یاردین آزار کۉنگلوم ایچره بې‌حد باردور – ظهیرالدین محمد بابر

یاردین آزار کۉنگلوم ایچره بې‌حد باردور
ای خوش اول کۉنگول، انگه نې یار و نې آزاردور
یۉق‌تورور گر یار – یۉق‌تور طاقت و صبر و شِکیب
یار اگر باردور، جفا و جور و محنت یاردور
نیچه کۉرستسم وفا و مِهر، اېتر جور و جفا
نېچه کیم مېن زارمېن، مېن‌دین اول آی بیزاردور
کۉزی هجری‌ده، یوزی یادی‌ده، سۉزی شوقی‌ده
خاطریم افگار و جسمیم زار و کۉز خون‌باردور
سین‌ده، بابُر، یۉق گنه، یارنینگ عِتابی کم اېمس
جُرم‌سیز دائم عِتاب ایلر – عجب دل‌داردور
(ظهیرالدین محمد بابر)

یار کے باعث میرے دل کے اندر بے حد آزار ہے۔۔۔ اے خوشا وہ دل کہ جو نہ یار اور نہ آزار رکھتا ہے۔
اگر یار موجود نہ ہو تو طاقت و صبر و شِکیب نہیں ہوتا۔۔ [لیکن] اگر یار موجود ہو تو جفا و جور و رنج یار و رفیق ہوتے ہیں (یعنی ساتھ رہتے ہیں)۔
میں [خواہ] جس قدر [بھی] وفا و محبّت کروں، وہ جور و جفا کرتا ہے۔۔۔ میں جس قدر زار ہوں، [اُسی قدر] وہ ماہ مجھ سے بیزار ہے۔
اُس کی چشم کے ہجر میں، اُس کے چہرے کی یاد میں، [اور] اُس کے سُخن کے اشتیاق میں میری خاطِر افگار، میرا جسم زار اور [میری] چشم خوں بار ہے۔
اے بابر! تم میں کوئی گناہ نہیں ہے، [اگر] یار کا عِتاب کم نہیں ہے۔۔۔ وہ جُرم کے بغیر [ہی] دائماً عِتاب کرتا ہے ۔۔ عجب دلدار ہے!

Yordin ozor ko’nglum ichra behad bordur,
Ey xush ul ko’ngul, anga ne yoru ne ozordur.
Yo’qturur gar yor — yo’qtur toqatu sabru shikeb,
Yor agar bordur, jafoyu javru mehnat yordur.
Necha ko’rsatsam vafoyu mehr, etar javru jafo,
Nechakim men zormen, mendin ul oy bezordur.
Ko’zi hajrida, yuzi yodida, so’zi shavqida,
Xotirim afgoru jismim zoru ko’z xunbordur.
Senda, Bobur, yo’q gunah, yorning itobi kam emas,
Jurmsiz doim itob aylar — ajab dildordur.

Advertisements

امیر خسرو، حافظ، اور جامی کی ستائش میں کہا گیا امیر علی شیر نوائی کا قطعہ

اوچ کیشی‌نینگ سۉزی نشئه و معنی‌سی‌دین اۉز سۉزی‌ده چاشنی اثبات قیلماق و بو معنی‌دین مباهات قیلماق

غزل‌ده اوچ کیشی طوری‌دور اول نوع
کیم آن‌دین یخشی یۉق نظم احتمالی
بیری مُعجز بیان‌لیغ ساحرِ هند
که عشق اهلینی اۉرتر سۉز و حالی
بیری عیسیٰ نفَس‌لیک رندِ شېراز
فنا دَیری‌ده مست و لااُبالی
بیری قُدسی اثرلیک عارفِ جام
که جامِ جم‌دورور سینغان سفالی
نوایی نظمی‌غه باقسانگ، اېمس‌تور
بو اوچ‌نینگ حالی‌دین هر بَیتی خالی
همانا کۉزگودور کیم عکس سالمیش
انگه اوچ شۉخ مه‌وش‌نینگ جمالی
(امیر علی‌شیر نوایی)

تین اشخاص کے سُخن کے نشہ و معنی سے اپنے سُخن میں چاشنی [ہونے] کا اثبات کرنا اور اِس موضوع پر فخر کرنا

غزل میں تین اشخاص کی طرز اُس طرح کی ہے کہ اُن سے بہتر نظم و شاعری کا احتمال نہیں ہے۔۔۔ اُن میں سے ایک مُعجز بیاں ساحرِ ہند [امیر خسرو] ہے کہ جس کا سوز و حال اہلِ عشق کو سوزاں کرتا ہے۔۔۔ اُن میں سے ایک عیسیٰ نفَس رندِ شیراز [حافظ] ہے، جو دَیرِ فنا میں مست و لااُبالی ہے۔۔۔ اُن میں سے ایک قُدسی نشاں عارفِ جام [جامی] ہے، کہ جس کا شکستہ جامِ سفال [بھی] جامِ جم ہے۔۔۔ اگر تم نوائی کی نظم کی جانب نگاہ کرو [تو تمہیں معلوم ہو گا کہ] اُس کی کوئی بھی بیت اِن تینوں کے حال و کیفیّت سے خالی نہیں ہے۔۔۔ یقیناً وہ [ایک] آئینے [کی مانند] ہے کہ جس پر [اُن] تین ماہ وَشانِ شوخ کے جمال نے عکس ڈالا ہے۔

UCH KISHINING SO’ZI NASH’A VA MA’NISIDIN O’Z SO’ZIDA CHOSHNI ISBOT QILMOQ VA BU MA’NIDIN MUBOHOT QILMOQ

G’azalda uch kishi tavridur ul nav’
Kim, andin yaxshi yo’q nazm ehtimoli.
Biri mu’jiz bayonlig’ sohiri hind
Ki, ishq ahlini o’rtar so’zu holi.
Biri Iso nafaslik rindi Sheroz,
Fano dayrida mastu louboli.
Biri qudsi asarlik orifi Jom
Ki, jomi Jamdurur sing’an safoli.
Navoiy nazmig’a boqsang, emastur,
Bu uchning holidin har bayti xoli.
Hamono ko’zgudurkim, aks solmish,
Anga uch sho’x mahvashning jamoli.


اگرچه سېن‌سیزین صبر ایله‌مک، ای یار، مشکل‌دور – ظهیرالدین محمد بابر

اگرچه سېن‌سیزین صبر ایله‌مک، ای یار، مشکل‌دور
سېنینگ بیرله چیقیشماق‌لیک داغی بسیار مشکل‌دور
مزاجینگ نازک و سېن تُند و مېن بیر بې‌ادب تېلبه
سنگه حالیم‌نی قیلماق، ای پری، اظهار مشکل‌دور
نې آسیغ ناله و فریاد خواب‌آلود بختیم‌دین
بو اون‌لر بیرله چون قیلماق انی بېدار مشکل‌دور
منگه آسان‌دورور بۉلسه اگر یوز مینگ تومن دشمن
ولې بۉلماق جهان‌ده، ای کۉنگول، بې‌یار مشکل‌دور
وصالین کیم تیلرسېن، نازینی خوش تارتغیل، بابُر
که عالَم باغی‌ده تاپماق گُلِ بې‌خار مشکل‌دور
(ظهیرالدین محمد بابر)

اے یار! اگرچہ تمہارے بغیر صبر کرنا مشکل ہے، لیکن تمہارے ساتھ زیست اور تعایُش بھی بِسیار مشکل ہے۔
اے پری! تمہارا مزاج نازک ہے اور تم تُند خُو ہو، [جبکہ] میں ایک بے ادب دیوانہ ہوں؛ [لہٰذا ایسی صورتِ حال میں میرے لیے] تم سے اپنی کیفیت کا اظہار کرنا مشکل ہے۔
اپنے خواب آلود بخت کے باعث نالہ و فریاد سے کیا فائدہ؟۔۔۔ [کہ] اِن صداؤں سے اُس کو بیدار کرنا مشکل ہے۔
اے دل! اگر میرے مقابل کروڑوں دشمن ہوں، [تب بھی] میرے لیے آسان ہے، لیکن اِس جہان میں کسی یار کے بغیر ہونا مشکل ہے۔
اے بابر، [اگر] تم کو اُس کے وصل کی آرزو ہے تو بخوشی و بخوبی اُس کے ناز اٹھاتے رہو، کیونکہ باغِ دنیا میں کوئی گُلِ بے خار پانا مشکل ہے۔

Agarchi sensizin sabr aylamak, ey yor, mushkildur
Sening birla chiqishmoqlik dog’i bisyor mushkildur
Mizojing noziku sen tundu, men bir beadab telba
Sanga holimni qilmoq, ey pari, izhor mushkildur
Ne osig’ nolayu faryod xobolud baxtimdin
Bu unlar birla chun qilmoq ani bedor mushkildur
Manga osondurur bo’lsa agar yuz ming tuman dushman
Vale bo’lmoq jahonda, ey ko’ngul, beyor mushkildur
Visolinkim tilarsen, nozini xush tortg’il, Bobur
Ki, olam bog’ida topmoq guli bexor mushkildur


شکر لله عیش یوزلندی و محنت قالمه‌دی – ظهیرالدین محمد بابر

شکر لله عیش یوزلندی و محنت قالمه‌دی
یېتتی ایّامِ وصال و شامِ فرقت قالمه‌دی
یوزلنیب امن و فراغت، غصّه و غم بۉلدی دفع
عیش و عشرت کېلدی و رنج و مشقّت قالمه‌دی
محنتِ هجران که آندین چاک چاک اېردی کۉنگول
بۉلدی راحتقه مُبدّل، اول جراحت قالمه‌دی
مُرتفِع بۉلغاندا هجران، کېل، توقُّف قیلمه کیم
انتظارینگنی چېکرگه اۉزگه طاقت قالمه‌دی
وصلینگه یېتکوردی دوران عاقبت بابرنی، شکر
اېمدی دوراندین منگه اصلا شکایت قالمه‌دی
(ظهیرالدین محمد بابر)

اللہ کا شکر کہ شادمانی نے [اِدھر] رُخ کیا، اور رنج نہ رہا۔۔۔ ایّامِ وصال گذر گئے اور شامِ فرقت نہ رہی۔
امن و فراغت نے رُخ کیا اور غم و اندوہ دور ہو گیا۔۔۔ عیش و عشرت آ گئی اور رنج و مشقّت نہ رہی۔
رنجِ فراق، کہ جس سے دل چاک چاک تھا، راحت میں تبدیل ہو گیا، [اور] وہ زخم [اب] نہ رہا۔
جب کہ ہجراں برطرف ہو گیا ہے تو آ جاؤ، توقُّف مت کرو۔۔۔ تمہارا انتظار کھینچنے کی [اب] مزید طاقت نہ رہی۔
شکر! کہ زمانے نے بابر کو عاقبتِ کار تمہارے وصل تک پہنچا دیا۔۔۔ حالا مجھے زمانے سے ہرگز شکایت نہ رہی۔

Shukrilillah, aysh yuzlandi-yu, mehnat qolmadi,
Yetti ayyomi visolu shomi furqat qolmadi.
Yuzlanib amnu farog’at, g’ussayu g’am bo’ldi daf’,
Ayshu ishrat keldi-yu, ranju mashaqqat qolmadi.
Mehnati hijronki, ondin chok-chok erdi ko’ngul,
Bo’ldi rohatqa mubaddal, ul jarohat qolmadi.
Murtafe’ bo’lg’onda hijron, kel, tavaqquf qilmakim,
Intizoringni chekarga o’zga toqat qolmadi.
Vaslinga yetkurdi davron oqibat Boburni, shukr,
Emdi davrondin manga aslo shikoyat qolmadi.


یاردین ایرو کۉنگول مُلکې دورور سلطانی یۉق – امیر علی‌شیر نوایی

یاردین ایرو کۉنگول مُلکې دورور سلطانی یۉق
مُلک کیم سلطانی یۉق، جسمې دورور کیم جانی یۉق
جسمدین جانسیز نې حاصل، ای مسلمانلر کیم، اول
بیر قرا توفراغ‌دېک دور کیم، گُل و ریحانی یۉق
بیر قرا توفراغ کیم، یۉقتور گُل و ریحان انگه
اول قرانغو کېچه‌دېک‌دور کیم، مهِ تابانی یۉق
اول قرانغو کېچه کیم یۉقتور مهِ تابان انگه
ظُلمتې دور کیم، انینگ سرچشمهٔ حیوانی یۉق
ظُلمتې کیم، چشمهٔ حیوانی آننینگ بۉلمه‌غای
دوزخې دور کیم، یانیده روضهٔ رضوانی یۉق
دوزخې کیم روضهٔ رضواندین اۉلغه‌ی نااُمید
بیر خُمارې دور که انده مستلیغ امکانی یۉق
ای نوایی، بار انگه مونداق عقوبتلر که، بار
هجردین دردی و لېکن وصلدین درمانی یۉق
(امیر علی‌شیر نوایی)

ترجمہ:
جو دل یار سے جدا ہو، وہ ایک ایسا مُلک ہے جس کا سلطان نہیں ہے؛ جس ملک کا سلطان نہ ہو، وہ ایک ایسا جسم ہے جس میں جان نہیں ہے۔
اے مسلمانو! جسم سے جان کے بغیر کیا حاصل؟ کہ وہ تو ایک ایسی سیاہ خاک کی مانند ہے کہ جس میں گُل و ریحان نہیں ہے۔
جس سیاہ خاک میں گُل و ریحان نہ ہو، وہ اُس تاریک شب کی مانند ہے کہ جس میں ماہِ تاباں نہیں ہے۔
وہ تاریک شب کہ جس میں ماہِ تاباں نہ ہو، ایک ایسی ظُلمت ہے کہ جس میں سرچشمۂ آبِ حیات نہیں ہے۔
وہ ظلمت کہ جس میں چشمۂ آبِ حیات نہ ہو، ایک ایسی دوزخ ہے کہ جس کے پہلو میں روضۂ رضواں نہیں ہے۔
وہ دوزخ جو روضۂ رضواں سے ناامید ہو، ایک ایسا خُمار ہے کہ جس میں مستی کا امکان نہیں ہے۔
اے نوائی! جو شخص دردِ ہجر رکھتا ہو، لیکن وصل کی شکل میں علاج نہ رکھتا ہو، اُسے ایسی ہی عقوبتیں جھیلنی پڑتی ہیں۔
× خُمار = نشہ و مستی زائل ہونے کے بعد لاحق ہونے والی کیفیتِ سر درد و کسالت؛ ہینگ اوور

لاطینی خط میں:
Yordin ayru ko’ngul mulkedurur sultoni yo’q
Mulkkim sultoni yo’q, jismedururkim joni yo’q
Jismdin jonsiz ne hosil, ey musulmonlarkim, ul
Bir qaro tufrog’dekdurkim, gulu rayhoni yo’q
Bir qaro tufrog’kim, yo’qtur gulu rayhon anga
Ul qorong’u kechadekdurkim, mahi toboni yo’q
Ul qorong’u kechakim yo’qtur mahi tobon anga
Zulmatedurkim, aning sarchashmayi hayvoni yo’q
Zulmatekim, chashmayi hayvoni oning bo’lmag’ay
Do’zaxedurkim, yonida ravzayi rizvoni yo’q
Do’zaxekim, ravzayi rizvondin o’lg’ay noumid
Bir xumoredurki, anda mastlig’ imkoni yo’q
Ey Navoiy, bor anga mundoq uqubatlarki, bor
Hajrdin dardi, va lekin vasldin darmoni yo’q

اِس غزل کی قرائت سنیے۔