لا يَمَسُّهُ اِلّا الْمُطَهَّرُون

مجلِس‌ده مُصحفِ رُخِ دل‌دارې دۆن گیجه
بوس ایتمه‌گه توجُّه ایده‌رکن رقیبِ دون
اۏل گُل‌عِذار گۆلدی دیدی لا یَمَسُّهُ
بن بوس ایدۆپ همان دیدۆم اِلّا الْمُطَهَّرُون

گُذشتہ شب مجلِس میں جب رقیبِ پست دِل‌دار کے مُصحَفِ چہرہ کو بوسہ دینے کی جانب مائل ہو رہا تھا تو وہ گُل‌رُخسار ہنسا اور بولا "اِس کو [کوئی] نہ چُھوئے گا”۔۔۔ میں نے بوسہ دے کر فوراً کہا "اِلّا وہ جو پاک و مُطَہَّر ہیں”۔

× مندرجۂ بالا قِطعے میں سورۂ واقعہ کی آیت ۷۹ کی جانب اشارہ ہے۔
× یہ تُرکی قِطعہ «فیلیبه‌لی وجْدی» اور «آرپاامینی‌زاده مُصطفیٰ سامی» دونوں کے تصحیح شُدہ دیوانوں میں نظر آیا ہے۔ علاوہ بریں، ایک مأخذ میں یہ قِطعہ «روحی بغدادی» سے بھی منسوب نظر آیا ہے، لیکن خود «روحی بغدادی» کے دیوان میں مجھ کو نظر نہیں آیا۔

Meclisde mushaf-ı ruh-ı dildârı dün gice
Bûs itmege teveccüh iderken rakîb-i dûn
Ol gül-’izâr güldi didi lâ-yemessuhu
Ben bûs idüp hemân didüm ille’l-mutahharûn

Advertisements

جنابِ «امیر علی‌شیر نوایی» کا ایک تُرکی قطعہ

(قطعه)
نِهانی ایگنه سنچر یارلردین
عدووَش ناوک‌افگن‌لر کۉپ آرتوق
مُنافق‌شېوه ظالم دۉست‌لردین
مُخالف‌طبع دُشمن‌لر کۉپ آرتوق
(امیر علی‌شیر نوایی)

مخفی طور پر سُوئی چُبھانے والے یاروں سے، مثلِ دُشمن تیر پھینکنے والے [اشخاص] بِسیار عالی تر ہیں۔
مُنافق‌شیوہ ظالم دوستوں سے، مُخالف‌فطرت دُشمنان بِسیار عالی تر ہیں۔

Nihoniy igna sanchar yorlardin
Aduvvash novakafganlar ko’p ortuq
Munofiqsheva zolim do’stlardin
Muxoliftab’ dushmanlar ko’p ortuq


"بر نیاید ز کُشتگان آواز” – عُثمانی شاعر نفعی ارضرومی کا ایک قطعہ

عُثمانی شاعر نفعی ارضرومی (م. ۱۶۳۵ء) اپنے مجموعۂ ہَجویات ‘سِهامِ قضا’ کے ایک تُرکی قطعے میں کہتے ہیں:
(قطعه)
کُشتهٔ ذوالفقارِ هَجوۆم‌دۆر
بیر آلای یاوه‌گو و هرزه‌طراز
قادر اۏلمازسالار جوابا نۏلا
بر نیاید ز کُشتگان آواز
(نفعی ارضرومی)
یاوہ گویوں اور ہرزہ سرایوں کا ایک جمِّ غفیر میری ذوالفقارِ ہَجو کا کُشتہ ہے۔۔۔۔ اگر وہ جواب [دینے] پر قادر نہ ہوں تو کیا عجب؟۔۔۔ [کہ] کُشتگاں سے آواز بلند نہیں ہوتی (یعنی کُشتگاں آواز نہیں نِکال سکتے)۔

Küşte-i zülfikâr-ı hicvümdür
Bir alay yâve-gû vü herze-tırâz
Kâdir olmazsalar cevâba n’ola
Ber neyâyed zi küştegân âvâz

× فارسی مصرع گُلستانِ سعدی شیرازی کی مندرجۂ ذیل بیت سے مأخوذ ہے:
عاشقان کُشتگانِ معشوقند
بر نیاید ز کُشتگان آواز


امیر خسرو، حافظ، اور جامی کی ستائش میں کہا گیا امیر علی شیر نوائی کا قطعہ

اوچ کیشی‌نینگ سۉزی نشئه و معنی‌سی‌دین اۉز سۉزی‌ده چاشنی اثبات قیلماق و بو معنی‌دین مباهات قیلماق

غزل‌ده اوچ کیشی طوری‌دور اول نوع
کیم آن‌دین یخشی یۉق نظم احتمالی
بیری مُعجز بیان‌لیغ ساحرِ هند
که عشق اهلینی اۉرتر سۉز و حالی
بیری عیسیٰ نفَس‌لیک رندِ شېراز
فنا دَیری‌ده مست و لااُبالی
بیری قُدسی اثرلیک عارفِ جام
که جامِ جم‌دورور سینغان سفالی
نوایی نظمی‌غه باقسانگ، اېمس‌تور
بو اوچ‌نینگ حالی‌دین هر بَیتی خالی
همانا کۉزگودور کیم عکس سالمیش
انگه اوچ شۉخ مه‌وش‌نینگ جمالی
(امیر علی‌شیر نوایی)

تین اشخاص کے سُخن کے نشہ و معنی سے اپنے سُخن میں چاشنی [ہونے] کا اثبات کرنا اور اِس موضوع پر فخر کرنا

غزل میں تین اشخاص کی طرز اُس طرح کی ہے کہ اُن سے بہتر نظم و شاعری کا احتمال نہیں ہے۔۔۔ اُن میں سے ایک مُعجز بیاں ساحرِ ہند [امیر خسرو] ہے کہ جس کا سوز و حال اہلِ عشق کو سوزاں کرتا ہے۔۔۔ اُن میں سے ایک عیسیٰ نفَس رندِ شیراز [حافظ] ہے، جو دَیرِ فنا میں مست و لااُبالی ہے۔۔۔ اُن میں سے ایک قُدسی نشاں عارفِ جام [جامی] ہے، کہ جس کا شکستہ جامِ سفال [بھی] جامِ جم ہے۔۔۔ اگر تم نوائی کی نظم کی جانب نگاہ کرو [تو تمہیں معلوم ہو گا کہ] اُس کی کوئی بھی بیت اِن تینوں کے حال و کیفیّت سے خالی نہیں ہے۔۔۔ یقیناً وہ [ایک] آئینے [کی مانند] ہے کہ جس پر [اُن] تین ماہ وَشانِ شوخ کے جمال نے عکس ڈالا ہے۔

UCH KISHINING SO’ZI NASH’A VA MA’NISIDIN O’Z SO’ZIDA CHOSHNI ISBOT QILMOQ VA BU MA’NIDIN MUBOHOT QILMOQ

G’azalda uch kishi tavridur ul nav’
Kim, andin yaxshi yo’q nazm ehtimoli.
Biri mu’jiz bayonlig’ sohiri hind
Ki, ishq ahlini o’rtar so’zu holi.
Biri Iso nafaslik rindi Sheroz,
Fano dayrida mastu louboli.
Biri qudsi asarlik orifi Jom
Ki, jomi Jamdurur sing’an safoli.
Navoiy nazmig’a boqsang, emastur,
Bu uchning holidin har bayti xoli.
Hamono ko’zgudurkim, aks solmish,
Anga uch sho’x mahvashning jamoli.


محمد فضولی بغدادی کی نظر میں غزلِ خوب کی خصوصیات

محمد فضولی بغدادی اپنے ایک تُرکی قطعے میں غزل کے بارے میں فرماتے ہیں:

(قطعه)
اۏلدور غزل که فیضی اۏنون عام اۏلوب مُدام
آرایشِ مجالسِ اهلِ قبول اۏلا
وِردِ زبانِ اهلِ صفا و سُرور اۏلوب
مضمونو ذوق‌بخش و سریعُ‌الحُصول اۏلا
اۏندان نه سُود کیم اۏلا مُبهم عبارتی
هر یئرده اِستِماعین ائدنلر ملول اۏلا
(محمد فضولی بغدادی)

غزل وہ ہے کہ جس کا فیض ہمیشہ عام ہو اور جو مجالسِ اہلِ قبول کی آرائش ہو۔
[جو ہمیشہ] اہلِ صفا و سُرور کا وِرد زباں ہو اور جس کا مضمون ذوق بخش اور سریع الحصول (آسان فہم) ہو۔
اُس [غزل] سے کیا فائدہ کہ جس کی عبارت مُبہم ہو اور ہر جگہ اُس کو سننے والے ملول ہو جائیں؟

Oldur ğəzəl ki, feyzi onun am olub müdam,
Arayişi-məcalisi-əhli-qəbul ola.
Virdi-zəbani-əhli-səfavü sürur olub,
Məzmunu zövqbəxşü səri’ül-hüsul ola.
Ondan nə sud kim, ola mübhəm ibarəti,
Hər yerdə istima’in edənlər məlul ola.


تاریخِ وفاتِ مرزا قتیل – امام بخش ناسخ

(تاریخِ وفاتِ مرزا قتیل)
شاعرِ مُعجِزبیان مرزا قتیل
رفت ازین عالَم سویِ باغِ بهشت
کِلکِ ناسخ سالِ تاریخِ وفات
سعدیِ شیرازیِ ثانی نوشت
(امام بخش ناسخ)
× سعدیِ شیرازیِ ثانی = ۱۲۳۳ھ

ترجمہ:
شاعرِ مُعجِز بیاں میرزا قتیل اِس عالَم سے باغِ بہشت کی جانب روانہ ہو گئے؛ ناسخ کے قلم نے [اُن کا] سالِ تاریخِ وفات ‘سعدیِ شیرازیِ ثانی’ لکھا۔


حضرتِ یوسف کے تین پیراہن اور رودکی

حضرتِ یوسف (ع) کی داستان میں تین پیراہنوں کا ذکر آیا ہے: وہ پیراہن کہ جسے اُن کے برادران خون آلود کر کے والد کے نزدیک لائے تھے کہ یوسف کو گُرگ نے چیر پھاڑ ڈالا ہے؛ وہ پیراہن کہ جو زلیخا کے ہاتھوں پُشت سے چاک ہوا تھا؛ اور وہ پیراہن کہ جو چشمِ یعقوب (ع) کی نابینائی ختم ہونے کا سبب بنا۔ رُودکی سمرقندی نے ایک قطعے میں حضرت یوسف کے تین پیراہنوں کی جانب خوبصورتی سے اشارہ کیا ہے:

نگارینا، شنیدستم که گاهِ محنت و راحت
سه پیراهن سَلَب بوده‌ست یوسف را به عمر اندر
یکی از کَید شد پُرخون، دوم شد چاک از تهمت
سوم یعقوب را از بوش روشن گشت چشمِ تر
رُخم مانَد بدان اول، دلم مانَد بدان ثانی
نصیبِ من شود در وصل آن پیراهنِ دیگر؟
(رودکی سمرقندی)

اے محبوب! میں نے سنا ہے کہ رنج و راحت کے موقعوں پر تین پیراہن یوسف کی زندگی میں اُن کا لباس رہے تھے۔ ایک تو مکر و فریب سے خون سے پُر ہو گیا تھا، دوسرا تہمت کی وجہ سے چاک ہو گیا تھا، اور تیسرا وہ تھا کہ جس کی بو سے یعقوب کی چشمِ تر روشن ہوئی تھی۔۔۔ میرا پُرخون چہرہ پہلے پیراہن کی مانند ہے، جبکہ میرا دلِ چاک اُس دوسرے پیراہن کی مانند ہے۔۔۔ اب کیا وہ تیسرا پیراہن مجھے وصل کے موقع پر کبھی نصیب ہو گا؟