جواں سالہ پِسر کی وفات پر مرثیہ – فردوسی طوسی

مرا سال بِگْذشت بر شست و پنج
نه نیکو بُوَد گر بِیازم به گنج
مگر بهره برگیرم از پندِ خویش
براندیشم از مرگِ فرزندِ خویش
مرا بود نوبت بِرفت آن جوان
ز دردش منم چون تنی بی‌روان
شِتابم همی تا مگر یابمش
چو یابم به پیغاره بِشْتابمش
که نوبت مرا بود بی کامِ من
چرا رفتی و بُردی آرامِ من
ز بدها تو بودی مرا دست‌گیر
چرا چاره جُستی ز همراهِ پیر
مگر هم‌رهانِ جوان یافتی
که از پیشِ من تیز بِشْتافتی
جوان را چو شد سال بر سی و هفت
نه بر آرزو یافت گیتی، بِرفت
همی بود همواره با من دُرُشت
برآشُفت و یک‌باره بِنْمود پُشت
بِرفت و غم و رنجش ایدر بِمانْد
دل و دیدهٔ من به خون درنِشانْد
کُنون او سویِ روشنایی رسید
پدر را همی جای خواهد گُزید
بر آمد چُنین روزگاری دراز
کزان هم‌رهان کس نگشتند باز
همانا مرا چشم دارد همی
ز دیر آمدن خشم دارد همی
وُرا سال سی بُد، مرا شست و هفت
نپُرسید ازین پیر و تنها بِرفت
وی اندر شِتاب و من اندر دِرنگ
ز کردارها تا چه آید به چنگ
روانِ تو دارنده روشن کُناد
خِرد پیشِ جانِ تو جوشن کُناد
همی خواهم از دادگر کردگار
ز روزی‌دِهِ آشکار و نِهان
که یکسر بِبخشد گناهِ وُرا
درخشان کند تیره‌گاهِ وُرا
(فردوسی طوسی)

ترجمہ:
میری عمر پینسٹھ سال سے زیادہ ہو گئی ہے۔۔۔ اب مناسب نہیں ہے کہ میں خزانے (یعنی دنیاوی چیزوں) کی جانب دست بڑھاؤں۔۔۔ مجھے اپنی نصیحت سے بہرہ اُٹھانا چاہیے اور اپنے فرزند کی موت کے بارے میں تفکُّر کرنا چاہیے۔۔۔ باری میری تھی، لیکن چلا وہ جوان گیا۔۔۔ اُس کے درد سے میں تنِ بے جاں کی طرح [ہو گیا] ہوں۔۔۔۔ میں جلدی کر رہا ہوں تاکہ شاید اُس کو پا سکوں، اور جب پا جاؤں تو فوراً اُس کو سرزنش کروں۔۔۔ کہ باری تو میری تھی، میری خواہش کے بغیر تم کیسے چلے گئے اور میرا آرام لے گئے؟۔۔۔ بدیوں اور اِبتلاؤں میں تم میرے دست گیر و مُعاون تھے، تم نے اِس پِیر (بوڑھے) کی ہمراہی سے کیوں دوری اختیار کی؟۔۔۔ کہیں تمہیں جوان رُفَقاء تو نہیں مل گئے تھے؟ کہ یوں تیزی سے میرے حضور سے چلے گئے؟۔۔۔ جب جوان پینتیس سال کا ہوا تو اُس نے جہان کو اپنی آرزو کے موافق نہ پایا، اور [تَرک کر کے] چلا گیا۔۔۔ وہ ہمیشہ میرے ساتھ تُند خُو و دُرُشت تھا۔۔۔ یکایک اُس نے غضب ناک ہو کر مجھ کو پُشت دکھا دی۔۔۔ وہ چلا گیا اور یہاں غم و رنج رہ گیا۔۔۔ اور اُس نے میرے دل و دیدہ کو خُون میں آغُشتہ کر دیا۔۔۔ اب وہ نُور تک پہنچ گیا ہے۔۔۔ [جہاں] وہ اپنے پدر کے لیے مسکن مُنتخَب کرے گا۔۔۔ اتنا طویل زمانہ گُذر گیا، لیکن اُن ہمراہوں میں سے کوئی واپَس نہ آیا۔۔ یقیناً وہ وہاں میرا مُنتظِر ہے۔۔۔ اور میرے دیر سے آنے پر خشمگین ہے۔۔۔ وہ تیس (سینتیس) سال کا تھا، جبکہ میں پینسٹھ سال کا ہوں۔۔۔ اُس نے اِس پِیر کو نہیں پوچھا، اور تنہا چلا گیا۔۔۔ وہ تیزی میں [ہے]، اور میں دیری میں [ہوں]۔۔۔ [اب دیکھتے ہیں کہ ہمیں اپنے] افعال کا کیا نتیجہ مِلتا ہے۔۔۔ خدا تعالیٰ تمہاری روح کو روشن کرے!۔۔۔ اور عقل کو تمہاری جان کے لیے سِپر بنائے! میں خدائے عادل، اور آشکارا و نِہاں روزی دینے والی ذات سے خواہش کرتا ہوں کہ وہ اُس کے تمام گُناہوں کو مُعاف کر دے!۔۔۔ اور اُس کے تاریک مقام (قبر) کو درخشاں کرے!

× فردوسی طوسی نے یہ مرثیہ اپنے جواں سالہ پِسر کی وفات پر کہا تھا، اور یہ مرثیہ شاہنامہ میں داستانِ خسرو پرویز کے ضِمن میں مشمول ہے۔ میں نے اِس مرثیے کا وہ متن مُنتَخب کیا ہے جو جلال خالقی مُطلق کی جانب سے تصحیح شدہ شاہنامہ میں ثبت ہے۔

Advertisements

جمع کردن زلیخا خاتونان مصر را و یوسف علیه السلام به ایشان نمودن – یہودی فارسی شاعر ‘مولانا شاهین شیرازی’

فارسی گو سزمینوں میں رہنے والے یہودیوں نے بھی زبانِ فارسی میں تألیفات و منظومات چھوڑی ہیں، لیکن چونکہ وہ عِبرانی رسم الخط کا استعمال کرتے تھے، اِس لیے اُن کی تحریریں وسیع مسلمان ادبی مُعاشرے کی اطلاع و رسائی سے دور رہیں تھیں، تا آنکہ بیسویں صدی میں اُن کے تعارف و تحقیق، اور اُن کی فارسی رسم الخط میں منتقلی کا کام آغاز ہوا تھا۔ قرنِ چہاردہُم عیسوی کے ایک یہودی فارسی شاعر ‘مولانا شاهینِ شیرازی’ نے ‘موسیٰ‌نامه’ کے نام سے، اور مثنوی کی شکل میں عہدنامۂ قدیم کی ابتدائی پانچ کتابوں – جن کو تورات کہا جاتا ہے – کا منظوم فارسی ترجمہ کیا تھا۔ کتابِ اول کے منظوم ترجمے ‘آفرینش‌نامه’ (سالِ اتمامِ تألیف: ۱۳۵۹ء) کا ایک باب ذیل میں ترجمے کے ساتھ پیش ہے:

(جمع کردنِ زُلیخا خاتونانِ مصر را و یوسف علیه السلام به ایشان نمودن)
زُلیخا کرد روزی میزبانی
نهاد او تازه‌بزمِ خُسرَوانی
زنانِ مهترانِ شهر را خوانْد
به خلوت‌خانه‌شان او شاد بِنْشانْد
زمانی عشرت و شادی بِکردند
فراوان نعمتِ شاهانه خوردند
به وصلِ هم زمانی شاد بودند
عَروسان جُمله بی‌داماد بودند
زُلیخاشان نوازش‌هایِ بسیار
بِکردی هر زمان زان لفظ دُربار
نِهاد اندر زمان آن شوخِ پُرفن
تُرُنج و کارْد اندر دستِ هر زن
بِگُفتا کارْد بردارید از جا
بُرید هر یک تُرُنجِ خویش تنها
زُلیخا داشت یوسف را نُهُفته
درونِ خانه همچون گُل شُکُفته
زنی ناگه درِ آن خانه بِگْشاد
بِشُد یوسف روان چون سروِ آزاد
شُعاعِ حُسنِ او در مجلس اُفتاد
ز بزمِ دل‌بران برخاست فریاد
ز شوقِ حُسنِ او مدهوش گشتند
همه سرگشته و بی‌هوش گشتند
نشانِ زندگی در خود ندیدند
تُرُنج و دست را در هم بُریدند
چُنان مُستغرقِ آن حور گشتند
که از هستیِ خود اندر گُذشتند
ز زخمِ آن تُرُنج و دستِ پُرخون
بِگشت آن دل‌بران را جامه پُرخون
بِگُفتند حاشَ لله این بشر نیست
جمالش جُز فُروغِ ماه و خْوَر نیست
فرشته‌ست او و یا حورِ بهشت است
نِهالش را بنی‌آدم نکِشته‌ست
(مولانا شاهین شیرازی)

(زُلیخا کا خاتونانِ مصر کو جمع کرنا اور اُن کو یوسف علیہ السلام دِکھانا)
زُلیخا نے ایک روز میزبانی مُنعقِد کی اور ایک تازہ شاہانہ بزم برپا کی۔۔۔ اُس نے شہر کی مُعزَّز عورتوں کو بُلایا اور اُنہیں خلوت خانے میں شاداں بِٹھایا۔۔۔ اُن [عورتوں] نے کئی لمحوں تک عِشرت و شادمانی کی، اور کئی شاہانہ نعمتیں کھائیں۔۔۔۔ وہ کئی لمحوں تک ایک دوسرے کے وصل سے شاد ہوتی رہیں۔۔۔ وہ سب عَروسیں (دُلہنیں) اپنے شوہروں کے بغیر تھیں۔۔۔ زُلیخا ہر لمحہ اپنے الفاظِ دُر پاش کے ساتھ اُن پر بِسیار نوازشیں کرتی تھی۔۔۔ یکایک اُس شوخِ پُرفن نے ہر عورت کے دست میں تُرُنج اور چاقو دے دیا۔۔۔ اور کہا کہ چاقو کو جگہ سے اُٹھائیے اور آپ تمام اپنے تُرُنج کو تنِ تنہا کاٹیے۔۔۔۔ زُلیخا نے یوسف کو گُلِ شُگُفتہ کی طرح درُونِ خانہ پِنہاں رکھا ہوا تھا۔۔۔ ناگہاں ایک عورت نے اُس خانے (گھر) کا در کھول دیا، اور یوسف سرْوِ آزاد کی طرح چلے آئے۔۔۔ [جوں ہی] اُن کے حُسن کی شُعاع مجلس میں گِری، دلبروں کی بزم سے فریاد بلند ہو گئی۔۔۔ وہ اُس کے حُسن کے اشتیاق سے مدہوش ہو گئیں۔۔۔ تمام کی تمام سرگشتہ و بے ہوش ہو گئیں۔۔۔ اُنہوں نے اپنے اندر زندگی کا نشان نہ پایا۔۔۔ اور تُرُنج و دست دونوں کو کاٹ ڈالا۔۔۔ وہ اُس حور میں اِس طرح مُستَغرَق ہو گئیں، کہ وہ اپنی ہستی کو فراموش و تَرک کر گئیں۔۔۔ اُس تُرُنج اور دستِ پُرخون کے زخم سے اُن دلبروں کا جامہ پُرخون ہو گیا۔۔۔ اُنہوں نے کہا: خدا کی پناہ! یہ بشر نہیں ہے۔۔۔ اُس کا جمال ماہ و خورشید کا نُور ہے، اِس کے سوا دیگر کچھ نہیں!۔۔۔ وہ یا تو فرشتہ ہے یا پھر حورِ بہشت ہے۔۔۔ اُس کے نِہال کو بنی آدم نے نہیں بویا ہے۔
× تُرُنْج = ایک میوے کا نام

——————-
"ز زخمِ آن تُرُنج و دستِ پُرخون
بِگشت آن دل‌بران را جامه پُرخون
اِس بیت کا قافیہ عیب دار ہے۔ ہو سکتا ہے کہ کاتب یا ناقل کی جانب سے کتابت کی غلطی ہو، کیونکہ شاعر قادرالکلام معلوم ہو رہے ہیں، اور قادرالکلام شاعروں سے ایسی غلطی بعید ہے۔

× ‘مولانا شاہین’ کا شیرازی ہونا حتمی نہیں ہے، لیکن عموماً اُن کا مَوطِن شہرِ شیراز ہی بتایا جاتا ہے۔


در شناختِ بی‌جسمیِ حضرتِ عِزّت – یہودی فارسی شاعر ‘عمرانی’

یہودی فارسی شاعر ‘عِمرانی’ (وفات: تقریباً ۱۵۳۶ء) نے ‘واجبات و ارکانِ سیزده‌گانهٔ ایمانِ اسرائیل’ کے نام سے ایک مثنوی لکھی تھی۔ اُس مثنوی کا بابِ سوم ذیل میں ترجمے کے ساتھ پیش ہے، جس میں خدا تعالیٰ کے بے جسم ہونے کے یہودی عقیدے کو بیان کیا گیا ہے:

(بابِ سومِ ارکانِ سیزده‌گانهٔ یهودیت در شناختِ بی‌جسمیِ حضرتِ عِزّت)
واجب است جُمله اهلِ ایمان را
هر که او هست پیروِ تورا
که بِیارد به این سُخن ایمان
هر که او هست بندهٔ یزدان
که ندارد خدایِ بی‌همتا
جسَد و جسم و چشم و دست و پا
بری از نُطق و صورت و گوش است
بی قد و قامت و بر و دوش است
او مُبرّاست از همه صورت
بِشْنو این چند بیت از حِکمت
عقل در جستجویِ او حیران
فکر و اندیشه مانده سرگردان
جملهٔ صالحان و بارایان
با همه کاملان و دانایان
مانده در کارگاهِ او حیران
کس نکرده رهی به این ایوان
فلک و کَوکب و بُروج و سِپِهر
ملَک و جِنّ و اِنس و ماه و مِهر
همه تسبیحِ شُکرِ او گویند
هر کُجااند دوست می‌جویند
او همه جا و هیچ جایی نه
ذاتِ او را چه و چرایی، نه
(عمرانی)

ترجمہ:
تمام اہلِ ایمان پر، اور جو بھی شخص تورات کا پَیرو اور یزداں کا بندہ ہے، اُس پر واجب ہے کہ وہ اِس قول پر ایمان لے آئے کہ خدائے بے ہمتا جَسد و جسم و چشم و دست و پا نہیں رکھتا۔۔۔ وہ نُطق و صورت و گوش سے برکنار ہے، اور وہ قد و قامت و سینہ و شانہ نہیں رکھتا۔۔۔ وہ تمام صورتوں وَ شکلوں سے مُبرّا ہے۔۔۔ حِکمت پر مبنی یہ چند ابیات سُنو۔۔۔۔ عقل اُس (خدا) کی جستجو میں حیران ہے۔۔۔ اور فکر و اندیشہ [اُس کی جستجو میں] سرگرداں رہ گئے ہیں۔۔۔ تمام صالحان و دانشمندان، اور تمام کاملان و دانایان، اُس کی کارگاہ میں حیران رہے گئے ہیں (یا اُس کی کارگاہِ صنعت کے بارے میں حیران رہے گئے ہیں)۔۔۔ اور کسی نے [بھی] اِس ایوان تک راہ نہیں پائی ہے۔۔۔ فلک و ستارہ و بُروج و آسمان، فرشتہ و جنّ و اِنس و ماہ و خورشید سب اُس کے شُکر کی تسبیح کہتے ہیں۔۔۔ اور وہ جس جگہ بھی ہیں، دوست تلاش کرتے ہیں (یا خدا کو دوست کے طور پر تلاش کرتے ہیں)۔۔۔ وہ ہر جا ہے، اور کسی بھی جا نہیں ہے۔۔۔ اُس کی ذات چون و چرا سے خالی ہے۔۔۔


سورۂ اخلاص کے پانچ منظوم فارسی ترجمے

سرآغازِ گفتار نامِ خداست
که رحمت‌گر و مهربان خلق راست
بگو او خدایی‌ست یکتا و بس
که هرگز ندارد نیازی به کس
نه زاد و نه زاییده شد آن اِلٰه
نه دارد شریکی خدا هیچ‌گاه
(امید مجد)

ترجمہ:
گفتار کی ابتدا و سرآغاز خدا کا نام ہے
جو خلق پر رحمت گر و مہربان ہے
کہو کہ وہ خدا یکتا ہے اور بس
کہ جسے ہرگز کسی کی نیاز نہیں ہے
نہ اُس اِلٰہ نے متوّلد کیا اور نہ وہ متولّد ہوا
نہ خدا کا ہرگز کوئی شریک ہے

———————-

به نامِ خداوندِ هر دو جهان
که بخشنده است و بسی مهربان
بگو (ای پیمبر به مخلوقِ ما)
بُوَد او به عالم یگانه خدا
خدایی که او را نباشد نیاز
(ولی دستِ هر کس به سویش دراز!)
نزاده‌ست و زاییده هرگز نشد
ورا هم شبیهی و همتا نبُد
(سید رِضا ابوالمعالی کرمانشاهی)

ترجمہ:
خداوندِ ہر دو جہاں کے نام سے
جو رحیم ہے اور بسے مہربان ہے
[اے پیغمبر! ہماری مخلوق سے] کہو
کہ وہ عالَم میں یگانہ خدا ہے
وہ خدا کہ جسے نیاز نہیں ہے
(لیکن ہر کسی کا دست اُس کی جانب دراز ہے!)
نہ اُس نے متولّد کیا ہے اور نہ وہ ہرگز متوّلد ہوا
اور اُس کا کوئی شبیہ و ہمتا بھی نہیں رہا

———————-

ابتدایِ سخن به نامِ خدا
مِهر‌وَرزنده و عطابخشا
گو خدایِ جهان بُوَد یکتا
و ندارد به کس نیاز خدا
او نه کس زاید و نه کس او را
و کسی نیست بهرِ او همتا
(شهاب تشکّری آرانی)

ترجمہ:
سُخن کی ابتدا خدا کے نام سے
[جو] مہربان اور عطا بخشنے والا [ہے]
کہو کہ خدائے جہاں یکتا ہے
اور خدا کو کسی سے نیاز نہیں ہے
وہ نہ کسی کو متولّد کرتا ہے اور نہ کوئی اُس کو
اور کوئی اُس کا ہمتا نہیں ہے

———————-

مى‌کنم گفتار را آغاز با نامِ خدا
آنکه بس بخشنده و هم مهربان باشد به ما
اى پیمبر گو بُوَد یکتا خداوندِ جهان
بى‌نیازِ مُطلق است آن ذاتِ یکتا بى‌گمان
که نه زاده و نه زاییده شده او هیچ‌گاه
و ندارد کُفْو و همتا هرگز آن یکتا اِلٰه
(صدّیقه روحانی ‘وفا’)

ترجمہ:
میں گفتار کا آغاز خدا کے نام سے کرتی ہوں
جو ہم پر بِسیار رحیم و مہربان ہے
اے پیغمبر! کہو کہ خداوندِ جہاں یکتا ہے
بے شک وہ ذاتِ یکتا بے نیازِ مُطلق ہے
کہ نہ اُس کی ہرگز کوئی اولاد ہے اور نہ وہ ہرگز متولّد ہوا ہے
اور اُس خدائے یکتا کا ہرگز کوئی مثل و ہمتا نہیں ہے

———————-

بگو: او هست اللهِ یگانه
خداوندی که او را حاجتش نه
نه‌اش زاده، نه زاد از فردِ دیگر
نه اور را هیچ کس همتا [و همسر]
(کرم خدا امینیان)

ترجمہ:
کہو: وہ خدائے یگانہ ہے
وہ خداوند کہ جسے حاجت نہیں ہے
نہ اُس کا کوئی زادہ ہے، نہ وہ کسی فردِ دیگر سے متولّد ہوا ہے
نہ کوئی اُس کا ہمتا و ہمسر ہے

× ‘همسر’ سے مراد ‘برابر و مساوی’ بھی ہو سکتا ہے، اور ‘زن و شوهر’ بھی۔


الحمد لواهب المکارم – محمد فضولی بغدادی (فارسی حمد و دعا + ترجمہ)

محمد فضولی بغدادی رحمۃ اللہ علیہ کی مثنوی ‘لیلیٰ و مجنون’ کہنہ تُرکی ادبیات کی معروف ترین مثنوی ہے۔ جالبِ توجہ چیز یہ ہے کہ اُنہوں نے اپنی اُس تُرکی مثنوی کا کا آغاز فارسی حمد و دعا سے کیا ہے، اور تُرکی زبان میں حمد وہ اگلے باب میں لے کر آئے ہیں۔ زبانِ فارسی اور حضرتِ فضولی بغدادی کے تمام محبّوں کی خدمت میں وہ فارسی حمد ترجمے کے ساتھ پیش کر رہا ہوں۔

بو حضرتِ عزّت‌دن حمد ایله استمدادِ مطالب‌دیر و آثارِ شُکر ایله استدعایِ سترِ معایب‌دیر

الحَمدُ لِواهِبِ المکارِم
والشُّکرُ لِصاحِبِ المراحِم
وهُوَ الاَزَلیُّ فی البِدایه
وهُوَ الاَبَدیُّ فی النِهایه
قد شاعَ بِصُنعِهِ بیانُه
ما اعظمَ فی البقاءِ شأنُه
سبحان الله زهی خداوند
بی‌شِبه و شریک و مثل و مانند
مشّاطهٔ نوعَروسِ عالَم
گوهرکَشِ سِلکِ نسلِ آدم
صرّافِ جواهرِ حقایق
کشّافِ غوامضِ دقایق
پیداکُنِ هر نهان که باشد
پنهان‌کُنِ هر عیان که باشد
معمارِ بنایِ آفرینش
سیراب‌کُنِ ریاضِ بینش
یا رب مددی که دردمندم
آشفته و زار و مُستمندم
از فیضِ هنر خبر ندارم
جز بی‌هنری هنر ندارم
شُغلِ عجبی گرفته‌ام پیش
پیش و پسِ او تمام تشویش
سنگی‌ست به راهم اوفتاده
بحری‌ست مرا هراس داده
توفیقِ تواَم اگر نباشد
ور لطفِ تو ره‌بر نباشد
مشکل که در این گریوهٔ تنگ
لعلی بِدر آرم از دلِ سنگ
مشکل که مراد رخ نماید
زین بحر دُری به دستم آید
آن کن که دلم فروغ گیرد
لوحم رقمِ صفا پذیرد
آیینهٔ خاطرم شود پاک
روشن گردد چراغِ ادراک
قُفلِ درِ آرزو بِتابم
هر چیز طلب کنم بِیابم
بخشد به ریاضِ دولتم آب
ابرِ کرمِ رسول و اصحاب
(محمد فضولی بغدادی)

ترجمہ:
یہ حضرتِ خدائے بزرگوار سے حمد کے ساتھ حاجات کی مدد خواہی، اور شُکر کے ساتھ معائب کی سترپوشی کی استدعا ہے

تمام ستائشیں مکارم اور کرم عطا کرنے والی ذاتِ خدا کے لیے، اور تمام شُکر رحمتوں اور مہربانیوں کے مالک کے لیے ہیں۔ وہ ذات ابتداء کے لحاظ سے ازلی اور انتہا کے لحاظ سے ابدی ہے۔ اُس کی خالقیت و آفریدگاری سے اُس کا بیان جہان میں فراگیر ہوا ہے۔ بقا کے اعتبار سے اُس کی شان کتنی اعلٰی ہے! سبحان اللہ! زہے خداوند! جو بے شبیہ و بے شریک و بے مثل و مانند ہے۔ وہ عَروسِ عالَم کا آرائش گر ہے۔ وہ نسلِ آدم کے سِلک (دھاگے) میں گوہر پرونے والا ہے۔ وہ جواہرِ حقائق کا صرّاف ہے۔ وہ باریک نُکتوں کا کشّاف ہے۔ وہ ہر نہاں چیز کو ظاہر کرنے والا ہے۔ وہ ہر عیاں چیز کو پنہاں کرنے والا ہے۔ وہ عمارتِ آفرینش کا معمار ہے۔ وہ ریاضِ بینش و بصارت کا سیراب کُن ہے۔ یا رب ذرا مدد کرو کہ میں دردمند، آشفتہ، زار، اور ملول و پریشان ہوں۔ مجھے فیضِ ہنر کی خبر نہیں ہے۔ بجز بے ہنری میرے پاس کوئی ہنر نہیں ہے۔ میں نے ایک عجیب کار شروع کیا ہے، جس کے پیش و پس میں تشویش ہی تشویش ہے۔ یہ ایک سنگ ہے جو میری راہ میں پڑا ہوا ہے۔ یہ ایک بحر ہے جس نے مجھے خوف و ہراس میں مبتلا کیا ہوا ہے۔ اگر تمہاری توفیق مجھے نصیب نہ ہو، اور اگر تمہارا لطف میرا راہبر نہ ہو، تو مشکل ہے کہ میں اِس کوہِ تنگ میں سنگ کے دل سے کوئی لعل برآمد کر سکوں۔ اور مشکل ہے کہ میری مراد مجھے اپنا رُخ دکھائے، اور اِس بحر سے کوئی دُر میرے دست میں آ جائے۔ کچھ ایسا کرو کہ میرا دل تابندگی پا جائے، میری لوح پر پاکیزگی درج ہو جائے، میرا آئینۂ قلب و ذہن پاک ہو جائے، اور میرا چراغِ ادراک روشن ہو جائے۔ اور [جب] میں درِ آرزو کا قُفل گھماؤں تو جو بھی چیز طلب کرو‌‌ں اُسے حاصل کر لوں۔ اور میرے باغِ بخت پر رسول (ص) اور اصحاب (رض) کا ابرِ کرم آب برسائے۔
× فراگیر = ہر جگہ پھیلا ہوا

استدعایِ سترِ معایب‌

ایک نسخے میں ‘استدعایِ سترِ معایب’ کی بجائے ‘استتارِ معایب’ نظر آیا ہے جس کا ترجمہ ‘معائب کا اِخفاء’ ہے۔