے ساتھ:

این زبانِ پارسی گنجینهٔ فرهنگِ ماست
وز سرِ گنجینه باید دُور کردن مُوش و مار
(علام‌علی رعدی آذرَخشی)

یہ زبانِ فارسی ہماری ثقافت کا گنجینہ ہے، اور گنجینے کے نزد سے چوہے اور سانپ کو دُور کرنا لازم ہے۔

تشریح: یعنی یہ زبانِ فارسی ہماری ثقافت کا مخزن ہے، یعنی ہماری جُملہ ثقافت و ہماری کُل روایات اِس زبانِ فارسی کے اندر موجود ہیں، اور اِس زبان نے ہمارے تمدُّن و ہماری گُذشتہ تاریخ کو ایک گنجینے کی مانند محفوظ رکھا ہوا ہے، اور جس طرح کسی عام خزانے کے پاس سے مُوذی چیزوں کو دُور کرنا ضروری ہوتا ہے، اُسی طرح ہم کو اِس گنجینۂ زبانِ فارسی سے بھی مُوذی و ضررآور چیزوں کو دُور کرنا لازم ہے، مبادا یہ شریر و مُوذی جانور و اشیاء ہماری زبان کے خزانے کو مخدوش و معیوب کر دیں۔ «مُوش و مار» (چُوہا و سانپ) سے شاید زبانِ فارسی کے دُشمنوں وَ بدخواہوں کی جانب اشارہ ہے۔


سیمین‌ذقنا، سنگ‌دلا، لاله‌عِذارا – عبدالرحمٰن جامی

سیمین‌ذقنا، سنگ‌دلا، لاله‌عِذارا
خوش کن به نگاهی دلِ غم‌پرورِ ما را
این قالبِ فرسوده گر از کُویِ تو دور است
اَلقَلْبُ عَلیٰ بابِكَ لَيْلاً ونَهارا
آزُرده مبادا که شود آن تنِ نازُک
از بهرِ خُدا چُست مکن بندِ قبا را
من چون گُذَرم از سرِ کُویِ تو کز آنجا
یارایِ گُذشتن نبُوَد بادِ صبا را
خوش آن که ز مَی مست شوی بی‌خبر اُفتی
پِنهان ز تو من بوسه زنم آن کفِ پا را
گر هست چو مِجمَر نفَسم گرم عجب نیست
اِذ حُبُّكَ قَد اَوقَدَ فِی قَلبِیَ نارا
جامی نکند جز هوَسِ بزمِ تو لیکن
در حضرتِ سُلطان که دِهد بار گدا را
(عبدالرحمٰن جامی)

اے سِیمیں ذقن! اے سنگ دل! اے لالہ رُخسار!۔۔۔ [اپنی] ایک نگاہ سے ہمارے دلِ غم پروَر کو خوش کر دو۔ (ذقَن = زنَخدان، چانہ، ٹھوڑی)
[میرا] یہ قالبِ فرسودہ اگر[چہ] تمہارے کُوچے سے دور ہے، [لیکن میرا] دل شب و روز تمہارے در پر ہے۔
خدا کے لیے بندِ قبا کو چُست مت کرو۔۔۔ کہیں ایسا نہ ہو کہ [تمہارا] وہ تنِ نازُک آزُردہ ہو جائے!
میں تمہارے سرِ کُوچہ سے کیسے گُذروں کہ وہاں سے تو بادِ صبا کو [بھی] گُذرنے کا یارا نہیں ہوتا۔
خوشا یہ کہ تم شراب سے مست ہو کر بے خبر ہو جاؤ۔۔۔ [اور] میں تم سے چُھپ کر [تمہارے] اُس کفِ پا کو بوسہ دے دوں۔
اگر میرا نفَس (سانس) آتش دان کی طرح گرم ہے تو عجب نہیں ہے۔۔۔ کیونکہ تمہاری محبّت نے میرے دل میں آتش روشن کی ہے۔
جامی تمہاری بزم کی آرزو کے بجُز [کوئی آرزو] نہیں کرتا، لیکن سُلطان کے حُضور میں گدا کو [شرَفِ] باریابی کون دیتا ہے/دے گا؟


بگشا دری از تیغِ جفا سینهٔ ما را – عبدالرحمٰن جامی

بِگْشا دری از تیغِ جفا سینهٔ ما را
وز سینه بُرون بر غمِ دیرینهٔ ما را
چون ناوکِ دل‌دوزِ تو راحت نرساند
هر مرحمِ راحت که رسد سینهٔ ما را
ماییم و دلِ صافِ چو آیینه چه داری
محروم ز عکسِ رُخت آیینهٔ ما را
تو شاهی و ما عُور و گداییم چه نسبت
با اطلسِ زربفتِ تو پشمینهٔ ما را
ما را اگر از کینه به پهلو ندِهی راه
این بس که به دل جای دِهی کینهٔ ما را
گر جلوه‌کنان بِگْذری آدینه به مسجد
بُت‌خانه کنی مسجدِ آدینهٔ ما را
جامی چه کنی گنجِ هُنر عرض چو آن شوخ
قدری ننِهد حاصلِ گنجینهٔ ما را
(عبدالرحمٰن جامی)

[اے محبوب!] تیغِ جفا سے ہمارے سینے میں ایک در کھولو اور [ہمارے] سینے سے ہمارے غمِ دیرینہ کو بیرون لے جاؤ۔
جو بھی مرحمِ راحت ہمارے سینے پر پہنچتا ہے، [اُن میں سے کوئی بھی] تمہارے تیرِ دل دوز کی طرح راحت نہیں پہنچاتا۔
ہم ہیں اور [ہمارا] آئینے جیسا صاف دل [ہے]۔۔۔ تم ہمارے آئینے کو اپنے چہرے کے عکس سے کس لیے محروم رکھتے ہو؟
تم شاہ ہو [جبکہ] ہم برہنہ و گدا ہیں۔۔۔ تمہارے اطلسِ زربفْت کے ساتھ ہمارے پشْمی (اُونی) لباس کو کیا نِسبت؟
اگر تم کِینے کے باعث ہم کو [اپنے] پہلو میں راہ نہیں دیتے، [تو] یہ [ہی] کافی ہے کہ تم [اپنے] دل میں ہمارے کِینے کو جگہ دیتے ہو۔
اگر تم جلوہ کرتے ہوئے بہ روزِ جُمعہ مسجد سے گُذرو تو تم ہماری مسجدِ جُمعہ (مسجدِ جامع) کو بُت خانہ کر دو گے۔
اے جامی! جب وہ شوخ ہمارے گنجینے کے حاصل [و ثمر] کی کوئی قدر نہیں کرتا تو تم [اُس کو] گنجِ‌ ہُنر کس لیے نُمائش کرتے ہو؟