اوّلین تُرکی مثنوی ‘قوتادغو بیلیگ’ سے نعتِ رسول – یوسف خاص حاجِب بلاساغونی

(یالاواچ علیه‌السّلام اؤگدی‌سین آیور)
سئوۆگ ساوچې اېدتې باغېرساق ایدی
بۏدون‌دا تالوسې کیشی‌ده کئدی
یولا ائردی خلق‌قا قاراڭقو تۆنی
یاروق‌لوقې یادتې یاروتتې سنی
اۏقېچې اۏل ائردی بایات‌تېن ساڭا
سن اؤترۆ کؤنی یۏل‌قا کیردیڭ تۏڭا
آتاسېن آناسېن یولوغ قېلدې اۏل
تیله‌ک اۆممت ائردی آیو بئردی یۏل
کۆنۆن یئمه‌دی کؤر تۆنۆن یاتمادې
سنی قۏلدې رب‌دا آدېن قۏلمادې
سنی قۏلدې تۆن کۆن بو امگه‌ک بیله
آنې اؤگ سن ائمدی سئوینچین تیله
قاموغ قادغوسې ائردی اۆممت اۆچۆن
قوتولماق تیلر ائردی راحت اۆچۆن
آتادا آنادا باغېرساق بۏلوپ
تیلر ائردی توتچې بایات‌تېن قۏلوپ
بایات رحمتی ائردی خلقې اؤزه
قېلېنچې سیلیگ ائردی قېلقې تۆزه
تۆزۆن ائردی آلچاق قېلېنچې سیلیگ
اوووت‌لوغ باغېرساق آقې کئڭ الیگ
یاغېز یئر یاشېل کؤک‌ته ائردی کۆسۆش
آڭار بئردی تڭری آغېرلېق اۆکۆش
باشې ائردی اؤڭدۆن قاموغ باشچې‌قا
کئدین بۏلدې تامغا قاموغ ساوچې‌قا
کؤڭۆل بادېم ائمدی آنېڭ یۏلېڭا
سئویپ سؤزی توتتوم بۆتۆپ قاولېڭا
ایلاهی کۆده‌زگیل مئنیڭ کؤڭلۆمی
سئوۆگ ساوچې بیرله قۏپور قۏپغومې
قییامت‌ته کؤرکیت تۏلون تئگ یۆزین
الیگ توتتاچې قېل ایلاهی اؤزین
(یوسف خاص حاجِب)

(پیغمبر علیہ السّلام کی مدح کہتا ہے)
[میرے] ربِّ رحیم و شفیق نے محبوب پیغمبر کو بھیجا [جو] خَلق میں مُنتخَب ترین اور انسانوں میں خوب ترین [ہیں]۔
وہ تاریک شب میں خَلق کے لیے [ایک] مشعل [کی مانند] تھے۔۔۔ اُنہوں نے اپنی روشنائی [اطراف میں] پھیلائی [اور] تم کو روشن کیا۔
وہ تمہارے لیے خدا کی طرف سے [بھیجے گئے] داعی تھے۔۔۔ تم اِس سائے میں راہِ راست میں داخل ہوئے، اے قہرَمانِ دِلیر!
اُنہوں نے اپنے پدر و مادر کو فدا کر دیا۔۔۔ [اُن کی واحد] آرزو اُمّت تھی، اُس کو اُنہوں نے راہ دِکھائی۔
دیکھو، بہ وقتِ روز اُنہوں نے طعام نہیں کھایا، بہ وقتِ شب وہ سوئے نہیں۔۔۔ رب سے اُنہوں نے [صِرف] تمہاری خواہش کی، دیگر [شَے کی] خواہش نہ کی۔ (یعنی صِرف اُمّت کے لیے دُعا کی۔)
شب و روز اِس [قدر] زحمت کے ساتھ اُنہوں نے [فقط] تمہاری خواہش کی (یعنی فقط اُمّت کی فکر کی اور اُس کے لیے دُعا کی)۔۔۔ حالا تم اُن کی مدح کرو اور اُن کی رِضا و شادمانی کی آرزو کرو۔
اُن کا تمام غم و اضطراب اُمّت کے لیے تھا (یعنی صِرف اُمّت کے لیے غم کھاتے تھے)۔۔۔ اور راحت کے لیے [اُمّت] کی نجات و خَلاصی کی آرزو کرتے تھے۔
وہ پدر و مادر سے بھی زیادہ مہربان و مُشفِق تھے۔۔۔ وہ خدا سے دائماً [اِس کی] اِلتماس اور خواہش کرتے تھے۔
وہ خَلق پر خدا کی ایک رحمت تھے۔۔۔ وہ پاک اَخلاق اور راست فِطرت تھے۔
وہ نجیب فطرت، نرم خُو، مُتَواضِع، اور پاک اَخلاق تھے۔۔۔ وہ باحیا، شفیق، سخی اور فراخ دست تھے۔
وہ سیاہی مائل زمین پر [بھی] عزیز تھے، اور آبی آسمان پر [بھی]۔۔۔ خدا نے اُن کو بِسیار قدر و قیمت و عِزّت دی تھی۔
وہ تمام رہبروں کے آگے رئیس تھے۔۔۔۔ بعدازاں وہ تمام رسولوں کے خاتَم ہو گئے۔
میں نے حالا اُن کی راہ سے دل باندھا۔۔۔ میں اُن کے [تمام] اقوال پر ایمان لایا اور میں نے [اُن سے] محبّت کرتے ہوئے اُن کے سُخنوں کو قبول کیا۔
اے میرے خدا! میرے دل کی نگہداری کرو۔۔۔ قیامت میں مجھ کو محبوب پیغمبر کی ہمراہی میں محشور کرو۔
قیامت میں اُن کا ماہِ تمام جیسا چہرہ دِکھاؤ!۔۔۔ [اور] اے میرے خدا! خود اُن کو [میرے لیے] شفیع بناؤ۔
× قہرَمانِ = ہِیرو

Sevüg savçı ıdtı bağırsak idi
bodunda talusı kişide kedi
Yula erdi halkka karaŋku tüni
yaruklukı yadtı yaruttı seni
Okıçı ol erdi bayattın saŋa
sen ötrü köni yolka kirdiŋ toŋa
Atasın anasın yuluğ kıldı ol
tilek ümmet erdi ayu berdi yol
Künün yemedi kör tünün yatmadı
seni koldı rabda adın kolmadı
Seni koldı tün kün bu emgek bile
anı ög sen emdi sevinçin tile
Kamuğ kadğusı erdi ümmet üçün
kutulmak tiler erdi râhat üçün
Atada anada bağırsak bolup
tiler erdi tutçı bayattın kolup
Bayat rahmeti erdi halkı öze
kılınçı silig erdi kılkı tüze
Tüzün erdi alçak kılınçı silig
uvutluğ bağırsak akı keŋ elig
Yağız yer yaşıl kökte erdi küsüş
aŋar berdi teŋri ağırlık üküş
Başı erdi öŋdün kamuğ başçıka
kedin boldı tamğa kamuğ savçıka
Köŋül badım emdi anıŋ yolıŋa
sevip sözi tuttum bütüp kavlıŋa
İlâhi küdezgil meniŋ köŋlümi
sevüg savçı birle kopur kopğumı
Kıyâmette körkit tolun teg yüzin
elig tuttaçı kıl ilâhi özin

× مندرجۂ بالا ابیات بحرِ مُتقارِب میں اور قدیم قاراخانی تُرکی میں ہیں۔
× «ڭ» کا تلفظ «نگ» ہے۔

Advertisements

"زبانِ فارسی سیکھو” – بوسنیائی شاعر سربرنیچا نائبی افندی کی نصیحت

عُثمانی دور میں بوسنیا کے پائتخت سرائے بوسنا (سرائیوو) سے نکلنے والے تُرکی جریدے ‘وطن’ میں رُومی تقویم کے مطابق ۱۶ کانونِ اول (دسمبر)، ۱۸۸۷ء کو اِک مقامی شاعر «سْرَبْرَنیچا نائبی افندی» کی ایک بیس بَیتی تُرکی مثنوی «نصیحت‌نامه» شائع ہوئی تھی جس میں اُنہوں نے علم کی اہمیت میں، اور طلَبۂ علوم کو نصیحتیں کرنے کے لیے چند ابیات حَیطهٔ تحریر کے سُپُرد کی تھیں۔ اُس مثنوی میں ایک جا اُنہوں نے طلَبہ کو زبانِ شیرینِ فارسی سیکھنے پر بھی راغب کرنے کی کوشش کی ہے:
"هُنردیر فنِّ شعری ایله تحصیل
اۏنونلا زیبِ نفْسین ائیله تکمیل
زبانِ فارسی‌ده وار ظرافت
اۏنو تحصیلینه بذْل ائیله همّت
اۏنونلا نظم اۏلونموش چۏق لطائف
اۏنو بیلن اۏلور صاحب‌معارف”
(سْرَبْرَنیچا نائبی افندی)
فنِّ شاعری کے ساتھ تحصیلِ [علم] ہُنر ہے۔۔۔ اُس کے ذریعے اپنے نفْس و شخصیت کی آرائش کی تکمیل کرو۔۔۔ زبانِ فارسی میں [بِسیار] ظرافتیں وَ نزاکتیں ہیں۔۔۔ اُس کو سیکھنے کے لیے کوششیں صَرف کرو۔۔۔ اُس [زبان] کے ذریعے بِسیار لطائف منظوم ہوئے ہیں۔۔۔ اُس [زبان] کو جاننے والا شخص صاحبِ معارف ہو جاتا ہے۔

Hünerdir fenn-i şi’rî ile tahsîl
Onunla zîb[-i] nefsin eyle tekmîl
Zebân-ı Fâriside var zerâfet
Onu tahsîline bezl eyle himmet
Onunla nazm olunmuş çok letâif
Onu bilen olur sâhib-ma’arif
(Srebreniça Nâibi Efendi)

× شاعر کا تعلق دیارِ بوسنیا کے شہر ‘سْرَبْرَنیچا/سْرَبْرَنیتْسا’ سے تھا، جیسا کہ اُن کے لقب ‘سْرَبْرَنیچا نائبی’ (نائبِ سْرَبْرَنیچا) سے معلوم ہوتا ہے، اور یہ وہی شہر ہے جو بوسنیائی جنگ کے دوران بوسنیائی مسلمانوں کے اجتماعی قتلِ عام کی وجہ سے کُل دُنیا میں مشہور ہے۔


فی مدح النبی صلی الله علیه وسلم – عزیز محمود هُدایی

(فی مدح النبی صلی الله علیه وسلم)
صلات ایله سلام اۏلسون رسوله
که اۏل‌دور ره‌نما اۏلان بو یۏلا
محمّد مُقتدایِ انبیادېر
محمّد ره‌نمایِ اولیادېر
محمّد سروَرِ جمعِ رُسُل‌دۆر
محمّد هادیِ خیرِ سُبُل‌دۆر
قامودان گرچه حق خۏشنود اۏلوب‌دور
مقام امّا اۏنا محمود اۏلوب‌دور
بویورموش‌دور آنېن شانېندا مولا
فَكَانَ قَابَ قَوۡسَيۡنِ اَوۡ اَدۡنٰى‌
شو ذاتېن که اۏلا مدّاحې رحمان
نه وجْهیله آنې مدْح ایده انسان
قُدومو عالَمینه اۏلدو رحمت
آنېنلا بیتدی بُنیانِ نُبُوّت
سلام آلینه اصحابېنا هر آن
قرین اۏلا داخی رِضوانِ رحمان
(عزیز محمود هُدایی)

ترجمہ:
حضرتِ رسول پر صلات و سلام ہو، کہ وہ اِس راہ کی جانب [ہمارے] رہنما ہیں۔
حضرتِ محمد انبیاء کے پیشوا ہیں۔۔۔ حضرتِ محمد اولیاء کے رہنما ہیں۔
حضرتِ محمد تمام رسولوں کے سروَر ہیں۔۔۔ حضرتِ محمد بہترین راہوں کی جانب ہادی ہیں۔
اگرچہ حق تعالیٰ تمام [انبیاء] سے خوشنود ہوا ہے، لیکن مقام حضرتِ محمّد کا محمود ہوا ہے۔ (یعنی خدا نے فقط حضرتِ محمد کو مقامِ محمود عطا کیا ہے۔)
مولا تعالیٰ نے اُن کی شان میں فرمایا ہے: "فَكَانَ قَابَ قَوۡسَيۡنِ اَوۡ اَدۡنٰى‌” (یہاں تک کہ دو کمانوں کے برابر یا اس سے کچھ کم فاصلہ رہ گیا)۔ (سورۂ نجم، آیت ۹)
جس ذات کا مدّاح [خدائے] رحمان [خود] ہو، اُس کی مدح [کوئی] انسان کس طرح کرے؟
اُن کی آمد عالَمین کے لیے رحمت بنی، [اور] اُس کے ذریعے نُبُوّت کی بُنیاد اختتام پذیر ہو گئی۔
اُن کی آل و اصحاب پر ہر لمحہ سلام ہو!۔۔۔ نیز، [خدائے] رحمان کی خوشنودی اُن سے [قریب] ہو!

(FÎ MEDHİ’N NEBÎ SALLALLÂHU ‘ALEYHİ VE SELLEM)
Salât ile selâm olsun resûle
Ki oldur rehnümâ olan bu yola
Muhammed muktedây-ı enbiyâdır
Muhammed rehnümây-ı evliyâdır
Muhammed server-i cem‘-i rusuldür
Muhammed hâdi-i hayr-ı sübüldür
Kamudan gerçi Hak hoşnûd olubdur
Makâm ammâ ana mahmûd olubdur
Buyurmuşdur anın şânında mevlâ
Fe kâne kâbe kavseyni ev ednâ
Şu zâtın ki ola meddâhı Rahmân
Ne vechile anı medh ide insân
Kudûmu ‘âlemîne oldu rahmet
Anınla bitdi bünyân-ı nübüvvet
Selâm âline ashâbına her ân
Karîn ola dahi rıdvân-ı Rahmân
(Azîz Mahmûd Hüdâyî)

مأخوذ از: مثنویِ نجات‌الغریق


جواں سالہ پِسر کی وفات پر مرثیہ – فردوسی طوسی

مرا سال بِگْذشت بر شست و پنج
نه نیکو بُوَد گر بِیازم به گنج
مگر بهره برگیرم از پندِ خویش
براندیشم از مرگِ فرزندِ خویش
مرا بود نوبت بِرفت آن جوان
ز دردش منم چون تنی بی‌روان
شِتابم همی تا مگر یابمش
چو یابم به پیغاره بِشْتابمش
که نوبت مرا بود بی کامِ من
چرا رفتی و بُردی آرامِ من
ز بدها تو بودی مرا دست‌گیر
چرا چاره جُستی ز همراهِ پیر
مگر هم‌رهانِ جوان یافتی
که از پیشِ من تیز بِشْتافتی
جوان را چو شد سال بر سی و هفت
نه بر آرزو یافت گیتی، بِرفت
همی بود همواره با من دُرُشت
برآشُفت و یک‌باره بِنْمود پُشت
بِرفت و غم و رنجش ایدر بِمانْد
دل و دیدهٔ من به خون درنِشانْد
کُنون او سویِ روشنایی رسید
پدر را همی جای خواهد گُزید
بر آمد چُنین روزگاری دراز
کزان هم‌رهان کس نگشتند باز
همانا مرا چشم دارد همی
ز دیر آمدن خشم دارد همی
وُرا سال سی بُد، مرا شست و هفت
نپُرسید ازین پیر و تنها بِرفت
وی اندر شِتاب و من اندر دِرنگ
ز کردارها تا چه آید به چنگ
روانِ تو دارنده روشن کُناد
خِرد پیشِ جانِ تو جوشن کُناد
همی خواهم از دادگر کردگار
ز روزی‌دِهِ آشکار و نِهان
که یکسر بِبخشد گناهِ وُرا
درخشان کند تیره‌گاهِ وُرا
(فردوسی طوسی)

ترجمہ:
میری عمر پینسٹھ سال سے زیادہ ہو گئی ہے۔۔۔ اب مناسب نہیں ہے کہ میں خزانے (یعنی دنیاوی چیزوں) کی جانب دست بڑھاؤں۔۔۔ مجھے اپنی نصیحت سے بہرہ اُٹھانا چاہیے اور اپنے فرزند کی موت کے بارے میں تفکُّر کرنا چاہیے۔۔۔ باری میری تھی، لیکن چلا وہ جوان گیا۔۔۔ اُس کے درد سے میں تنِ بے جاں کی طرح [ہو گیا] ہوں۔۔۔۔ میں جلدی کر رہا ہوں تاکہ شاید اُس کو پا سکوں، اور جب پا جاؤں تو فوراً اُس کو سرزنش کروں۔۔۔ کہ باری تو میری تھی، میری خواہش کے بغیر تم کیسے چلے گئے اور میرا آرام لے گئے؟۔۔۔ بدیوں اور اِبتلاؤں میں تم میرے دست گیر و مُعاون تھے، تم نے اِس پِیر (بوڑھے) کی ہمراہی سے کیوں دوری اختیار کی؟۔۔۔ کہیں تمہیں جوان رُفَقاء تو نہیں مل گئے تھے؟ کہ یوں تیزی سے میرے حضور سے چلے گئے؟۔۔۔ جب جوان پینتیس سال کا ہوا تو اُس نے جہان کو اپنی آرزو کے موافق نہ پایا، اور [تَرک کر کے] چلا گیا۔۔۔ وہ ہمیشہ میرے ساتھ تُند خُو و دُرُشت تھا۔۔۔ یکایک اُس نے غضب ناک ہو کر مجھ کو پُشت دکھا دی۔۔۔ وہ چلا گیا اور یہاں غم و رنج رہ گیا۔۔۔ اور اُس نے میرے دل و دیدہ کو خُون میں آغُشتہ کر دیا۔۔۔ اب وہ نُور تک پہنچ گیا ہے۔۔۔ [جہاں] وہ اپنے پدر کے لیے مسکن مُنتخَب کرے گا۔۔۔ اتنا طویل زمانہ گُذر گیا، لیکن اُن ہمراہوں میں سے کوئی واپَس نہ آیا۔۔ یقیناً وہ وہاں میرا مُنتظِر ہے۔۔۔ اور میرے دیر سے آنے پر خشمگین ہے۔۔۔ وہ تیس (سینتیس) سال کا تھا، جبکہ میں پینسٹھ سال کا ہوں۔۔۔ اُس نے اِس پِیر کو نہیں پوچھا، اور تنہا چلا گیا۔۔۔ وہ تیزی میں [ہے]، اور میں دیری میں [ہوں]۔۔۔ [اب دیکھتے ہیں کہ ہمیں اپنے] افعال کا کیا نتیجہ مِلتا ہے۔۔۔ خدا تعالیٰ تمہاری روح کو روشن کرے!۔۔۔ اور عقل کو تمہاری جان کے لیے سِپر بنائے! میں خدائے عادل، اور آشکارا و نِہاں روزی دینے والی ذات سے خواہش کرتا ہوں کہ وہ اُس کے تمام گُناہوں کو مُعاف کر دے!۔۔۔ اور اُس کے تاریک مقام (قبر) کو درخشاں کرے!

× فردوسی طوسی نے یہ مرثیہ اپنے جواں سالہ پِسر کی وفات پر کہا تھا، اور یہ مرثیہ شاہنامہ میں داستانِ خسرو پرویز کے ضِمن میں مشمول ہے۔ میں نے اِس مرثیے کا وہ متن مُنتَخب کیا ہے جو جلال خالقی مُطلق کی جانب سے تصحیح شدہ شاہنامہ میں ثبت ہے۔


جمع کردن زلیخا خاتونان مصر را و یوسف علیه السلام به ایشان نمودن – یہودی فارسی شاعر ‘مولانا شاهین شیرازی’

فارسی گو سزمینوں میں رہنے والے یہودیوں نے بھی زبانِ فارسی میں تألیفات و منظومات چھوڑی ہیں، لیکن چونکہ وہ عِبرانی رسم الخط کا استعمال کرتے تھے، اِس لیے اُن کی تحریریں وسیع مسلمان ادبی مُعاشرے کی اطلاع و رسائی سے دور رہیں تھیں، تا آنکہ بیسویں صدی میں اُن کے تعارف و تحقیق، اور اُن کی فارسی رسم الخط میں منتقلی کا کام آغاز ہوا تھا۔ قرنِ چہاردہُم عیسوی کے ایک یہودی فارسی شاعر ‘مولانا شاهینِ شیرازی’ نے ‘موسیٰ‌نامه’ کے نام سے، اور مثنوی کی شکل میں عہدنامۂ قدیم کی ابتدائی پانچ کتابوں – جن کو تورات کہا جاتا ہے – کا منظوم فارسی ترجمہ کیا تھا۔ کتابِ اول کے منظوم ترجمے ‘آفرینش‌نامه’ (سالِ اتمامِ تألیف: ۱۳۵۹ء) کا ایک باب ذیل میں ترجمے کے ساتھ پیش ہے:

(جمع کردنِ زُلیخا خاتونانِ مصر را و یوسف علیه السلام به ایشان نمودن)
زُلیخا کرد روزی میزبانی
نهاد او تازه‌بزمِ خُسرَوانی
زنانِ مهترانِ شهر را خوانْد
به خلوت‌خانه‌شان او شاد بِنْشانْد
زمانی عشرت و شادی بِکردند
فراوان نعمتِ شاهانه خوردند
به وصلِ هم زمانی شاد بودند
عَروسان جُمله بی‌داماد بودند
زُلیخاشان نوازش‌هایِ بسیار
بِکردی هر زمان زان لفظ دُربار
نِهاد اندر زمان آن شوخِ پُرفن
تُرُنج و کارْد اندر دستِ هر زن
بِگُفتا کارْد بردارید از جا
بُرید هر یک تُرُنجِ خویش تنها
زُلیخا داشت یوسف را نُهُفته
درونِ خانه همچون گُل شُکُفته
زنی ناگه درِ آن خانه بِگْشاد
بِشُد یوسف روان چون سروِ آزاد
شُعاعِ حُسنِ او در مجلس اُفتاد
ز بزمِ دل‌بران برخاست فریاد
ز شوقِ حُسنِ او مدهوش گشتند
همه سرگشته و بی‌هوش گشتند
نشانِ زندگی در خود ندیدند
تُرُنج و دست را در هم بُریدند
چُنان مُستغرقِ آن حور گشتند
که از هستیِ خود اندر گُذشتند
ز زخمِ آن تُرُنج و دستِ پُرخون
بِگشت آن دل‌بران را جامه پُرخون
بِگُفتند حاشَ لله این بشر نیست
جمالش جُز فُروغِ ماه و خْوَر نیست
فرشته‌ست او و یا حورِ بهشت است
نِهالش را بنی‌آدم نکِشته‌ست
(مولانا شاهین شیرازی)

(زُلیخا کا خاتونانِ مصر کو جمع کرنا اور اُن کو یوسف علیہ السلام دِکھانا)
زُلیخا نے ایک روز میزبانی مُنعقِد کی اور ایک تازہ شاہانہ بزم برپا کی۔۔۔ اُس نے شہر کی مُعزَّز عورتوں کو بُلایا اور اُنہیں خلوت خانے میں شاداں بِٹھایا۔۔۔ اُن [عورتوں] نے کئی لمحوں تک عِشرت و شادمانی کی، اور کئی شاہانہ نعمتیں کھائیں۔۔۔۔ وہ کئی لمحوں تک ایک دوسرے کے وصل سے شاد ہوتی رہیں۔۔۔ وہ سب عَروسیں (دُلہنیں) اپنے شوہروں کے بغیر تھیں۔۔۔ زُلیخا ہر لمحہ اپنے الفاظِ دُر پاش کے ساتھ اُن پر بِسیار نوازشیں کرتی تھی۔۔۔ یکایک اُس شوخِ پُرفن نے ہر عورت کے دست میں تُرُنج اور چاقو دے دیا۔۔۔ اور کہا کہ چاقو کو جگہ سے اُٹھائیے اور آپ تمام اپنے تُرُنج کو تنِ تنہا کاٹیے۔۔۔۔ زُلیخا نے یوسف کو گُلِ شُگُفتہ کی طرح درُونِ خانہ پِنہاں رکھا ہوا تھا۔۔۔ ناگہاں ایک عورت نے اُس خانے (گھر) کا در کھول دیا، اور یوسف سرْوِ آزاد کی طرح چلے آئے۔۔۔ [جوں ہی] اُن کے حُسن کی شُعاع مجلس میں گِری، دلبروں کی بزم سے فریاد بلند ہو گئی۔۔۔ وہ اُس کے حُسن کے اشتیاق سے مدہوش ہو گئیں۔۔۔ تمام کی تمام سرگشتہ و بے ہوش ہو گئیں۔۔۔ اُنہوں نے اپنے اندر زندگی کا نشان نہ پایا۔۔۔ اور تُرُنج و دست دونوں کو کاٹ ڈالا۔۔۔ وہ اُس حور میں اِس طرح مُستَغرَق ہو گئیں، کہ وہ اپنی ہستی کو فراموش و تَرک کر گئیں۔۔۔ اُس تُرُنج اور دستِ پُرخون کے زخم سے اُن دلبروں کا جامہ پُرخون ہو گیا۔۔۔ اُنہوں نے کہا: خدا کی پناہ! یہ بشر نہیں ہے۔۔۔ اُس کا جمال ماہ و خورشید کا نُور ہے، اِس کے سوا دیگر کچھ نہیں!۔۔۔ وہ یا تو فرشتہ ہے یا پھر حورِ بہشت ہے۔۔۔ اُس کے نِہال کو بنی آدم نے نہیں بویا ہے۔
× تُرُنْج = ایک میوے کا نام

——————-
"ز زخمِ آن تُرُنج و دستِ پُرخون
بِگشت آن دل‌بران را جامه پُرخون
اِس بیت کا قافیہ عیب دار ہے۔ ہو سکتا ہے کہ کاتب یا ناقل کی جانب سے کتابت کی غلطی ہو، کیونکہ شاعر قادرالکلام معلوم ہو رہے ہیں، اور قادرالکلام شاعروں سے ایسی غلطی بعید ہے۔

× ‘مولانا شاہین’ کا شیرازی ہونا حتمی نہیں ہے، لیکن عموماً اُن کا مَوطِن شہرِ شیراز ہی بتایا جاتا ہے۔


در شناختِ بی‌جسمیِ حضرتِ عِزّت – یہودی فارسی شاعر ‘عمرانی’

یہودی فارسی شاعر ‘عِمرانی’ (وفات: تقریباً ۱۵۳۶ء) نے ‘واجبات و ارکانِ سیزده‌گانهٔ ایمانِ اسرائیل’ کے نام سے ایک مثنوی لکھی تھی۔ اُس مثنوی کا بابِ سوم ذیل میں ترجمے کے ساتھ پیش ہے، جس میں خدا تعالیٰ کے بے جسم ہونے کے یہودی عقیدے کو بیان کیا گیا ہے:

(بابِ سومِ ارکانِ سیزده‌گانهٔ یهودیت در شناختِ بی‌جسمیِ حضرتِ عِزّت)
واجب است جُمله اهلِ ایمان را
هر که او هست پیروِ تورا
که بِیارد به این سُخن ایمان
هر که او هست بندهٔ یزدان
که ندارد خدایِ بی‌همتا
جسَد و جسم و چشم و دست و پا
بری از نُطق و صورت و گوش است
بی قد و قامت و بر و دوش است
او مُبرّاست از همه صورت
بِشْنو این چند بیت از حِکمت
عقل در جستجویِ او حیران
فکر و اندیشه مانده سرگردان
جملهٔ صالحان و بارایان
با همه کاملان و دانایان
مانده در کارگاهِ او حیران
کس نکرده رهی به این ایوان
فلک و کَوکب و بُروج و سِپِهر
ملَک و جِنّ و اِنس و ماه و مِهر
همه تسبیحِ شُکرِ او گویند
هر کُجااند دوست می‌جویند
او همه جا و هیچ جایی نه
ذاتِ او را چه و چرایی، نه
(عمرانی)

ترجمہ:
تمام اہلِ ایمان پر، اور جو بھی شخص تورات کا پَیرو اور یزداں کا بندہ ہے، اُس پر واجب ہے کہ وہ اِس قول پر ایمان لے آئے کہ خدائے بے ہمتا جَسد و جسم و چشم و دست و پا نہیں رکھتا۔۔۔ وہ نُطق و صورت و گوش سے برکنار ہے، اور وہ قد و قامت و سینہ و شانہ نہیں رکھتا۔۔۔ وہ تمام صورتوں وَ شکلوں سے مُبرّا ہے۔۔۔ حِکمت پر مبنی یہ چند ابیات سُنو۔۔۔۔ عقل اُس (خدا) کی جستجو میں حیران ہے۔۔۔ اور فکر و اندیشہ [اُس کی جستجو میں] سرگرداں رہ گئے ہیں۔۔۔ تمام صالحان و دانشمندان، اور تمام کاملان و دانایان، اُس کی کارگاہ میں حیران رہے گئے ہیں (یا اُس کی کارگاہِ صنعت کے بارے میں حیران رہے گئے ہیں)۔۔۔ اور کسی نے [بھی] اِس ایوان تک راہ نہیں پائی ہے۔۔۔ فلک و ستارہ و بُروج و آسمان، فرشتہ و جنّ و اِنس و ماہ و خورشید سب اُس کے شُکر کی تسبیح کہتے ہیں۔۔۔ اور وہ جس جگہ بھی ہیں، دوست تلاش کرتے ہیں (یا خدا کو دوست کے طور پر تلاش کرتے ہیں)۔۔۔ وہ ہر جا ہے، اور کسی بھی جا نہیں ہے۔۔۔ اُس کی ذات چون و چرا سے خالی ہے۔۔۔


سورۂ اخلاص کے پانچ منظوم فارسی ترجمے

سرآغازِ گفتار نامِ خداست
که رحمت‌گر و مهربان خلق راست
بگو او خدایی‌ست یکتا و بس
که هرگز ندارد نیازی به کس
نه زاد و نه زاییده شد آن اِلٰه
نه دارد شریکی خدا هیچ‌گاه
(امید مجد)

ترجمہ:
گفتار کی ابتدا و سرآغاز خدا کا نام ہے
جو خلق پر رحمت گر و مہربان ہے
کہو کہ وہ خدا یکتا ہے اور بس
کہ جسے ہرگز کسی کی نیاز نہیں ہے
نہ اُس اِلٰہ نے متوّلد کیا اور نہ وہ متولّد ہوا
نہ خدا کا ہرگز کوئی شریک ہے

———————-

به نامِ خداوندِ هر دو جهان
که بخشنده است و بسی مهربان
بگو (ای پیمبر به مخلوقِ ما)
بُوَد او به عالم یگانه خدا
خدایی که او را نباشد نیاز
(ولی دستِ هر کس به سویش دراز!)
نزاده‌ست و زاییده هرگز نشد
ورا هم شبیهی و همتا نبُد
(سید رِضا ابوالمعالی کرمانشاهی)

ترجمہ:
خداوندِ ہر دو جہاں کے نام سے
جو رحیم ہے اور بسے مہربان ہے
[اے پیغمبر! ہماری مخلوق سے] کہو
کہ وہ عالَم میں یگانہ خدا ہے
وہ خدا کہ جسے نیاز نہیں ہے
(لیکن ہر کسی کا دست اُس کی جانب دراز ہے!)
نہ اُس نے متولّد کیا ہے اور نہ وہ ہرگز متوّلد ہوا
اور اُس کا کوئی شبیہ و ہمتا بھی نہیں رہا

———————-

ابتدایِ سخن به نامِ خدا
مِهر‌وَرزنده و عطابخشا
گو خدایِ جهان بُوَد یکتا
و ندارد به کس نیاز خدا
او نه کس زاید و نه کس او را
و کسی نیست بهرِ او همتا
(شهاب تشکّری آرانی)

ترجمہ:
سُخن کی ابتدا خدا کے نام سے
[جو] مہربان اور عطا بخشنے والا [ہے]
کہو کہ خدائے جہاں یکتا ہے
اور خدا کو کسی سے نیاز نہیں ہے
وہ نہ کسی کو متولّد کرتا ہے اور نہ کوئی اُس کو
اور کوئی اُس کا ہمتا نہیں ہے

———————-

مى‌کنم گفتار را آغاز با نامِ خدا
آنکه بس بخشنده و هم مهربان باشد به ما
اى پیمبر گو بُوَد یکتا خداوندِ جهان
بى‌نیازِ مُطلق است آن ذاتِ یکتا بى‌گمان
که نه زاده و نه زاییده شده او هیچ‌گاه
و ندارد کُفْو و همتا هرگز آن یکتا اِلٰه
(صدّیقه روحانی ‘وفا’)

ترجمہ:
میں گفتار کا آغاز خدا کے نام سے کرتی ہوں
جو ہم پر بِسیار رحیم و مہربان ہے
اے پیغمبر! کہو کہ خداوندِ جہاں یکتا ہے
بے شک وہ ذاتِ یکتا بے نیازِ مُطلق ہے
کہ نہ اُس کی ہرگز کوئی اولاد ہے اور نہ وہ ہرگز متولّد ہوا ہے
اور اُس خدائے یکتا کا ہرگز کوئی مثل و ہمتا نہیں ہے

———————-

بگو: او هست اللهِ یگانه
خداوندی که او را حاجتش نه
نه‌اش زاده، نه زاد از فردِ دیگر
نه اور را هیچ کس همتا [و همسر]
(کرم خدا امینیان)

ترجمہ:
کہو: وہ خدائے یگانہ ہے
وہ خداوند کہ جسے حاجت نہیں ہے
نہ اُس کا کوئی زادہ ہے، نہ وہ کسی فردِ دیگر سے متولّد ہوا ہے
نہ کوئی اُس کا ہمتا و ہمسر ہے

× ‘همسر’ سے مراد ‘برابر و مساوی’ بھی ہو سکتا ہے، اور ‘زن و شوهر’ بھی۔