سیمین‌ذقنا، سنگ‌دلا، لاله‌عِذارا – عبدالرحمٰن جامی

سیمین‌ذقنا، سنگ‌دلا، لاله‌عِذارا
خوش کن به نگاهی دلِ غم‌پرورِ ما را
این قالبِ فرسوده گر از کُویِ تو دور است
اَلقَلْبُ عَلیٰ بابِكَ لَيْلاً ونَهارا
آزُرده مبادا که شود آن تنِ نازُک
از بهرِ خُدا چُست مکن بندِ قبا را
من چون گُذَرم از سرِ کُویِ تو کز آنجا
یارایِ گُذشتن نبُوَد بادِ صبا را
خوش آن که ز مَی مست شوی بی‌خبر اُفتی
پِنهان ز تو من بوسه زنم آن کفِ پا را
گر هست چو مِجمَر نفَسم گرم عجب نیست
اِذ حُبُّكَ قَد اَوقَدَ فِی قَلبِیَ نارا
جامی نکند جز هوَسِ بزمِ تو لیکن
در حضرتِ سُلطان که دِهد بار گدا را
(عبدالرحمٰن جامی)

اے سِیمیں ذقن! اے سنگ دل! اے لالہ رُخسار!۔۔۔ [اپنی] ایک نگاہ سے ہمارے دلِ غم پروَر کو خوش کر دو۔ (ذقَن = زنَخدان، چانہ، ٹھوڑی)
[میرا] یہ قالبِ فرسودہ اگر[چہ] تمہارے کُوچے سے دور ہے، [لیکن میرا] دل شب و روز تمہارے در پر ہے۔
خدا کے لیے بندِ قبا کو چُست مت کرو۔۔۔ کہیں ایسا نہ ہو کہ [تمہارا] وہ تنِ نازُک آزُردہ ہو جائے!
میں تمہارے سرِ کُوچہ سے کیسے گُذروں کہ وہاں سے تو بادِ صبا کو [بھی] گُذرنے کا یارا نہیں ہوتا۔
خوشا یہ کہ تم شراب سے مست ہو کر بے خبر ہو جاؤ۔۔۔ [اور] میں تم سے چُھپ کر [تمہارے] اُس کفِ پا کو بوسہ دے دوں۔
اگر میرا نفَس (سانس) آتش دان کی طرح گرم ہے تو عجب نہیں ہے۔۔۔ کیونکہ تمہاری محبّت نے میرے دل میں آتش روشن کی ہے۔
جامی تمہاری بزم کی آرزو کے بجُز [کوئی آرزو] نہیں کرتا، لیکن سُلطان کے حُضور میں گدا کو [شرَفِ] باریابی کون دیتا ہے/دے گا؟

Advertisements

بگشا دری از تیغِ جفا سینهٔ ما را – عبدالرحمٰن جامی

بِگْشا دری از تیغِ جفا سینهٔ ما را
وز سینه بُرون بر غمِ دیرینهٔ ما را
چون ناوکِ دل‌دوزِ تو راحت نرساند
هر مرحمِ راحت که رسد سینهٔ ما را
ماییم و دلِ صافِ چو آیینه چه داری
محروم ز عکسِ رُخت آیینهٔ ما را
تو شاهی و ما عُور و گداییم چه نسبت
با اطلسِ زربفتِ تو پشمینهٔ ما را
ما را اگر از کینه به پهلو ندِهی راه
این بس که به دل جای دِهی کینهٔ ما را
گر جلوه‌کنان بِگْذری آدینه به مسجد
بُت‌خانه کنی مسجدِ آدینهٔ ما را
جامی چه کنی گنجِ هُنر عرض چو آن شوخ
قدری ننِهد حاصلِ گنجینهٔ ما را
(عبدالرحمٰن جامی)

[اے محبوب!] تیغِ جفا سے ہمارے سینے میں ایک در کھولو اور [ہمارے] سینے سے ہمارے غمِ دیرینہ کو بیرون لے جاؤ۔
جو بھی مرحمِ راحت ہمارے سینے پر پہنچتا ہے، [اُن میں سے کوئی بھی] تمہارے تیرِ دل دوز کی طرح راحت نہیں پہنچاتا۔
ہم ہیں اور [ہمارا] آئینے جیسا صاف دل [ہے]۔۔۔ تم ہمارے آئینے کو اپنے چہرے کے عکس سے کس لیے محروم رکھتے ہو؟
تم شاہ ہو [جبکہ] ہم برہنہ و گدا ہیں۔۔۔ تمہارے اطلسِ زربفْت کے ساتھ ہمارے پشْمی (اُونی) لباس کو کیا نِسبت؟
اگر تم کِینے کے باعث ہم کو [اپنے] پہلو میں راہ نہیں دیتے، [تو] یہ [ہی] کافی ہے کہ تم [اپنے] دل میں ہمارے کِینے کو جگہ دیتے ہو۔
اگر تم جلوہ کرتے ہوئے بہ روزِ جُمعہ مسجد سے گُذرو تو تم ہماری مسجدِ جُمعہ (مسجدِ جامع) کو بُت خانہ کر دو گے۔
اے جامی! جب وہ شوخ ہمارے گنجینے کے حاصل [و ثمر] کی کوئی قدر نہیں کرتا تو تم [اُس کو] گنجِ‌ ہُنر کس لیے نُمائش کرتے ہو؟


شاہ اسماعیل صفوی کے نام سلطان سلیم عثمانی کا رجَز

مندرجۂ ذیل رجَز کو شاہ اسماعیل صفوی کے نام بھیجے گئے سلطان سلیم خان اول کے ایک تہدید آمیز فارسی مکتوب سے اخذ کیا گیا ہے جس کو مولانا مُرشدِ عجم نے انشاء فرمایا تھا۔ احتمال ہے کہ یہ شاعری خود سلطان سلیم کے دہن سے نکلی ہو کیونکہ وہ بھی صاحبِ دیوان فارسی شاعر تھا۔

من آنم که چون برکَشَم تیغِ تیز
برآرم ز رُویِ زمین رستخیز
کباب از دلِ نرّه شیران کنم
صبوحی به خونِ دلیران کنم
شود صیدِ زاغِ کمانم عُقاب
ز تیغم بِلرزد دلِ آفتاب
اگر در نبردم تو کم دیده‌ای
ز گردونِ گردنده نشْنیده‌ای
ز خورشید تابِ عِنانم بِپُرس
ز بهرام آبِ سِنانم بِپُرس
اگر تاج داری مرا تیغ هست
چو تیغم بُوَد تاجت آرم به دست
امیدم چنان است ز نیرویِ بخت
که بِسْتانم از دشمنان تاج و تخت

ترجمہ:
میں وہ ہوں کہ جب تیغ تیز بیرون نکالتا ہوں تو رُوئے زمین پر قیامت برپا کر دیتا ہوں۔۔۔ میں نر شیروں کے دل سے کباب بناتا ہوں۔۔۔ میں دلیروں کے خون سے شرابِ صبحگاہی پیتا ہوں۔۔۔ عُقاب میرے زاغِ کمان کا صید ہو جاتا ہے۔۔۔ میری تیغ سے آفتاب کا دل لرزتا ہے۔۔۔ اگر تم نے مجھے نبرد میں کم دیکھا ہے۔۔۔ [یا اگر میرے بارے میں] تم نے چرخِ گردوں سے نہیں سُنا ہے۔۔۔ تو خورشید سے میرے لگام کی تاب پوچھو۔۔۔ مِرّیخ سے میرے نیزے کی آب پوچھو۔۔۔ اگر تم تاج رکھتے ہو تو میرے پاس تیغ ہے۔۔۔ چونکہ میرے پاس تیغ ہے، میں تمہارے تاج کو [اپنے] دست میں لے آؤں گا۔۔۔۔ مجھے یہ امید ہے کہ بخت کی قوّت سے میں دشمنوں سے تاج و تخت چھین لوں گا۔

مأخذ:
شاه اسماعیل صفوی: مجموعهٔ اسناد و مکاتباتِ تاریخی همراه با یادداشت‌هایِ تفصیلی

ز خورشید تابِ عِنانم بِپُرس

ایک جا اِس مصرعے کا متن یہ نظر آیا ہے:
ز خورشیدِ تابان عِنانم بِپُرس


ز پیشم رفتی و من بهرِ آن رفتار می‌میرم – سلطان سلیم خان اول عثمانی

ز پیشم رفتی و من بهرِ آن رفتار می‌میرم
قدم را رنجه فرما آه ورنه زار می‌میرم
تویی سُلطانِ حُسن و نیستت بر بنده‌ها رحمی
طبیبِ دردمندانی و من بیمار می‌میرم
گه از تابِ خمِ زُلفت به خود چون مُوی می‌پیچم
گهی از حسرتِ آن لعلِ شکّربار می‌میرم
لبت از سِحر و افسُون چند رنجد ای طبیبِ جان
حدیثی گو که من از بهرِ آن گُفتار می‌میرم
سلیمی هر گه آن مه می‌رود جانم نمی‌مانَد
ندارم بهره‌ای از زندگی ناچار می‌میرم
(سلطان سلیم خان اول)

تم میرے پیش میں سے چلے گئے، اور میں [تمہاری] اُس طرزِ خِرام کے لیے مر رہا ہوں۔۔۔ آہ! [اپنے] قدم کو [میری جانب] رنجہ فرماؤ، ورنہ میں زاری کے ساتھ مر جاؤں گا۔
تم سُلطانِ حُسن ہو، لیکن تم کو غُلاموں پر کوئی رحم نہیں ہے۔۔۔ تم طبیبِ دردمنداں ہو، لیکن میں بیمار مر رہا ہوں۔
گاہے میں تمہاری زُلف کے خم کے تاب سے بال کی طرح خود میں لِپٹتا ہوں (یعنی اذیّت میں مُبتلا ہوتا ہوں)۔۔۔ گاہے میں [تمہارے] اُس لعل جیسے لبِ شَکَربار کی حسرت سے مرتا ہوں۔
اے طبیبِ جاں! تمہارا لب جادو و افسُوں سے کب تک رنجیدہ ہو گا؟ (یعنی تم کب تک جادو و افسُوں کہو گے؟)۔۔۔ کوئی بات کہو، کہ میں [تمہاری] اُس گُفتار کے لیے مر رہا ہوں۔
اے ‘سلیمی’! جس وقت بھی وہ ماہ جاتا ہے، میری جان نہیں رہتی۔۔۔ میں زندگی سے کوئی بہرہ رکھے بغیر چار و ناچار مرتا ہوں (مرنے لگتا ہوں)۔


از یار همین دردِ دِلی بیش ندارم – سلطان سلیم خان اول عثمانی

از یار همین دردِ دِلی بیش ندارم
من بهره‌ای از زندگیِ خویش ندارم
نیکوست در ایّامِ جوانی دلِ خُرّم
امّا چه کنم چون منِ درویش ندارم
گه گریه و گه زاری و گه ناله و فریاد
من چیست کزان کافرِ بدکیش ندارم
یک لحظه نباشد که نگردد دلِ من خون
بر جان نفَسی نیست که صد نیش ندارم
شادم به رُخ و قامتِ معشوق سلیمی
پروایِ بهشت و سرِ طُوبیش ندارم
(سلطان سلیم خان اول)

میں [اپنے] یار سے اِس دردِ دل کے علاوہ کچھ نہیں رکھتا۔۔۔ میں اپنی زندگی سے کوئی بہرہ و حاصل نہیں رکھتا۔
ایّامِ جوانی میں دلِ شاد و خُرّم [کا ہونا] خوب ہے، لیکن میں کیا کروں کہ مجھ درویش کے پاس [ایسا اِک دل] نہیں ہے۔
گاہے گریہ، گاہے زاری، اور گاہے نالہ و فریاد۔۔۔ [ایسی] کیا چیز ہے کہ جو میں اُس کافرِ بددین کے باعث نہیں رکھتا؟
کوئی لحظہ [ایسا] نہیں ہوتا کہ [جس میں] میرا دل خون نہ ہو جائے۔۔۔ کوئی دم [ایسا] نہیں ہے کہ [جس میں میری] جان پر صدہا نیش (ڈنک) نہیں ہوتے۔
اے ‘سلیمی’! میں معشوق کے رُخ و قامت پر شاد ہوں۔۔۔ مجھ کو بہشت کی پروا، اور اُس کے درختِ طُوبیٰ کی رغبت نہیں ہے۔


آن کس که حُسن داد تُرا و وفا نداد – سلطان سلیم خان اول عثمانی

آن کس که حُسن داد تُرا و وفا نداد
اندوه و درد داد مرا و دوا نداد
بدروز گر شدم چه شکایت کنم ز بخت
روزِ خوشی مرا چه کنم چون خدا نداد
شب‌ها ز هجر مُردم و بادِ سحرگهی
یک‌ره به دیده مُژدهٔ آن خاکِ پا نداد
تا قصدِ صد هزار دلِ مُبتلا نکرد
یک دل‌ربا شکست به زُلفِ دوتا نداد
آن کس که داد این همه خوبی به گُل‌رُخان
بُویِ وفا و مِهر ندانم چرا نداد
جان و دلش به وصلِ دل‌آرام کَی رسد
شخصی که بوسه بر دمِ تیغِ بلا نداد
بر هر دِلی که غیرتِ عشقِ سلیم تافت
پیغام سویِ دوست به بادِ صبا نداد
(سلطان سلیم خان اول)

جس ذات نے تم کو حُسن دیا، اور وفا نہ دی۔۔۔ اُس نے مجھ کو غم و درد دیا، اور دوا نہ دی۔
اگرچہ میں بدبخت و بدحال ہو گیا، میں بخت کے باعث کیا شکایت کروں؟۔۔۔ میں کیا کروں جب خدا نے مجھ کو کوئی روزِ خوش و خوب نہ دیا۔
میں شبوں کو ہجر سے مر گیا [لیکن] بادِ سحَرگاہی نے ایک بار [بھی میری] چشم کو اُس خاکِ پا کی خوش خبری نہ دی۔
جب تک اُس نے صد ہزار دلِ مُبتلا کا قصد نہ کیا، کسی دل رُبا نے [اپنی] زُلفِ خمیدہ کو شِکن نہ دی۔ (یعنی دلربا صد ہزار دلِ مُبتلا کو ہتھیانے اور چُرانے کے لیے ہی اپنی زُلف کو شِکن دیتے ہیں۔)
جس ذات نے گُل رُخوں کو اِتنی زیادہ خوبی دی ہے، میں نہیں جانتا کہ اُس نے [اُن کو] بُوئے وفا و محبّت کیوں نہ دی۔ (بُوئے وفا و محبّت سے «وفا و محبّت کی ذرا سی فِطرت» مُراد ہے۔)
جس شخص نے تیغِ بلا کی دھار پر بوسہ نہ دیا، اُس کی جان و دل [اپنے محبوبِ] دل آرام کے وصل تک کب پہنچے گا؟
جس بھی دل پر ‘سلیم’ کے عشق کے رشک نے آتش لگائی، اُس نے دوست کی جانب پیغام بادِ صبا کو نہ دیا۔ (یعنی ‘سلیم’ کے حاسدوں نے اُس کا پیغام بادِ صبا کے ذریعے دوست تک نہ پہنچایا۔)


غیر از درت پناه نداریم، یا نبی – محمد فضولی بغدادی

غیر از درت پناه نداریم، یا نبی
جز تو اُمیدگاه نداریم، یا نبی
تا بُرده‌ایم سویِ تو ره جز طریقِ تو
رُویی به هیچ راه نداریم، یا نبی
بهرِ ظُهورِ لُطفِ عمیمت وسیله‌ای
غیر از فغان و آه نداریم، یا نبی
روزِ جزا تویی چو شفیعِ گُناهِ ما
اندیشه از گُناه نداریم، یا نبی
در امْر و نهْی هرچه به ما حُکم کرده‌ای
حق است و اِشتِباه نداریم، یا نبی
بر لُطفِ توست تکیه نه بر طاعتی که ما
داریم گاه و گاه نداریم، یا نبی
مُلکِ وُجود مُنتظِم از فیضِ عدلِ توست
غیر از تو پادشاه نداریم، یا نبی
بسته‌ست جُرم‌هایِ فضولی زبانِ ما
غیر از تو عُذرخواه نداریم، یا نبی
(محمد فضولی بغدادی)

اے نبی! ہم آپ کے در کے بجز کوئی پناہ نہیں رکھتے۔۔۔ اے نبی! ہم آپ کے بجز کوئی اُمیدگاہ نہیں رکھتے۔
اے نبی! جب سے ہم آپ کی جانب عازمِ راہ ہوئے ہیں، ہمارا رُخ آپ کی راہ کے بجز کسی بھی راہ کی جانب نہیں ہے۔
اے نبی! آپ کے لُطفِ عام کے ظُہور کے لیے ہم آہ و فغاں کے بجز کوئی وسیلہ نہیں رکھتے۔
اے نبی! چونکہ روزِ جزا ہمارے گُناہ کے شفیع آپ ہیں، ہم کو گُناہ کی فِکر نہیں ہے۔
اے نبی! امْر و نهی میں آپ نے جو کچھ بھی ہم کو حُکم کیا ہے، وہ حق ہے اور ہم کو [اِس بارے میں] شُبہہ نہیں ہے۔
اے نبی! ہمیں آپ کے لُطف پر تکیہ و اعتماد ہے، [اپنی اُس ناقِص] اطاعت و بندگی پر نہیں، جو گاہے ہوتی ہے اور گاہے نہیں۔
اے نبی! مُلکِ وُجود آپ کے عدل کے فَیض سے انتظام یافتہ و ترتیب یافتہ ہے۔۔۔ ہم آپ کے بجز کوئی پادشاہ نہیں رکھتے۔
اے نبی! ‘فُضولی’ کے جُرموں نے ہماری زبان کو باندھ دیا ہے۔۔۔ ہم آپ کے بجز کوئی عُذرخواہ نہیں رکھتے۔