شکر لله عیش یوزلندی و محنت قالمه‌دی – ظهیرالدین محمد بابر

شکر لله عیش یوزلندی و محنت قالمه‌دی
یېتتی ایّامِ وصال و شامِ فرقت قالمه‌دی
یوزلنیب امن و فراغت، غصّه و غم بۉلدی دفع
عیش و عشرت کېلدی و رنج و مشقّت قالمه‌دی
محنتِ هجران که آندین چاک چاک اېردی کۉنگول
بۉلدی راحتقه مُبدّل، اول جراحت قالمه‌دی
مُرتفِع بۉلغاندا هجران، کېل، توقُّف قیلمه کیم
انتظارینگنی چېکرگه اۉزگه طاقت قالمه‌دی
وصلینگه یېتکوردی دوران عاقبت بابرنی، شکر
اېمدی دوراندین منگه اصلا شکایت قالمه‌دی
(ظهیرالدین محمد بابر)

اللہ کا شکر کہ شادمانی نے [اِدھر] رُخ کیا، اور رنج نہ رہا۔۔۔ ایّامِ وصال گذر گئے اور شامِ فرقت نہ رہی۔
امن و فراغت نے رُخ کیا اور غم و اندوہ دور ہو گیا۔۔۔ عیش و عشرت آ گئی اور رنج و مشقّت نہ رہی۔
رنجِ فراق، کہ جس سے دل چاک چاک تھا، راحت میں تبدیل ہو گیا، [اور] وہ زخم [اب] نہ رہا۔
جب کہ ہجراں برطرف ہو گیا ہے تو آ جاؤ، توقُّف مت کرو۔۔۔ تمہارا انتظار کھینچنے کی [اب] مزید طاقت نہ رہی۔
شکر! کہ زمانے نے بابر کو عاقبتِ کار تمہارے وصل تک پہنچا دیا۔۔۔ حالا مجھے زمانے سے ہرگز شکایت نہ رہی۔

Shukrilillah, aysh yuzlandi-yu, mehnat qolmadi,
Yetti ayyomi visolu shomi furqat qolmadi.
Yuzlanib amnu farog’at, g’ussayu g’am bo’ldi daf’,
Ayshu ishrat keldi-yu, ranju mashaqqat qolmadi.
Mehnati hijronki, ondin chok-chok erdi ko’ngul,
Bo’ldi rohatqa mubaddal, ul jarohat qolmadi.
Murtafe’ bo’lg’onda hijron, kel, tavaqquf qilmakim,
Intizoringni chekarga o’zga toqat qolmadi.
Vaslinga yetkurdi davron oqibat Boburni, shukr,
Emdi davrondin manga aslo shikoyat qolmadi.

Advertisements

یاردین ایرو کۉنگول مُلکې دورور سلطانی یۉق – امیر علی‌شیر نوایی

یاردین ایرو کۉنگول مُلکې دورور سلطانی یۉق
مُلک کیم سلطانی یۉق، جسمې دورور کیم جانی یۉق
جسمدین جانسیز نې حاصل، ای مسلمانلر کیم، اول
بیر قرا توفراغ‌دېک دور کیم، گُل و ریحانی یۉق
بیر قرا توفراغ کیم، یۉقتور گُل و ریحان انگه
اول قرانغو کېچه‌دېک‌دور کیم، مهِ تابانی یۉق
اول قرانغو کېچه کیم یۉقتور مهِ تابان انگه
ظُلمتې دور کیم، انینگ سرچشمهٔ حیوانی یۉق
ظُلمتې کیم، چشمهٔ حیوانی آننینگ بۉلمه‌غای
دوزخې دور کیم، یانیده روضهٔ رضوانی یۉق
دوزخې کیم روضهٔ رضواندین اۉلغه‌ی نااُمید
بیر خُمارې دور که انده مستلیغ امکانی یۉق
ای نوایی، بار انگه مونداق عقوبتلر که، بار
هجردین دردی و لېکن وصلدین درمانی یۉق
(امیر علی‌شیر نوایی)

ترجمہ:
جو دل یار سے جدا ہو، وہ ایک ایسا مُلک ہے جس کا سلطان نہیں ہے؛ جس ملک کا سلطان نہ ہو، وہ ایک ایسا جسم ہے جس میں جان نہیں ہے۔
اے مسلمانو! جسم سے جان کے بغیر کیا حاصل؟ کہ وہ تو ایک ایسی سیاہ خاک کی مانند ہے کہ جس میں گُل و ریحان نہیں ہے۔
جس سیاہ خاک میں گُل و ریحان نہ ہو، وہ اُس تاریک شب کی مانند ہے کہ جس میں ماہِ تاباں نہیں ہے۔
وہ تاریک شب کہ جس میں ماہِ تاباں نہ ہو، ایک ایسی ظُلمت ہے کہ جس میں سرچشمۂ آبِ حیات نہیں ہے۔
وہ ظلمت کہ جس میں چشمۂ آبِ حیات نہ ہو، ایک ایسی دوزخ ہے کہ جس کے پہلو میں روضۂ رضواں نہیں ہے۔
وہ دوزخ جو روضۂ رضواں سے ناامید ہو، ایک ایسا خُمار ہے کہ جس میں مستی کا امکان نہیں ہے۔
اے نوائی! جو شخص دردِ ہجر رکھتا ہو، لیکن وصل کی شکل میں علاج نہ رکھتا ہو، اُسے ایسی ہی عقوبتیں جھیلنی پڑتی ہیں۔
× خُمار = نشہ و مستی زائل ہونے کے بعد لاحق ہونے والی کیفیتِ سر درد و کسالت؛ ہینگ اوور

لاطینی خط میں:
Yordin ayru ko’ngul mulkedurur sultoni yo’q
Mulkkim sultoni yo’q, jismedururkim joni yo’q
Jismdin jonsiz ne hosil, ey musulmonlarkim, ul
Bir qaro tufrog’dekdurkim, gulu rayhoni yo’q
Bir qaro tufrog’kim, yo’qtur gulu rayhon anga
Ul qorong’u kechadekdurkim, mahi toboni yo’q
Ul qorong’u kechakim yo’qtur mahi tobon anga
Zulmatedurkim, aning sarchashmayi hayvoni yo’q
Zulmatekim, chashmayi hayvoni oning bo’lmag’ay
Do’zaxedurkim, yonida ravzayi rizvoni yo’q
Do’zaxekim, ravzayi rizvondin o’lg’ay noumid
Bir xumoredurki, anda mastlig’ imkoni yo’q
Ey Navoiy, bor anga mundoq uqubatlarki, bor
Hajrdin dardi, va lekin vasldin darmoni yo’q

اِس غزل کی قرائت سنیے۔